بند کریں
صحت صحت کی خبریںوزیراعلی خیبرپختونخوا سے اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور کے وائس چانسلر پروفیسر اجمل خان کی ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 01/10/2014 - 14:06:36 وقت اشاعت: 01/10/2014 - 14:06:36 وقت اشاعت: 01/10/2014 - 13:39:57 وقت اشاعت: 01/10/2014 - 11:24:42 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 21:22:36 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 21:19:56 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 21:19:34 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 17:49:39 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 14:00:18 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 13:57:50 وقت اشاعت: 30/09/2014 - 13:56:48

وزیراعلی خیبرپختونخوا سے اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور کے وائس چانسلر پروفیسر اجمل خان کی ملاقات،طالبان نے میرے ساتھ بہت اچھا سلوک کیا، قبائلی عوام کو دینی اور دنیاوی تعلیم کی اشد ضرورت ہے،اجمل خان،صوبے میں طبقاتی اوردوہرے نظام تعلیم کاخاتمہ کرکے انگریزی زبان میں یکساں نصاب تعلیم کانفاذیقینی بنائیں گے،پرویزخٹک

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔30ستمبر۔2014ء)اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور کے وائس چانسلر پروفیسر اجمل خان نے بعض فیکلٹی ممبران اور سینئر ایلومنی ایسوسی ایشن کے عہدیداروں کے ہمراہ خیبرپختونخواکے وزیراعلیٰ پرویزخٹک سے اُن کے دفتر سی ایم سیکرٹریٹ پشاور میں ملاقات کی اور انہیں یونیورسٹی کے دورے اور اس عظیم درسگاہ کی تاریخ پر مبنی کتاب کی رونمائی کی دعوت دینے کے علاوہ انہیں یونیورسٹی کو درپیش بعض مسائل سے بھی آگاہ کیا وزیر اعلیٰ نے ان مسائل کے ترجیحی بنیادوں پر حل کا یقین دلایا اور چار سال کی طالبان کی قید سے رہائی پر انہیں مبارکباد دی جس پر انہوں نے بتایا کہ طالبان نے نہ صرف ان سے اچھا سلوک کیا بلکہ وہ اس نتیجے پر بھی پہنچے کہ آج ہماری قوم بالخصوص قبائلی عوام کو دینی اور دنیاوی تعلیم کی اشد ضرورت ہے وفد میں سینئر ایلومنی کے نائب صدر زمان خان اور جنرل سیکرٹری لیفٹنٹ کرنل(ر) جمیل احمد، پروفیسر ایسوسی ایشن کے صدر ڈاکٹر شبیر احمد اور فزکس ڈیپارٹمنٹ کے چیئرمین پروفیسر ارباب سفیر احمد شامل تھے پرویز خٹک نے یونیورسٹی کا تدریسی معیار بہتر بنانے کیلئے پروفیسر اجمل خان کی کاؤشوں کو سراہا تاہم انہوں نے بحیثیت مجموعی تمام جامعات کا تعلیمی معیار بہتر بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ قوم توقع رکھنے میں حق بجانب ہے کہ سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی کے موجودہ دور میں ہماری درسگاہیں طلبہ و طالبات کی علمی رجہان سازی کے علاوہ تحقیق اور ایجادات کی نئی جہات متعارف کریں حقیقت یہ ہے کہ ہمارے نوجوانوں میں جوہر قابل کی کمی نہیں اگر کوئی کمی اور خامیاں موجود ہیں تو سب اوپر سے ہیں اگر جامعات و فیکلٹی سربراہ اور تدریسی عملے میں جذبے کا فقدان ہو گا تو طلبہ میں جذبہ کہاں سے آئے گا اسکی بڑی وجہ ماضی کی کرپشن اور بدعنوانیاں بھی ہیں جنکی داستانیں بدقسمتی سے دیگر شعبوں کی طرح ہمارے جامعات اور تعلیمی اداروں کے اندر بھی داخل ہو گئی تھیں تاہم گزشتہ عام انتخابات میں عوام نے خیبر پختونخوا کی سطح پر پی ٹی آئی کو بھاری اکثریت دلاکر کرپشن اور ظلم و ناانصافی کے نظام سے نفرت کا برملا اظہار کر دیا اب کرپشن کے خلاف ہمارا زیرو ٹالرنس ہے اور یہ بات جامعات سمیت تمام تعلیمی اداروں کے سربراہوں اور انتظامیہ کو بھی سمجھنی اور سمجھانی ہو گی وفد نے کرپشن کی بیخ کنی اور میرٹ کی بالادستی کیلئے وزیراعلیٰ کے اقدامات کو سراہا اور اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا پرویز خٹک نے کہاکہ پی ٹی آئی کی اتحادی حکومت کااولین نصب العین صوبے میں طبقاتی اوردوہرے نظام تعلیم کاخاتمہ کرکے انگریزی زبان میں یکساں نصاب تعلیم کانفاذاور معیار تعلیم کی اسقدر بہتری و بلندی ہے کہ نہ صرف یہاں تعلیم کے میدان میں غریب و امیر کا فرق مٹ جائے بلکہ ہمارے نوجوان کو دنیا بھر میں مانا جائے وہ پوسٹ گریجویٹ اور پی ایچ ڈی کی اعلیٰ ڈگریاں تھامے معمولی نوکریوں کی تلاش میں ذلیل و خوار ہوتے نہ پھریں بلکہ فارغ التحصیل ہونے پر انکی من پسند ملازمتیں انہیں اپنی درسگاہوں کے دروازوں پر ہی ملیں اور وہ بخوشی گھر واپس جائیں انہوں نے اپنی حکومت کا عزم دہرایا کہ صوبے میں نئے سکول و کالج اور یونیورسٹیوں کے نام پر صرف عمارتیں کھڑی کرنے کی بجائے حقیقی معنوں میں تعلیمی، علمی، تحقیقی اورتخلیقی ادارے قائم ہوں اور سائنس و ٹیکنالوجی میں مہارت کے علاوہ ہمارے نوجوانوں کی تخلیقی و پیداواری صلاحیتوں میں بھی اضافہ ہو ہمارے تعلیمی پلان کا مقصد یونیورسٹیوں اورکالجوں کی تعدادمیں اضافے کے ساتھ ساتھ انہیں حقیقی معنوں میں علم وحکمت کاگہوارہ بنانا ہے وزیراعلیٰ نے اسلامیہ کالج کی تاریخ پرجامع تصنیف کی تقریب رونمائی میں شرکت کی دعوت قبول کرتے ہوئے کہا کہ اسلامیہ کالج پشاور سے یہاں کے عوام کی محبت اورعقیدت ہماری تاریخ و ثقافت کاحصہ بن چکی ہے کیونکہ اس مادر علمی کی بدولت اس صوبے میں اعلیٰ تعلیم کی داغ بیل پڑی ایک صدی قبل قائم ہونے والا یہ کالج آج یونیورسٹی بن چکا اور مزید کئی سکول و کالج بننے کا باعث بھی بنا مگر درحقیقت یہ خطے کی تمام جامعات اور علمی اداروں کی ماں ہے جس پر ہمیں فخر ہے ۔

30/09/2014 - 21:19:56 :وقت اشاعت