بند کریں
صحت صحت کی خبریں بہتر حکومتی حکمت عملی ،خیبر پختونخوا میں انسداد پولیو مہم کی مخالفت میں کمی

صحت خبریں

وقت اشاعت: 21/03/2015 - 22:41:45 وقت اشاعت: 21/03/2015 - 21:45:34 وقت اشاعت: 21/03/2015 - 21:25:17 وقت اشاعت: 21/03/2015 - 16:59:53 وقت اشاعت: 21/03/2015 - 16:25:39 وقت اشاعت: 21/03/2015 - 11:26:19 وقت اشاعت: 20/03/2015 - 23:45:28 وقت اشاعت: 20/03/2015 - 23:45:28 وقت اشاعت: 20/03/2015 - 23:11:20 وقت اشاعت: 20/03/2015 - 22:57:25 وقت اشاعت: 20/03/2015 - 21:48:03

بہتر حکومتی حکمت عملی ،خیبر پختونخوا میں انسداد پولیو مہم کی مخالفت میں کمی

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔21مارچ۔2015ء ) خیبر پختونخوا میں محکمہ صحت کے حکام نے کہاہے کہ بہتر حکومتی حکمت عملی کے باعث گذشتہ چند ماہ کے دوران صوبہ بھر میں انسدادِ پولیو کے قطروں سے انکار کرنے والے والدین کی تعداد میں 50 سے 60 فیصد تک کمی آئی ۔پشاور میں انسداد پولیو کیلئیبنائے گئے وزیراعلی خیبر پختونخوا کے مانیٹرنگ سیل سے جاری والے اعداد و شمار کے مطابق گذشتہ سال صوبے بھر انسدادِ پولیو کے قطروں سے انکار کرنے والے والدین کی تعداد 47000 رہی تھی۔

تاہم حالیہ چند مہنیوں کے دوران اس تعداد میں کافی حد تک کمی دیکھنے میں آئی ہے۔مانیٹرنگ سیل کے مطابق رواں برس جنوری میں انکاری کیسز کی تعداد 34993 رہی ، فروری میں23087 اور مارچ کے مہینے میں یہ مزید کم 15074 تک آئی ہے۔خیبر پختونخوا میں ہر مہم کے دوران 50 لاکھ سے زائد بچوں کو پولیو سے بچاوٴ کے قطرے پلائے جاتے ہیں۔پشاور میں پولیو پروگرام آفیسر ڈاکٹر سلیم کا کہنا ہے کہ بہتر حکومتی حکمت عملی کے باعث پولیو سے انکار کرنے والے بچوں کی تعداد رفتہ رفتہ کم ہورہی ہے۔

پہلی مرتبہ حکومت نے تمام اضلاع کی سطح پر مقامی عمائدین اور بااثر افراد پر مشتمل جرگے تشکیل دیے ہیں جن کا کام انکار کرنے والے والدین سے مقامی روایات کے مطابق بات کرنا ہے۔ انھوں نے کہا کہ گزشتہ کچھ عرصہ سے ضلعی انتظامیہ، پولیس اور بین الاقوامی ادارے بڑی سنجیدگی اور تن دہی سے مل کر کام کررہی ہے جس سے اس موذی مرض کو قابو کرنے میں کامیابی مل رہی ہے۔انھوں نے کہا کہ جو والدین بچوں کو پولیو قطرے دینے سے انکار کرتے ہیں ان سے پولیس اور جرگہ کے ذریعے سے بات چیت کی جاتی ہے اور اب تک اس حکمت عملی کے بڑے مثبت نتائج برآمد ہوئے ہیں۔

21/03/2015 - 11:26:19 :وقت اشاعت