پی کے 23 شانگلہ میں 10 ستمبر کو دوبارہ انتخاب کا حکم

پیر اگست 21:44

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اگست2018ء) الیکشن کمیشن آف پاکستان نے خیبر پختونخوا اسمبلی کے حلقہ پی کے 23 شانگلہ میں 10 ستمبر کو دوبارہ انتخاب کا حکم دیدیا۔حالیہ عام انتخابات میں اس حلقے سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے شوکت یوسف زئی نے کامیابی حاصل کی تھی تاہم خواتین ووٹرز کے کم ٹرن آؤٹ کے باعث حلقے کے انتخاب کو کالعدم قرار دیا گیا تھا۔

(جاری ہے)

الیکشن ایکٹ 2017 کے مطابق الیکشن کمیشن کو اس حلقے کے انتخاب کو کالعدم قرار دینا ہوتا ہے، جہاں ڈالے گئے کٴْل ووٹوں میں خواتین ووٹرز کا ٹرن آؤٹ 10 فیصد سے کم ہو۔شوکت یوسف زئی نے الیکشن کمیشن کے اس فیصلے کو 'ظالمانہ' قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ 'الیکشن کمیشن کو پورے حلقے کے انتخاب کو کالعدم قرار دینے کے بجائے چاہیے تھا کہ وہ صرف خواتین کی دوبارہ پولنگ کروائے۔ان کا کہنا تھا کہ شانگلہ کے علاقے میں انتخابات کرانا آسان نہیں، جبکہ حلقے میں دوبارہ انتخاب سے ہمیں نقصان ہوگا۔الیکشن کمیشن کی جانب سے دوبارہ انتخاب کے حوالے سے جاری نوٹی فکیشن میں کہا گیا کہ جن امیدواروں نے 25 جولائی کے انتخابات میں حصہ لیا تھا وہ ان ہی پارٹی نشانات پر 10 ستمبر کے انتخاب میں حصہ لے سکیں گے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments