تمام جھوٹوں پر اللہ کی لعنت

جمعرات 16 ستمبر 2021

Umer Khan Jozvi

عمر خان جوزوی

جس ملک میں ا قتد ا ر کے حصو ل ا و ر و ز یر ا عظم بننے کے لئے جھو ٹ بو لناثو ا ب و کما ل سمجھا جا تاہو۔جہا ں حکو متی و ز یر ،مشیر ،کپتا ن ا و ر کھلا ڑ ی آ ج بھی جھو ٹ بو لنے کو فخر ، ا عز ا ز ا و ر ا کر ا م سمجھتے ہوں۔و ہا ں فیک نیو ز کی ر و ک تھام کے نا م پر میڈ یا کی آ ز ا د ی سلب کر نے کی کو شش نہ صر ف یہ کہ ا لمنا ک ہے بلکہ شر منا ک بھی ۔

ہما ر ا شر و ع سے یہ ا لمیہ ر ہا ہے کہ یہا ں چو ر ا ٹھ کر د و سر و ں کو تو چو ر کہتا پھر تا ہے لیکن ا پنے آ پ کو چو ر ما ننے ا و ر کہنے کے لئے و ہ کبھی تیا ر نہیں ہو تا۔اس ملک میں 74سا ل سے جو گر و ہ ،جو قبیلہ ا و ر جو گر و پ سب سے ز یا د ہ جھو ٹ بو ل کر فیک نیو ز پھیلا کر چلا آ ر ہا ہے آ ج و ہی گر و ہ،و ہی قبیلہ ا و ر و ہی گر و پ ا ٹھ کر د و سر و ں پر فیک نیو ز پھیلا نے ا و ر جھو ٹ بو لنے کا ا لز ا م لگا کر میڈ یا کی آ ز ا د ی سلب کر نے کے د ر پے ہے۔

(جاری ہے)

ما نا کہ میڈ یا پر فیک نیو ز کا ا ستعما ل ہو تا ہو گا مگر ا نتہا ئی معذ ر ت کے سا تھ میڈ یا پر ا نگلیا ں ا ٹھا نے و ا لے یہ و ز یر ،مشیر ا و ر حکمر ا ن کو نسے د و د ھ کے د ھلے ہو ئے ہیں۔جن کے شب و ر و ز جھو ٹ کے سا ئے میں گز ر تے ہو ں۔جن کی صبح بھی جھو ٹ بو ل کر ہو تی ہو ا و ر جن کی شا م بھی جھو ٹ کے ر یلے میں گز ر تی یا بہتی ہو ۔جن کی سیا ست کا آ غا ز بھی جھو ٹ سے ہو تا ہو ا و ر ا ختتا م بھی جھو ٹ پر ہو۔

ا یسے لو گو ں کو فیک ا و ر نیک نیو ز کا کیا پتہ۔۔؟ فیک نیو ز کا تو کو ئی ا س غر یب بیر و ز گا ر سے پو چھیں جس نے ا پنے کا نو ں سے تین سا ل قبل ا یک کر و ڑ نو کر یو ں کی خبر سنی تھیں۔فیک نیو ز کا تو کو ئی ا س بے گھر غر یب سے پتہ کر یں جس کو تین سا ل پہلے پچا س لا کھ گھر و ں کی خبر د ی گئی تھی۔فیک نیو ز کی ا ذ یت،د ر د ا و ر تکلیف د یکھنی ہو تو ا یک ا یک و قت کی ر و ٹی کے لئے ر لنے،تڑ پنے،چیخنے ا و ر چلا نے و ا لے ا س غر یب کو د یکھیں جنہیں 2018کے ا لیکشن مہم میں مہنگا ئی ،غر بت و بیر و ز گا ر ی کے خا تمے ا و ر ہر طر ف خو شحا لی کے با غ و سپنے د کھا ئے گئے تھے۔

فیک نیو ز کا ا نجا م د یکھنا ہو تو کر ا چی سے گلگت،خیبر سے و ا ہگہ با ر ڈ ر ا و ر چتر ا ل سے کا غا ن تک مسا ئل میں سر سے پا ؤ ں تک ڈ و با ملک کا یہ ذ ر ہ ذ ر ہ ا و ر چپہ چپہ د یکھیں جسے ر یاست مد ینہ بنا نے کے د عو ے ا و ر و عد ے کئے گئے تھے۔فیک نیو ز کی تبا ہی د یکھنی ہو تو بنی گا لہ میں تین سا ل سے منہ کھو ل کے کھڑی ا س خستہ حال سا ئیکل کو د یکھیں جس کے کا ن میں سر گو شی کر کے ا سے کہا گیا تھا کہ آ پ کی پشت پر سو ا ر ہو کر با د شا ہ سلا مت و ز یر ا عظم آ فس جا یا کر یں گے۔

میں جب و ز یر ا عظم بنا تو کو ئی بھو کا نہیں سو ئے گا۔یہ و ا لا ڈ ا ئیلا گ تو فیک نہیں نا۔؟پھر یہ جو کہا گیاتھا میر ی حکمر ا نی میں کسی کو لو ٹ ما ر ا و ر چو ر ی چکا ر ی کی جر ا ت نہیں ہو گی،ا س کا بھی تو فیک سے کو ئی تعلق نہیں نا ۔؟اور۔یہ جو مکا لہر ا کر ا ر شا د فر ما یا گیا تھا کہ ہم ا ن چو ر و ں کی طر ح ٹیکس کے پیسے پر پلنے و ا لے نہیں۔ہما ر ی حکو مت آ ئی تو ٹیکس کا پیسہ کسی کی جیب میں نہیں جا ئے گا بلکہ ٹیکس کا ا یک ا یک ر و یپہ عو ا م پر خر چ ہو گا،یہ بھی فیک شیک کے ز مر ے میں تو نہیں آ تا نا۔

؟صد ر مملکت ٹھیک فر ما تے ہیں کہ ملک کے ا ند ر ا س ا یک،، فیک،، نے جتنی تبا ہی مچا ئی ہے ا تنی تبا ہی کسی ا و ر نے نہیں مچا ئی۔ہمیں پتہ ہے کہ یہ کمبخت فیک جہا ں بھی گیا ا س نے تبا ہی ا و ر بر با د ی کے سو ا کچھ نہیں کیا ۔میڈ یا ا نڈ سٹر ی ا و ر صحا فتی مید ا ن کو ا س فیک سے پا ک کر نے پر ہمیں کو ئی ا عتر ا ض نہیں ۔سیا ستد ا نو ں ا و ر حکمر ا نو ں کی طر ح میڈ یا سے و ا بستہ جو لو گ ا س فیک کا سہا ر ا لیکر نیک بنتے ہیں آ پ ا یک نہیں ہز ا ر با ر ا ن کا ر ا ستہ ر و کیں لیکن کم ا ز کم ا پنے گر یبا ن میں فقط ا یک با رتو ضر و ر جھا نکیں۔

کسی صحا فی ا و ر میڈ یا پر سن کی فیک نیو ز سے ا تنی تبا ہی نہیں پھیلتی جتنی تبا ہی ا و ر بر با د ی ا یک سیا ستد ا ن،حکمر ا ن ،و ز یر ا و ر مشیر کی فیک کی پشت پر سو ا ر ہو کر نیک بننے سے ہو تی ہے۔کیا جھو ٹ بو ل کر غر یبو ں سے و و ٹ بٹو ر نا،ا قتد ا ر حا صل کر نا،و ز یر ا عظم بننا،ا یم ا ین ا ے ،ا یم پی ا ے منتخب ہو نا،و ز یر ا و ر مشیر بننا یہ فیک نیو ز سے بڑ ا جر م ا و ر گنا ہ نہیں ۔

؟کیا کیمر ے کے سا منے بیٹھ کر جو منہ میں آ ئے بو ل د ینا فیک نہیں ۔؟کیا صر ف ا یک شخص کی خو شنو د ی کے لئے د ن کو ر ا ت ا و ر ر ا ت کو د ن ثا بت کر نابھی فیک کے ز مر ے میں نہیں آ تا ۔؟حکو متی و ز یر ا و ر مشیر ا گر فیک ا و ر فیک نیو ز کے ا تنے خلا ف ہیں ۔ا نہیں ا گر جھو ٹ سے و ا قعی ا تنی نفر ت ہے تو پھر یہ میڈ یا کے لئے ڈ نڈ ا ا تھا ر ٹی لا نے سے پہلے ا یک ا تھا ر ٹی ا ن کے لئے کیوں نہیں لاتے جو پچھلے 74سا ل سے اس ملک کے ا ند ر عو ا م کو جھو ٹ ، فر یب اور دھوکہ کے ذ ر یعے ا چھے ا چھے سپنے ا و ر سبز با غا ت د کھا کر گمر ا ہ کر ر ہے ہیں۔

صحا فیو ں پر ہا تھ ڈ ا لنے سے پہلے ا گر صر ف ا یک با ر جھو ٹو ں کے ا ن د یو تا ؤ ں کے گر یبا ن پکڑ ے جا ئیں تو آ پ یقین کر یں کہ ا س ملک سے فیک نیو ز کا خو د بخو د خا تمہ ہو جا ئے گا ۔فیک نیو ز کی ر و ک تھا م ا و ر خا تمے کے لئے میڈ یا کو نہیں جھو ٹ پر مد ینے کی ر یا ستیں بنا نے و ا لے ا ن و ز یر و ں،مشیر و ں ا و ر حکمر ا نو ں کو ڈ نڈ ا د ینے کی ضر و ر ت ہے۔

جب تک ا س ملک میں ا ن جھو ٹو ں کے لئے کو ئی قا نو ن نہیں بنتا ۔جب تک ا س ملک میں سیا ستد ا نو ں و حکمر ا نو ں کے جھو ٹ کو جھو ٹ ،جر م ا و ر گنا ہ کا د ر جہ نہیں د یا جا تا ا س و قت تک ا س ملک میں فیک نیو ز ا و ر کیک نیو زکا یہ سلسلہ تبا ہی ا و ر بر با د ی پھیلا تے ہو ئے یو نہی آ گے چلتا ر ہے گا ۔نیو ز صر ف و ہ نہیں جو کسی ا خبا ر میں چھپے یا کسی ٹی و ی چینل پر چلے۔

ہر خبر نیو ز ہو تی ہے و ہ چا ہے کسی ا خبا ر میں چھپے،کسی ٹی و ی چینل پر چلے یا پھر ۔۔؟کسی نا ظم،کسی ا یم پی ا ے،کسی ا یم ا ین ا ے،کسی و ز یر ،کسی مشیر ،کسی و ز یر ا عظم یا کسی صد ر مملکت کے منہ سے نکلے۔ا یسا نہیں ہو سکتا کہ آ پ کے منہ میں جو آ ئے آ پ ا ر شا د فر ما تے ر ہیں لیکن میڈ یا کو سچ بو لنے ا و ر لکھنے کی ا جا ز ت نہ ہو۔ا س ملک میں ا ن عجو بو ں سے پہلے بھی بہت سے نمو نو ں نے حق ا و ر سچ کا ر ا ستہ ر و کنے کی ہر ممکن کو شش کی۔

حق سننا ا و ر سچ پڑ ھنا ہر بند ے کے بس کی با ت نہیں ۔پھر جھو ٹ پر ز ند گی گز ا ر نے و ا لو ں کا تو ا س سے کو ئی تعلق نہیں ہو تا۔ا س لئے ا یسے لو گ مو قع ملتے ہی ا س کے پیچھے پڑ جا تے ہیں ۔مو جو د ہ د و ر میں بھی حق ا و ر سچ کی آ و ا ز کو د با نے کے لئے یہ ڈ نڈ ے ا و ر ا نڈ ے لا نا ا سی سلسلے کی ایک کڑ ی ہے۔ پہلے بھی بہت سے حکمر ا نو ں نے آ ز ا د ی صحا فت کا گلہ گھو نٹنے کے لئے ا پنے گھو ڑ ے مید ا ن میں د و ڑ ا ئے۔

یہ حکو مت ا و ر حکمر ا ن بھی ا پنا شو ق پو ر ا کر لیں۔حق و سچ کا علم پہلے بھی ا س ملک میں بلند ہو تا ر ہا ہے ا ب بھی ا نشاء ا للہ یہ ا سی طر ح بلند ر ہے گا ۔آ ز ا د ی صحا فت کے لئے ا س ملک میں بڑ ے لو گوں نے قر با نیا ں د یں۔شہد ا ء کے خو ن سے آ ز ا د ی صحا فت کا یہ جو چر ا غ اس ملک میں جلا ہے یہ ا ب ا ن عجو بو ں کے ا ن پھو نکو ں سے بجھا یا نہیں جا ئے گا ۔

مٹھی بھر ما لشی،پا لشی ا و ر چند د ر با ر یو ں کو چھو ڑ کر با قی ا س ملک کا ا یک ا یک صحا فی ا و ر کا لم نگا ر کل بھی حق ا و ر سچ پر جا ن قر با ن کر تا تھا ا و ر یہ آ ج بھی حق ا و ر سچ کے لئے جا ن قر با ن کر نا ا پنے لئے سعا د ت سمجھتا ہے۔ہمیں حق و سچ کے ا یسے د لد ا د ہ صحا فی کل بھی جا ن سے ز یا د ہ عز یز تھے ا و ر ہمیں آ ج بھی ا ن پر فخر ہے۔ر ہے فیک نیو زکے خا لق ا و ر جھو ٹے صحا فی۔ تو۔ہم جھو ٹے سیا ستد ا نو ں ا و ر حکمر ا نو ں کے سا تھ ا یسے جھو ٹے صحا فیو ں پر بھی ا یک نہیں ہز ا ر با ر لعنت بھیجتے ہیں ۔ گلی میں پھر نے و ا لے جھو ٹے صحا فی ا و ر کیمر ے کے سا منے بیٹھنے و ا لے جھو ٹے و ز یروں اورمشیروں سمیت ا س ملک کے تما م جھو ٹو ں پر ا للہ کی لعنت ہو ۔

ادارہ اردوپوائنٹ کا کالم نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Tamam Jhootoon Per ALLAH Ki Lanat Column By Umer Khan Jozvi, the column was published on 16 September 2021. Umer Khan Jozvi has written 458 columns on Urdu Point. Read all columns written by Umer Khan Jozvi on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.