وزیراعظم عمران خان قومی کشمیر پالیسی بنائیں ، خارجہ پالیسی پارلیمنٹ میں ہی بنائی جائے ، لیاقت بلوچ

پیر ستمبر 23:03

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 17 ستمبر2018ء) جماعت اسلامی پاکستان کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے این اے 130 کی کور کمیٹی ارکان ، معززین ، سپورٹرز اور نوجوانوں کے اعزاز میں عشائیہ سے خطاب اور آل پارٹیز حریت کانفرنس کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہاہے کہ وزیراعظم عمران خان قومی کشمیر پالیسی بنائیں ۔ خارجہ پالیسی پارلیمنٹ میں ہی بنائی جائے ۔

اقوام متحدہ میں موثر ، مضبوط اور مدلل بنیادوں پر آواز بلند کی جائے ۔ مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں کی شہادتیں اور قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی ۔ انڈیا جموں و کشمیر کا معاشرتی ڈھانچہ تباہ کرنے کے لیے عسکری ، نفسیاتی اور تشدد کا دبائو بڑھا رہاہے ۔انہوںنے کہاکہ حق خود ارادیت کی جدوجہد دہشتگردی یا فرقہ پرستی نہیں ۔

(جاری ہے)

جموں و کشمیر میں جعلی انتخابات رائے شماری کا نہیں ،پوری ریاست سے ناجائز قابض بھارتی فوج کا انخلا از بس ضروری ہے ۔

غیر ریاستی باشندوں کا بسانا ناجائز ہے، یہ حق خود ارادیت کے تعلق کی نسبت سے دِلّی کی سازش ہے ۔ انہوںنے کہاکہ حکومت ڈاکٹر عافیہ صدیقی کی رہائی اور بھارتی جاسوس دہشتگرد کلبھوشن کیوں بھلا بیٹھی ہے ۔لیاقت بلوچ نے کہاکہ نظام مصطفیٰؐ کے قیام کی جدوجہد ہر صورت جاری رہے گی ۔ پاکستان اسلامی و نظریاتی ملک ہے۔ پوری دنیا ہمارے اس کردار کو تسلیم کرے گی شرط یہ ہے کہ کرپشن کا خاتمہ ہو ، کشکول توڑ کر خود انحصاری کی طرف آئیں ، حکومتیں دعوئوں ، اعلانات اور بڑھکیں مارنے کی بجائے عملی اقدامات کریں ۔ انہوںنے کہاکہ عوامی مسائل مسلسل بڑھ رہے ہیں غریب عوام پس رہے ہیں ۔