سینیٹر رحمان ملک کا سری لنکن ہائی کمیشن کا دورہ ،ہائی کمشنر سے سری لنکا میں دہشت گردانہ واقعات پر اظہارافسوس

منگل اپریل 23:49

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 23 اپریل2019ء) چیئرمین سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے داخلہ سینیٹر رحمان ملک نے منگل کو سری لنکن ہائی کمیشن کا دورہ کیا ،ہائی کمشنر سے سری لنکا میں ایسٹر کے دن دہشت گردانہ واقعات پر اظہار تعزیت و افسوس کیا۔ سینیٹر رحمان ملک نے سری لنکن ہائی کمشن میں مہمانوں کے کتاب میں اظہار تعزیت و ہمدرردانہ تاثرات تحریر کی اور کہا کہ پیپلز پارٹی اور عوام کیطرف سے سری لنکا کے حکومت اور عوام کیساتھ اظہار تعزیت و ہمدردی کرنے آیا ہوں۔

سینیٹر رحمان ملک نے اس واقعہ کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ سری لنکا کے چرچ و ہوٹلوں میں دھماکوں سے قیمتی جانوں کے نقصان پر دلی دکھ و افسوس ہوا ہے اور یہ کہ ایسٹر کے موقع پر سری لنکا میں ہونے والے دھماکوں کی مذمت کرتا ہوں، مشکل گھڑی میں ہم سب پاکستانی سری لنکا کے عوام کیساتھ کھڑے ہیں۔

(جاری ہے)

سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ ایک دن میں یکے بعد دیگرے اتنے زیادہ دھشتگردانہ حملے ہونا انتہائی تشویشناک ہے، اقوام متحدہ سامنے آئے اور دھشتگردی کیخلاف جنگ میں سری لنکا کی مدد کرے۔

سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ وزیراعظم مودی اپنے الیکشن فائدے کیلئے سری لنکا دھماکوں پر الزامات سے کام لیکر سیاست نہ کرے، وزیراعظم مودی حطے کے امن و امان کیلئے سب سے بڑا خطرہ ہے، وزیراعظم مودی سری لنکا کی عوام کے زخموں سے کھیلنا بند کرے۔ سینیٹر رحمان ملک نے مودی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم مودی کے ہوتے ہوئے حطے کی امن و امان ممکن نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ مودی سے کہتا ہوں کہ معصوم لوگوں کی جانوں سے کھیلنا چھوڑ دو، بھارت کا ٹامل ٹائگر سے رابطہ کسی سے چھپا نہیں ہے، بھارت بہادری دیکھا کر ٹامل ٹائیگر سے لاتعلقی کا اظہار کرے۔ سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ نیوزی لینڈ میں واقعہ ہوا تھا میں نے بولا تھا کہ مسیحی لوگوں کا خیال رکھا جائے، دشمن کچھ بھی کر سکتا ہے،پاکستان نے جنگ میں ستر ہزار لوگ قربان کئے ہیں۔ سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان کی اگلے ہفتے میٹنگ رکھی ہے۔