Vitamin B3 - Article No. 1958

حیاتین بی تھری - تحریر نمبر 1958

پیر ستمبر

Vitamin B3 - Article No. 1958
ڈاکٹر سید فیصل عثمان
ایک خاص قسم کے تیزاب کو’ نیا سین‘ (حیاتین بی تھری) کہا جاتا ہے ۔اس کا فارمولہ C6H5NO2ہے،جو گوشت اور پودوں میں وافر مقدار میں پایا جاتا ہے۔بڑھتی عمر کے ساتھ ساتھ صحت کے بارے میں فکر مندی میں اضافہ فطری بات ہے۔جوڑوں کی بیماری پاکستان میں بہت عام ہے ۔پاکستان میں آسٹیو آرتھرائٹس کی شکایت عام ہے ۔

اور یہ ہر عمر کے مریضوں کو پریشان کرتی ہے ۔44سے 48سال کی عمر کے 10فیصد،49سے59تک کی عمر کے 28فیصد تک افراد کو یہ شکایت ہو سکتی ہے۔ڈبلیو ایچ او کے اعداد و شمار کے مطابق ہمارے ہاں دل کا دورہ 2.5لاکھ افراد (سالانہ) کی موت کی وجہ بنتا ہے۔عمر میں اضافے کے ساتھ ساتھ کچھ ا فراد باتیں بھولنا شروع کر دیتے ہیں، بہت سوں کو الزائمر کی شکایت پیدا ہوتی ہے۔

(جاری ہے)

جبکہ دماغی کیفیت پر کبھی تحقیق نہیں ہوئی لہٰذا مریضوں کی تعداد کے بارے میں کچھ کہنا قدرے مشکل ہے ۔ان تمام امراض کا علاج کافی مہنگا اور پیچیدہ ہے۔مرض کے لا علاج ہونے پر ہی کچھ افراد کو پتہ چلتا ہے۔
حیاتین بی تھری،ایک نعمت
خوش قسمتی سے نئی تحقیق نے ہماری مشکل آسان کر دی ہے ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ نیا سین ان تینوں اعضاء (دل، دماغ اور جوڑ) کی بیماریوں کی شدت میں کمی کرنے میں کارگر ثابت ہوئی ہے۔

سائنس دانوں نے بتایا ہے کہ یہ اہم کیمیکل ان اعضاء کو طاقت مہیا کرکے دوبارہ صحت مند بنانے میں مفید ہوتا ہے۔حیاتین بی تھری کئی اعضاء کو فعال بنانے کے لئے اہم ہے۔ کئی نظام اس کے بغیر صحت مند طریقے سے انجام نہیں پا سکتے ۔کیونکہ خوراک سے توانائی کا حصول اس کیمیکل کے بغیر ممکن نہیں ۔یہ کیمیکل ڈی این اے کی ”مرمت“ میں بھی کلیدی کردار ادا کرتا ہے۔

یہ ڈی این اے میں عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ ہونے والی ٹوٹ پھوٹ کو درست کرنے میں بھی مددگار ہے ۔ایک اور اہم بات ،عمر میں اضافے کو روکنا انسان کے بس میں نہیں لیکن عمر میں اضافے کے اثرات میں کمی کی جا سکتی ہے۔جبکہ کولیسٹرول کی بری قسم (LDL) کو کنٹرول کرنے میں معاون بن کر یہ کیمیکل کولیسٹرول کی روک تھام کرتا ہے ۔اس سلسلے میں حیاتین بی تھری کا استعمال 1950ء کے عشرے سے جاری ہے۔

یہ HDLیعنی اچھی قسم کے کولیسٹرول میں اضافے کا موجب بنتا ہے ۔اس کا استعمال بڑھا کر دل کے دورے میں کمی کی جا سکتی ہے۔
حیاتین بی تھری کو دماغ کا محافظ کہنے میں بھی کوئی حرج نہیں ۔دماغ بھی توانائی کے حصول کے لئے اسی سے کام لیتا ہے ۔حیاتین بی تھری کی مدد سے نفسیاتی کیفیت بہتر بنائی جا سکتی ہے۔یادداشت میں خرابی ،ڈپریشن اور برین فاگ (Fog Brain)کی کیفیت میں بھی مفید ہے ۔

یہ کیمیکل ان امراض کی شدت میں کمی کا باعث بنتا ہے ۔کیونکہ ان تینوں کیفیتوں کا تعلق کسی نہ کسی حد تک حیاتین بی تھری کی کمی سے بھی ہے ۔ایک اور تحقیق میں جوڑوں کی حرکت میں اضافے کے ذریعے یہ کیمیکل آسٹیو آرتھرائٹس (Osteoarthritis) میں مفید ثابت ہوا ہے۔ ڈاکٹروں کی رائے میں اس کے مناسب استعمال سے دواؤں میں کمی لائی جا سکتی ہے۔
حیاتین بی تھری والی غذائیں
اس میں کوئی شک نہیں کہ حیاتین بی تھری وافر مقدار میں پائی جاتی ہے،بہت کم افراد میں اس کی کمی کا اندیشہ ہے لہٰذا یاد رکھیے ،حیاتین بی تھری کی زیادتی بھی نقصان دہ ہے۔

پیٹ میں جلن کے علاوہ یہ جگر کو بھی نقصان پہنچا سکتی ہے۔حیاتین کی یہ قسم چکنائی بریسٹ،بیف،سامن، مچھلی ،بام مچھلی،دالیں اور مونگ پھلی میں بھی پائی جاتی ہے۔
تاریخ اشاعت: 2020-09-21

Your Thoughts and Comments