نیشنل بنک حسن ابدال برانچ کی من موجیاں، تحصیل حسن ابدال کی عوام دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور

نیشنل بنک حسن ابدال کا عملہ ریونیو کی مد میں ایف بی آر فیس وصولی سے انکاری، عوام اسلم مارکیٹ واہ برانچ کے چکر لگانے پر مجبور، ضلعی و مقامی انتظامیہ بار بار کی عوامی شکایات کاازالہ کرنے میں بے بس، شہری شدید ذہنی کوفت کا شکار، عوامی وسماجی حلقوں کا ارباب اختیار سے شنوائی کا مطالبہ اور بنک عملے کو عوام کو بہتر سہولیات فراہمی کا پابند بنانے کی اپیل

بدھ 8 ستمبر 2021 23:17

حسن ابدال(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 08 ستمبر2021ء) نیشنل بنک حسن ابدال برانچ کی من موجیاں، تحصیل حسن ابدال کی عوام دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور، نیشنل بنک حسن ابدال کا عملہ ریونیو کی مد میں ایف بی آر فیس وصولی سے انکاری، عوام اسلم مارکیٹ واہ برانچ کے چکر لگانے پر مجبور، ضلعی و مقامی انتظامیہ بار بار کی عوامی شکایات کاازالہ کرنے میں بے بس، شہری شدید ذہنی کوفت کا شکار، عوامی وسماجی حلقوں کا ارباب اختیار سے شنوائی کا مطالبہ اور بنک عملے کو عوام کو بہتر سہولیات فراہمی کا پابند بنانے کی اپیل ۔

(جاری ہے)

تفصیلات کے مطابق ضلع اٹک کی تحصیل حسن ابدال کا باوا آدم نرالا نکلا ضلع بھر کی دیگر تمام تحصیلوں کی نسبت حسن ابدال کے عوام ایف بی آر کی ریونیو فیس کے چالان نیشنل بنک حسن ابدال برانچ میں جمع کروانے سے محروم ہیں جس کے لئے شہریوں کو اسلم مارکیٹ واہ کینٹ کے چکر لگوائے جاتے ہیں لوگ حیران ہیں کہ ایک ضلع کے شہریوں کا کسی دوسرے ضلع میں ریونیو فیس جمع کرانے میں کیا امر پوشیدہ ہے جبکہ اٹک کی باقی تمام تحصیلوں میں ایف بی آر فیس ان کی اپنی تحصیل برانچ میں جمع ہو رہی ہیں لیکن این بی پی حسن ابدال برانچ کا عملہ تحصیل کے عوام کو اس سہولت سے محروم رکھے ہوئے ہے جو سراسر ظلم اور ناانصافی ہے اس سلسلہ میں عوام الناس کی جانب سے متعدد بار ڈپٹی کمشنر، اسسٹنٹ کمشنر و دیگر ضلعی حکام کو آگاہ بھی کیا جا چکا ہے مگر اس کے باوجود عوامی شنوائی نہیں ہو سکی چنانچہ تحصیل بھر کے عوامی و سماجی حلقوں کی جانب سے اعلیٰ حکام سے پرزور مطالبہ کیا گیا ہے کہ حسن ابدال کے شہریوں کو بھی اس ضمن میں سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے اور نیشنل بنک حسن ابدال کو ایف بی آر چالان فیس وصولی کا پابند بنایا جائے تاکہ عوام کو وقت کے ضیاع اور شدید ذہنی کوفت سے چھٹکارہ مل سکے۔

متعلقہ عنوان :

حسن ابدال شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments