ٹیکنالوجی اور معاشرتی زندگی!

منگل نومبر

Raana Kanwal

رعنا کنول

گذشتہ دو دہائیوں کے دوران ، ٹیکنالوجی نے انسانوں کی انفرادی اور اجتماعی زندگیوں پر گہرا اثر ڈالا ہے۔ آج کا انسان زندگی کی زندگی کو ٹکنالوجی کی پرنزم کے ذریعے دیکھتا ہے ایسا لگتا ہے کہ کچھ بھی پہلے ہاتھ میں نہیں ہے۔
اگر ہم دس سال پہلے دیکھیں تو زندگی رنگوں سے بھری ہوئی تھی۔ تعلقات ، کنبہ اور دوست احباب کی ترجیح تھی۔

لوگ ساتھ بیٹھے رہتے ، ایک دوسرے سے باتیں کرتے ، اپنے دوستوں اور کنبہ کے ساتھ وقت گزارتے تھے۔لیکن آج ایک ہی کمرے میں بیٹھے بہن بھائی فوری پیغام رسانی یا واٹس ایپ کے ذریعہ ایک دوسرے سے بات کرتے ہیں ، یہاں تک کہ ان کے کنبہ کے افراد کی خیریت فیس بک یا واٹس ایپ کے اعدادوشمار کے ذریعہ ان کے علم میں آتی ہے۔
پہلے وقتوں کی بات کی جائے تو ایک وقت تھا جب کسی ایک گھر یا کالونی میں صرف ایک ہے ٹیلی ویژن ہوا کرتا تھا اور جیسے ہے رات ٩ بجے خبروں کا وقت ہوتا گلی یا کالونی کے افراد اس گھر میں جمع ہو جاتے اور بھر پر انداز میں اس لمحے  لطف اندوز ہوتے .مگر آج وقت بلکل اس کے برعکس ہے . آج ہر گھر میں ایک سے زائد ٹیلی ویژن موجود ہیں مگر دیکھنے والے کہیں اور ہی مصروف ہیں .
آج ، ہر ایک کے پاس اسمارٹ فونز ہیں ، لہذا یہاں تک کہ اگر پورا خاندان ایک ساتھ ڈنر کے لئے بیٹھا ہوا ہے تو ، آدھے سے زیادہ ممبر اپنے فون پر مصروف ہیں۔

(جاری ہے)


بچے کرکٹ جیسے کھیل کھیلتے تھے اور گلیوں میں چھپ چھپ کر تلاش کرتے تھے۔ جون کے مہینے میں ، ظہر کے بعد جب تمام بزرگ سوتے تھے ، کرکٹ کی گیندیں کسی کی کھڑکی کا شیشہ توڑ دیتی تھیں اور تمام ماموں جمع ہوجاتے تھے۔
بچے گھروں کے دروازوں پر دستک دے کر بھاگ جاتے تھے۔ لوگ اس سے ناراض ہوجاتے تھے لیکن وہ بچوں کی بے گناہی پر ہنسنے بھی لگتے تھے۔


لیکن پھر وقت بدلا ، اب چار سال کے بچے سمارٹ فون کا استعمال کس طرح جانتے ہیں ، ان سب کے پاس اسمارٹ فون اور ٹیبلٹ موجود ہیں۔ وہ اسکرینوں میں ڈوبے ہوئے ہیں اور آؤٹ ڈور گیمس ، دوستوں اور کنبہ والوں کی قدر تک نہیں جانتے ہیں۔
ٹیکنالوجی کے جہاں بہت سارے فوائد بھی ہیں وہیں ہماری معاشرتی اقدار کو ہلانے مانیں بھی ایک خاص کردار ادا کر رہی ہے . ہمارے بچپن اور آج کل کی نسل کے بچوں کے بچپن میں بہت فرق ہے.آج کل کے بچوں کا بچپن صرف سمارٹ فونز اور ٹیبلیٹس کے گرد گھومتا ہے .
ٹکنالوجی نے ہمیں معاشرتی طور پر بند کر دیا ہے لیکن ہمیں زندگی کے حقیقی رنگوں ، کنبہ اور دوستوں کی اہمیت سے الگ کر دیا ہے۔


آج ہر شخص جھوٹ اور دھوکہ دہی سے بھر پور زندگی گزار رہا ہے ، ہم بہانہ بناتے ہیں جو ہم نہیں ہیں ، اس ڈھونگ نے دنیا کو نقالی بنا دیا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ کچھ بھی فرسٹ ہینڈ میں نہیں ہے ، یہ دراصل ایک "سیکنڈ ہینڈ لیونگ" ہے۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Technology Or Muasharti Zindagi Column By Raana Kanwal, the column was published on 24 November 2020. Raana Kanwal has written 17 columns on Urdu Point. Read all columns written by Raana Kanwal on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.