آرمی ایکٹ ترمیم پر بولا تو پارٹی کو نقصان ہو گا اور مخالفین کو خوشی، پرویز رشید

ترمیمی بل میں وو ٹ نہ دینے پر ذمہ داری قبول کرتا ہوں، رہنما مسلم لیگ ن

Khurram Aniq خُرم انیق پیر فروری 16:53

آرمی ایکٹ ترمیم پر بولا تو پارٹی کو نقصان ہو گا اور مخالفین کو خوشی، ..
اسلام آباد(اردوپوائںٹ تازہ ترین اخبار-17فروری2020ء) آرمی ایکٹ ترمیم کے معاملے پر ووٹ نہ دینےکی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے رہنما مسلم لیگ ن پرویز رشید کا کہنا تھا کہ ووٹ نہ دینے کا فیصلہ میرا ذاتی تھا۔ میں نے اس بارے میں کسی سے کوئی بات نہیں کی تھی۔آخری لمحے تک میرا فیصلہ صرف مجھے پتہ تھا۔ ایک نجی ٹی وی چینل پر انٹرویودیتے ہوئے پرویز رشید کا کہنا تھا کہ اگر میں نے آرمی ایکٹ ترمیم پر بات کی تو پارٹی کو نقصان ہو گا اور مخالفین کو خوشی۔

ان کا کہنا تھا کہ میری پارٹی نے ابھی تک مجھ سے اس پر سوال نہیں کیا،جب پارٹی سوال کرے گی تو میں ان کو جواب دوں گا، اس سے پہلے میں کسی سے کچھ نہیں کہوں گا۔
نوازشریف کے معاملے پر بات کرتے ہوئے ا ن کا کہنا تھا اس وقت پاکستان کی سیاست نوازشریف کے گرد اس لئے گھو م رہی ہے کیونکہ وہ خاموش ہیں۔

(جاری ہے)

جبکہ نوازشریف خاموش نہیں ہیں، ان کی سیاست بول رہی ہے اور وہ واپس آئیں گے۔

واضح رہے کہ پرویز رشید نے آرمی ایکٹ کی مخالفت کرتے ہوئے ووٹ نہیں دیا تھا۔ اسی پر جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ یہ میرا ذاتی فیصلہ تھا، لیکن میں اس بارے میں ابھی تک بات نہیں کروں گا۔ اگر میں بات کروں گا تو اس کا نقصان پارٹی کو ہو گا اور مخالفین خوش ہو جائیں گے۔عمران خان کے بارے میں بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عمران خان کی سیاست ختم ہو چکی ہے۔

وہ جا چکے ہیں۔ان کا برا وقت تب آجائے گا جب ان کے اتحادی ان کا ساتھ چھوڑ دیں گے اور ان پر یہ وقت بہت جلدی آنے والا ہے۔یاد رہے کہ رہنما ن لیگ نے یہ بات انٹرویو میں آرمی ایکٹ ترمیم کی مخالفت کرنے پر بات کرتے ہوئے کہا کہ میں نیااپنی مرضی سے مخالفت کی ہے اور ابھی میں اس پر کوئی بات نہیں کروں گا۔مجھ س جب میری پارٹی سوال کرے گی تو میں اسے جواب دوں گا۔