جہانگیر ترین نے پیپلز پارٹی میں شمولیت کی تردید کر دی

یہ سب پراپیگنڈا ہے، پی پی قیادت سے ملاقاتوں اور شمولیت کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں، میرے خلاف خبریں چلانے والوں کو مایوسی ہوگی: رہنما تحریک انصاف

muhammad ali محمد علی منگل اپریل 19:24

جہانگیر ترین نے پیپلز پارٹی میں شمولیت کی تردید کر دی
لاہور (اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 06 اپریل2021ء) جہانگیر ترین نے پیپلز پارٹی میں شمولیت کی تردید کر دی۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی کی سینئر خاتون رہنما اور رکن سندھ اسمبلی شہلا رضا کی جانب سے جہانگیر ترین کی پی پی میں شمولیت کے حوالے سے کیے جانے والے دعوے پر تحریک انصاف کے رہنما نے خود اور فوری ردعمل دیا ہے۔ جہانگیر ترین کی جانب سے جاری تردیدی بیان میں کہا گیا ہے کہ پی پی قیادت سے ملاقاتوں اور شمولیت کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

یہ سب میرے خلاف پراپیگنڈا کیا جا رہا ہے، میرے خلاف خبریں چلانے والوں کو مایوسی ہوگی۔ واضح رہے کہ سینئر پی پی خاتون رہنما شہلا رضا کا دعویٰ ہے کہ تحریک انصاف کے سینئر رہنما اور وزیراعظم کے قریبی ترین ساتھی جہانگیر ترین نے مخدوم احمد محمود سے ملاقات کی ہے۔

(جاری ہے)

شہلا رضا کے مطابق جہانگیر ترین آئندہ ہفتے پیپلز پارٹی کے شریک چئیرمین آصف زرداری سے بھی کراچی میں اہم ملاقات کریں گے۔

ملاقات کے دوران جہانگیر ترین پیپلز پارٹی میں شمولیت اختیار کرنے کا اعلان کریں گے۔ شہلا رضا کا مزید کہنا ہے کہ اگر ایسا ہوگیا تو پھر نہ بزدار رہے گا نہ ہی نیازی۔ واضح رہے کہ شوگر اسکینڈل میں نامزد تحریک انصاف کے سینئر رہنما جہانگیر ترین کے حوالے سے کافی عرصے سے خبریں گردش کر رہی ہیں ان کے اور وزیراعظم عمران خان کے درمیان اختلافات پیدا ہو چکے۔

یہ خبریں بھی سامنے آئیں کہ جہانگیر ترین نے لندن میں نواز شریف سے ملاقاتیں کیں اور وہ ن لیگ میں شمولیت اختیار کرنے پر غور کر رہے ہیں، تاہم بعد ازاں جہانگرین ترین نے ان خبروں کی سختی سے تردید کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے عمران خان کیساتھ مل کر شریف خاندان کیخلاف جدوجہد کی، وہ کسی صورت ن لیگ کا حصہ نہیں بنیں گے۔ جبکہ گزشتہ ماہ ہوئے سینیٹ الیکشن سے قبل بھی یہ افواہیں گردش کرتی رہیں کہ جہانگیر ترین پیپلز پارٹی کے امیدوار یوسف رضا گیلانی کو فتح دلوانے کی کوششیں کر رہے ہیں۔

جہانگیر ترین نے ان افواہوں کی بھی تردید کی۔ جبکہ ایک انٹرویو کے دوران وزیراعظم عمران خان نے بھی اعتراف کیا تھا کہ ان کے اور جہانگرین ترین کے تعلقات اب پہلے جیسے نہیں رہے، جہانگیر ترین اس وقت تحریک انصاف میں نہیں ہیں۔