Live Updates

ہم مسلسل کہتے آئے ہیں کہ افغانستان میں پاکستان کا کوئی فیورٹ نہیں ہے

تمام تر توجہ افغان تنازع کے وسیع بنیاد پر جامع اور سیاسی حل نکالنے پر مرکوز ہونی چاہیے، ترجمان دفترخارجہ کی وضاحت

Sajjad Qadir سجاد قادر منگل 3 اگست 2021 07:24

ہم مسلسل کہتے آئے ہیں کہ افغانستان میں پاکستان کا کوئی فیورٹ نہیں ہے
کراچی (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار ۔ 03 اگست 2021ء ) ترجمان دفترخارجہ نے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ داعش اور افغان طالبان کے حوالے سے ان کے بیان کو غلط انداز میں پیش کیا جا رہا ہے اور افغانستان میں پاکستان کسی خاص فریق کی طرف داری نہیں کر رہا ہے۔ترجمان دفترخارجہ زاہد حفیظ چوہدری نے شاہ محمود قریشی کے بیان پر وضاحتی بیان میں کہا کہ یہ قابل افسوس ہے کہ میڈیا کا ایک مخصوص حلقہ افغانستان میں امن و استحکام کے لیے افغانوں کی سربراہی میں امن عمل کے حوالے سے دیے گئے بیان کو سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ‘وزیر خارجہ نے دہشت گردی کے خلاف عالمی برادری، علاقائی فریقیں اور خود افغانوں کے درمیان اتفاق رائے پر واضح بات کی تھی، ان کے الفاظ کو افغان تنازع میں کسی خاص فریق سے غلط طریقے سے نہیں جوڑا جاسکتا’۔

(جاری ہے)

ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ‘ہم مسلسل کہتے آئے ہیں کہ افغانستان میں پاکستان کا کوئی فیورٹ نہیں ہے، ہم تنازع میں تمام فریقین کو افغانوں کی حیثیت سے دیکھتے ہیں، جنہیں خود اپنے مستقبل کے بارے میں فیصلہ کرنے کی ضرورت ہے’۔

انہوں نے کہا کہ‘ہم افغان امن عمل میں تعمیری تعاون کا کردار ادا کرتے رہیں گے۔ان کا کہنا تھا کہ تمام تر توجہ افغان تنازع کے وسیع بنیاد پر جامع اور سیاسی حل نکالنے پر مرکوز ہونی چاہیے۔خیال رہے کہ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے دو روز قبل ملتان میں پریس کانفرنس کے دوران افغانستان میں داعش کی موجودگی کے حوالے سے ایک سوال پر کہا تھا کہ‘اگر وہ عراق یا شام سے منتقل ہو رہے ہیں تو اس کو دیکھنا کس کی ذمہ داری ہے؟ افغان حکومت کی’۔

انہوں نے کہا تھا کہ‘ان پر کس نے نظر رکھنی اور نگرانی کرنی ہے؟ افغان حکمران اور حکومت کو کرنا پڑے گی، مجھے امید ہے کہ وہ اپنی ذمہ داری میں غفلت کے مرتکب نہیں ہوں گے’۔ان کا کہنا تھا کہ نہ تو افغان حکومت اور نہ ہی طالبان، افغانستان کے ہمسایہ اور عالمی برادری بھی داعش کی واپسی نہیں چاہتی، اس معاملے پر ایک اتفاق رائے ہے، اب ان کے پاس ایک ذمہ داری ہے اور انہیں اس کو پورا کرنا ہے۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا مذکورہ بیان سوشل میڈیا اور افغانستان کے میڈیا میں یوں پیش کیا گیا تھا جیسے وہ صورت حال سے نمٹنے کے لیے افغان حکومت کے بجائے طالبان سے توقع رکھتے ہوں۔پاکستان، افغان تنازع کے حوالے سے اس طرح کے الزامات کی مسلسل تردید کرتا رہا ہے اور جون میں اسلام آباد میں منعقدہ پاک-افغان دوطرفہ مذاکرات کے افتتاحی سیشن میں شاہ محمود قریشی نے کہا تھا کہ پاکستان نے واضح فیصلہ کیا ہے کہ افغانستان کے داخلی معاملات پر مداخلت نہیں کی جائے گی۔

وزیرخارجہ نے کہا تھا کہ‘ہمارے کوئی فیورٹ نہیں ہیں، ایک عام تاثر ہے کہ ہم طالبان کے حامی ہیں، میں ان کی نمائندگی نہیں کرتا، میں پاکستان کا نمائندہ ہو جبکہ طالبان افغان ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے بھی گزشتہ ہفتے افغان میڈیا کو ایک انٹرویو میں بتایا تھا کہ پاکستان کسی طور پر طالبان کا ذمہ دار ہے اور نہ ہی ان کا ترجمان ہے۔
Live کابل میں طالبان کا کنٹرول سے متعلق تازہ ترین معلومات