پی ڈی ایم میں ایک مرتبہ پھر اختلافات، مولانا فضل الرحمان ن لیگ سے ناراض ہو گئے

جے یو آئی کسی پلیٹ فارم پر عمران خان حکومت کے ساتھ نہیں بیٹھے گی، مولانا فضل الرحمان نے شاہد خاقان عباسی کو انتخابی اصلاحات کیلئے پارلیمانی کمیٹی کا حصہ بننے سے صاف انکار کردیا، ذرائع

Danish Ahmad Ansari دانش احمد انصاری جمعرات 23 ستمبر 2021 22:06

پی ڈی ایم میں ایک مرتبہ پھر اختلافات، مولانا فضل الرحمان ن لیگ سے ناراض ..
لاہور(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 ستمبر2021ء) جے یو آئی کسی پلیٹ فارم پر عمران خان حکومت کے ساتھ نہیں بیٹھے گی، پی ڈی ایم میں ایک مرتبہ پھر شدید اختلافات، مولانا فضل الرحمان نے شاہد خاقان عباسی کو انتخابی اصلاحات کیلئے پارلیمانی کمیٹی کا حصہ بننے سے صاف انکار کردیا- تفصیلات کے مطابق انتخابی اصلاحات کو لے کر ن لیگ اور جے یو آئی میں اختلافات پیدا ہو گئے ہیں- اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے مسلم لیگ ن کے رہنما شاہد خاقان عباسی سے رابطہ کرکے انتخابی اصلاحات کمیٹی سے متعلق خدشات کا اظہار کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ جمعیت علماء اسلام (جے یو آئی) کسی انتخابی اصلاحات کمیٹی کا حصہ نہیں ہوگی۔

(جاری ہے)

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ جے یو آئی کسی پلیٹ فارم پر عمران خان حکومت کے ساتھ نہیں بیٹھے گی، پی ڈی ایم کا حصہ ہونے پر ن لیگ کوکسی بھی معاملے پر اسے اعتماد میں لینا ہوگا۔ خیال رہے کہ حکومت اور اپوزیشن نے انتخابی اصلاحات پر پارلیمانی کمیٹی بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔

قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے اعلامیے میں کہا گیا ہےکہ پارلیمانی کمیٹی دونوں ایوانوں کے اراکین پر مشتمل ہوگی، کمیٹی بنانے کے لیے سینیٹ اور قومی اسمبلی میں علیحدہ علیحدہ تحاریک پیش ہوں گی جب کہ اسپیکر قومی اسمبلی پارلیمانی رہنماؤں کی مشاورت سے کمیٹی بنائیں گے۔ اعلامیے کے مطابق کمیٹی انتخابی اصلاحات کا جائزہ لے کر سفارشات پیش کرے گی۔

قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے مطابق اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر سے اپوزیشن اور حکومتی رہنماؤں کی ملاقات ہوئی جس میں شفقت محمود، پرویز خٹک، جے یو آئی کی رکن شاہدہ اختر، پی پی کے نوید قمر، (ن) لیگ کے مرتضیٰ جاوید عباسی اور رانا تنویر بھی شریک تھے۔ ملاقات میں مجوزہ انتخابی اصلاحات پر تبادلہ خیال کیا گیا جب کہ اس دوران انتخابی اصلاحات پر پارلیمانی کمیٹی کے قیام کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے اعلامیے میں کہا گیا ہےکہ پارلیمانی کمیٹی دونوں ایوانوں کے اراکین پر مشتمل ہوگی، کمیٹی بنانے کے لیے سینیٹ اور قومی اسمبلی میں علیحدہ علیحدہ تحاریک پیش ہوں گی جب کہ اسپیکر قومی اسمبلی پارلیمانی رہنماؤں کی مشاورت سے کمیٹی بنائیں گے۔