حکومت پاکستان نے خفیہ ایجنسیوں کو سمگلنگ کی روک تھام کے لیے میدان میں اتار دیا

آئی ایس آئی ، آئی بی اور ایف آئی اے اشیاء کی قیمتوں میں اضافے اور انکی اسمگنلگ کی نگرانی کریگی

Usama Ch اسامہ چوہدری بدھ فروری 22:32

حکومت پاکستان نے خفیہ ایجنسیوں کو سمگلنگ کی روک تھام کے لیے میدان میں ..
اسلام آباد (اردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین 19 فروری 2020) : حکومت پاکستان نے خفیہ ایجنسیوں کو سمگلنگ کی روک تھام کے لیے میدان میں اتار دیا، آئی ایس آئی ، آئی بی اور ایف آئی اے اشیاء کی قیمتوں میں اضافے اور انکی اسمگنلگ کی نگرانی کریگی۔ تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم نے وزارت داخلہ ، وفاقی حکومت اور صوبائی حکومتوں کے قانون نافذ کرنے والے اداروں اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) سے کہا کہ وہ اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے اجتماعی طور پر کارروائی کریں۔

انہوں نے وزارت داخلہ کو ہدایت کی کہ وہ اس سے متعلق اقدامات اور جامع حکمت عملی کے بارے میں 48 گھنٹوں کے اندر رپورٹ پیش کرے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اسمگلنگ سے نمٹنے کے لئے تشکیل دی جانے والی ٹاسک فورس کی سفارشات کو مدنظر رکھتے ہوئے قلیل مدتی ، درمیانی مدتی اور طویل مدتی اقدامات کا آغاز کیا جانا چاہئے۔

(جاری ہے)

یہ فیصلہ یہاں وزیر اعظم عمران خان کی زیرصدارت ایک اعلی سطح کے اجلاس میں کیا گیا، جس میں وزیر برائے قومی فوڈ سیکیورٹی مخدوم خسرو بختیار، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر اور تجارت کے مشیر عبد الرزاق داؤد ، سیکرٹری داخلہ نے شرکت کی۔

نیشنل فوڈ سیکیورٹی ، قائم مقام چیئرمین ایف بی آر اور صوبائی ہوم سکریٹریز اور دیگر اعلی عہدیداربھی شریک تھے۔ اس میٹنگ میں ضروری اشیا کی طلب اور رسد اور ان کی قیمتوں کے بارے میں خاص طور پر ان کی اسمگلنگ کے حوالے سے جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں مغربی سرحد پر بازاروں کے قیام سے متعلق اب تک کی پیشرفت سے متعلق رپورٹ بھی پیش کی گئی۔ وزیراعظم نے منڈیوں کے قیام کی رفتار تیز کرنے کی ہدایت کی۔

عمران خان نے مشاہدہ کیا کہ اشیائے خوردونوش کی اسمگلنگ کی وجہ سے عام آدمی کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا اور یہ کسی بھی طرح قابل قبول نہیں تھا۔ اسمگلنگ کی لعنت قومی معیشت کو اربوں کا نقصان پہنچا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس لعنت کا مقابلہ قومی مفاد میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں 20 فیصد تک کمی لانا ہوگی۔ انہوں نے ذخیرہ اندوزوں کو 10 دن میں اوپن مارکیٹ میں اشیاء لانے یا کارروائی کا سامنا کرنے کی ڈیڈ لائن دی۔

وزیر اعظم نے واضح کیا کہ اسمگلنگ کے سلسلے میں کسی بھی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔ ایرانی تیل کے حوالے سے ، انہوں نے ایک جامع حکمت عملی بنانے پر زور دیا۔ مزید یہ کہ وزیر اعظم نے انسداد اسمگلنگ کوششوں میں ٹیکنالوجی کا بھر پور استعمال کرنے پر زور دیا۔ قبل ازیں وفاقی دارالحکومت میں صحت ، تعلیم اور دیگر خاندانوں کی فراہمی سے متعلق اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ عوام کو صحت کی بہترین سہولیات کی فراہمی میں کسی بھی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ تعلیم کے معیار کو یقینی بنانے کے لئے تمام وسائل مہیا کیے جائیں گے۔ وزیر اعظم نے سیکریٹری صحت کو سرکاری شعبہ کے اسپتالوں کی انتظامیہ کو مکمل طور پر فعال بنانے پر خصوصی توجہ دینے کی بھی ہدایت کی۔ انہوں نے اسپتالوں میں افرادی قوت کی کمی کو پورا کرنے اور وہاں ادویات کی فراہمی کو یقینی بنانے کی ہدایت کی۔ وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے اجلاس کو وفاقی دارالحکومت کے 423 پبلک سیکٹر اسکولوں اور کالجوں میں بہتری لانے کے لئے اب تک اٹھائے گئے اقدامات کے بارے میں اجلاس کو بریفنگ دی۔

وزیر اعظم نے اسکولوں میں اساتذہ کی کمی کو دور کرنے کے لئے اقدامات کرنے کی ہدایت کی ، اور مزید کہا ، "چونکہ یہ ہمارے مستقبل کی بات ہے ، لہذا ہمیں تعلیم کو ایک ہنگامی صورتحال سمجھنا چاہئے اور اس میں بہتری لانے کے لئے تمام مطلوبہ اقدامات کرنا چاہئے۔" عمران خان نے ہدایت کی کہ وفاقی دارالحکومت کے تمام اسکولوں اور کالجوں میں معیاری تعلیم کی فراہمی کے لئے روڈ میپ تیار کیا جائے۔

انہوں نے لڑکیوں کی تعلیم پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ وفاقی دارالحکومت کے پارکوں اور سبز علاقوں میں تجاوزات کے بارے میں وزیر اعظم نے کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کے چیئرمین کو ہدایت کی کہ رہائشی کالونیوں میں شہری اتھارٹی کے قواعد کی خلاف ورزی کرنے والوں کی نشاندہی کی جائے تاکہ خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا آغاز کیا جاسکے۔

اسلام آباد کے امن و امان کی صورتحال پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے عمران خان نے ہدایت کی کہ ہر تھانہ میں شکایت کا نظم و نسق کا نظام قائم کیا جائے۔ انہوں نے وزیر داخلہ کو ہدایت کی کہ وہ اسلام آباد پولیس کی افرادی قوت اور مالی ضروریات کا جائزہ لیں تاکہ اس کے تحفظ کے ضمن میں وفاقی دارالحکومت کو ایک ماڈل شہر بنانے کے لئے ضروری اقدامات کیے جاسکیں۔