Live Updates

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدرمریم نوازلاہور سے قافلے کی قیادت کرتے ہوئے ملتان روانہ ہوئیں

پیر نومبر 21:43

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدرمریم نوازلاہور سے قافلے کی قیادت کرتے ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 30 نومبر2020ء) پاکستان مسلم لیگ (ن) کی سینئر نائب صدر اور سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز ملتان میں منعقد ہونے والے پی ڈی ایم کے جلسے میں شرکت کے لئے پیر کی صبح ایک قافلے کی قیادت کرتے ہوئے لاہور سے ملتان کے لئے روانہ ہوئیں۔ مریم نواز کی روانگی سے قبل جاتی امراء میں بکرے کا صدقہ دیا گیا۔

(ن) لیگی نائب صدر مریم نواز کے ہمراہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنمائوں مریم اورنگزیب، پرویز رشید، محمد زبیر، سیف الملوک، مجتبیٰ شجاع الرحمان، ملک ریاض اور دیگر رہنما ملتان گئے۔ مریم نواز کے قافلے کی جاتی امراء سے ملتان روانگی کے موقع پر چار سو پولیس اہلکار تعینات تھے۔ جو قافلے کی سکیورٹی کے فرائض انجام دے رہے تھے۔

(جاری ہے)

مریم نواز کا قافلہ براستہ لاہور ملتان موٹروے روانہ ہوا جبکہ روانگی سے قبل مریم نواز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنی دادی بیگم شمیم اختر کی وفات کے باعث شاید مزید دو روز گھر سے نہ نکلتی کیونکہ گھر میں تعزیت کرنے والوں کے آنے کا سلسلہ جاری ہے لیکن وہ ملتان میں قوم کے دکھ میں شریک ہونے جا رہی ہیں۔

ملتان میں پی ڈی ایم جلسے کے انعقاد کے باعث جس طرح حکمرانوں نے اپوزیشن کے نہتے کارکنوں کو تشدد کا نشانہ بنایا انہیں گھروں سے اٹھایا گیا۔مریم نواز نے کہا کہ عوام سے گزارش کروں گی کہ اس حکومت کی نالائقی کیخلاف جدوجہد تو کرنا ہی پڑے گی ،ہم اس جدوجہد میں سب سے آگے ہیں ،آصفہ بھٹو بھی ملتان کیلئے نکلی ہیں،ملک پر مشکل آئی ہے تو بیٹیاں بھی گھروں سے باہر نکلی ہیں ،اس حکومت کو اپنا گھر جانا نظر آ رہا ہے ،اب اس حکومت کے آخری چند دن ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ تمام طلبہ کے لئے ایک پالیسی ہونی چاہیے تو میڈیکل کے طلبہ کے لئے بھی وہی پالیسی ہونی چاہیے ۔ انہوںنے کہا کہ پولیس والے بھی اس حکومت سے تنگ آ چکے ہیں ،ملک میں کہیں کرونا ایس او پیز پر عمل نہیں ہو رہا ،حکومت اور جماعت اسلامی کے جلسے ہو رہے ہیں تو کورونا نہیں پھیل رہا کیا ،سارے ایس او پیز پی ڈی ایم کے لئے ہیں ،کوویڈ 19 تو چلا ہی جائے گا، کوویڈ 18 کو نکالنا ضروری ہے ۔

انہوں نے کہا کہ امپائر کی انگلی پر آنے والے کو جمہوریت والی باتیں کرنا زیب نہیں دیتا ،گرفتاریوں کے خوف سے دیواریں پھلانگنے والی نہیں، بغیر کسی گناہ کے کئی بار جیل کاٹ چکی ہوں، تیسری بار بھی گرفتاری کا کوئی خوف نہیں ،مجھے گرفتار کیا بھی گیا تو کوئی ایشو نہیں۔ انہوںنے کہا کہ حساس ادارے ٹیلیفون ٹیپ کرتے ہیںیہ میرے لئے کوئی خبر نہیں ، ان کی ذمہ داری یہ ہے کہ وہ ملک کی حفاظت کریں ،آپ کا ماتحت ادارہ آپ کا فون ٹیپ کرتا ہے لیکن آپ کے اندر اتنی غیرت نہیں کہ آپ انہیں کہیں کہ یہ اس ادارے کا کام نہیں ہے،جو سلیکٹرز کے ساتھ آیا ہو اس کی بات کوئی نہیں سنتا،عمران خان جوتے پالش کرنے میں آگے نکل گئے ہیں،عمران خان اپنی نوکری بچانے کے لئے کچھ بھی کرسکتے ہیں۔

مریم نواز نے کہا کہ حکمرانوں کا شروع کیا گیا ظلم آج بھی جاری ہے۔ ملتان کے راستے میں گرفتاریاں کنٹینرز کی موجودگی اور ناکے موجودہ حکومت کے خوف کی علامت ہے ان تمام ہتھکنڈوں کے باوجود جلسہ ضرور ہوگا ان کا کہنا تھا کہ جماعت اسلامی کے جلسے سے کیا کرونا نہیں پھیلتے۔
کرونا وائرس کی دوسری لہر سے متعلق تازہ ترین معلومات