تین ممالک کے علماء کا خود کش حملوں کے خلاف متفقہ فتویٰ جاری

دہشت گردی بشمول خود کش حملے اسلامی قوانین کے منافی ہیں،پاکستان ، افغانستان اور انڈونیشیا کے مذہبی اسکالرز کا خودکش حملوں کے خلاف مشترکہ اعلامیہ

ہفتہ مئی 22:20

جکارتہ(اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ ہفتہ مئی ء)پاکستان، افغانستان اور انڈونیشیا کے متعدد مذہبی اسکالرز نے متفقہ طور پر اعلان کیا ہے کہ شدت پسندی اور دہشت گردی بشمول خود کش حملے اسلامی قوانین کے منافی ہیں۔واضح رہے کہ مذہبی اسکالرز کا مذکورہ اعلان افغان طالبان کو خود کش حملے کرنے سے روکنے کی کوشش سمجھا جارہا ہے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق انڈونیشیا علمائ کونسل کے زیر اہتمام سہ فریقی اجلاس میں تقریباً 70 علماء نے شرکت کی اور خودکش حملوں کے خلاف مشترکہ اعلامیہ جاری کیا تاکہ افغانستان میں امن اور استحکام کا حصول ممکن ہو سکے۔انڈونیشیا کے صدر جوکو ویدودو نے کانفرنس کا آغاز کرتے ہوئے اپنے خطاب میں کہا کہ انڈونیشیا جنگ زدہ ملک میں امن کے قیام کے لیے کوشاں ہے کانفرنس کے انعقاد کا مقصد افغانستان میں امن کے لیے جدوجہد کرنے والے علمائ کی خدمات کو خراج تحسین پیش کرنا ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ ‘علمائ امن کے داعی ہیں اور وہ یہ طاقت رکھتے ہیں کہ سورش زدہ ماحول میں قیام امن کے لیے کوششیں کر سکیں کانفرنس کے ذریعے افغانستان میں امن کا ماحول قائم کرنے میں اہم کردار ادا کرے گی۔ کانفرنس میں شریک تینوں ممالک کے تقریباً 70 علماء نے متفقہ اعلان کیا کہ اسلام ایک پرامن دین ہے اور ہر طرح کی شدت پسندی اور دہشت گردی کی مذمت کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ‘ہم یقین رکھتے ہیں کہ شدت پسندی اور دہشت گردی کا تعلق کسی مذہب، قومیت یا لسانی گروپ سے نہیں ہو سکتا اور نہ ہی ہونا چاہیے، ہر طرح کی دہشت گردی جس میں معصوم شہریوں پر ظلم یا خود کش حملے ہوں، اسلام کے بنیادی قوانین کے منافی ہیں’۔علمائ نے افغانستان کے صدر اشرف غنی کو اپنی حمایت کا یقین دلاتے ہوئے واضح کیا کہ وہ افغانستان میں امن کے لیے حکومت کے کردار کو سراہاتے ہیں۔

واضح رہے کہ اشرف غنی نے رواں برس فروری میں کابل میں طالبان کے ساتھ امن مذاکرات کی پیش کش کی تھی۔کانفرنس میں علمائ نے افغانستان میں امن کے قیام اور استحکام لانے کے لیے خطے کے علاقائی اور عالمی مملک کی خدمات پر اعتماد کا اظہار کیا۔خیال رہے اس سے قبل طالبان نے علمائ پر زور دیا تھا کہ وہ انڈونیشیا میں منعقدہ کانفرنس کا بائیکاٹ کریں، اپنے انتباہی مراسلے میں انہوں نے واضح کیا تھا کہ ‘علمائ کانفرنس میں شرکت کرکے افغانستان میں غیر ملکی حملہ آوار کو موقع فراہم نہ کریں کہ وہ علمائ کا نام استعمال کرکے اپنے مذموم مقاصد حاصل کریں’۔

اس حوالے سے بتایا گیا کہ پاکستان سے 20 علمائ نے کانفرنس میں شرکت کی جن میں اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر قبلہ ایاز، علامہ افتخار نقوی اور شاہ اویس نورانی تھے۔کانفرنس میں مختلف مکاتب فکر (اہل تشیع، بریلوی، دیوبندی اور اہلحدیث) کے ترجمان نے بھی شرکت کی

Your Thoughts and Comments