جماعت اسلامی نے عوام کی خدمت کی‘ آئندہ بھی مسائل حل کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے ،حافظ نعیم الرحمن

مارچ کی تیاریاں عروج پر پہنچ گئیں ، شہر بھر میں رابطہ عوام ، کارنر میٹنگز ،نوجوانوں کی ریلیاں جاری ہیں‘ کیمپ بھی لگا دیئے گئے مبر کو شاہراہ قائدین پر’’ حقوق کراچی مارچ ‘‘میں خواتین، بچے ، بزرگ ، نوجوان بھر پور شر کت کریں،مرکزی کیمپ کا افتتاح و خطاب

ہفتہ ستمبر 01:23

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 26 ستمبر2020ء) امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ ماضی میں جماعت اسلامی نے عوام کی خدمت اور مسائل کے حل کیے ہیں اور آئندہ بھی جماعت اسلامی کراچی کے مسائل حل کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے ۔ کراچی ایک گلدستہ ہے جہاں پورے پاکستان سے تعلق رکھنے والے رہتے ہیں ۔ 27ستمبر کو شاہراہ قائدین پر حقوق کراچی مارچ میں مائیں ، بہنیں ، بیٹیاں ، بچے ، بزرگ ، نوجوان ، تمام طبقات اور شعبہ زندگی سے وابستہ افراد بھر پور شر کت کریں اور اپنے اتحاد و اتفاق سے کراچی کو تباہ کرنے اور اس کا سودا کرنے والوں کو شکست دیں۔

حقوق کراچی مارچ کسی کی ذات یا سیاسی مفادات کے لیے نہیں بلکہ کراچی کے 3کروڑعوام کے لیے ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے شاہراہ قائدین پر نورانی کباب ہائوس کے قریب ’’حقوق کراچی مارچ ‘‘ کے سلسلے میں قائم مرکزی کیمپ کے افتتاح کے موقع پر کارکنوں سے خطاب اور میڈیاکے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

اس موقع پرنائب امیر مسلم پرویز ، امیر ضلع قائدین سیف الدین ایڈوکیٹ ، سیکریٹری اطلاعات زاہد عسکری ، نائب امیر ضلع نصیر اللہ حسینی ، جے آئی یوتھ کراچی کے صدر ہاشم ابدالی و دیگر بھی موجود تھے ۔

’’حقوق کراچی مارچ ‘‘ اتوار 27ستمبر کو 3بجے دن شاہراہ قائدین پر منعقد ہو گا جس میں شہر بھر سے مردو خواتین ، بچے ، بوڑھے ، نوجوان ، مزدور و محنت کش ، تاجر ، علماء کرام ، اساتذہ ، طلبہ و طالبات ، وکلاء ، ڈاکٹرز ، انجینئرز ، سول سائٹی و اقلیتی برادری کے نمائندے اور مختلف طبقات اور شعبہ زندگی سے وابستہ افراد بہت بڑی تعداد میں شریک ہوں گے ۔

امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق خصوصی خطاب کریں گے ۔ مارچ کے لیے بڑے پیمانے پر تیاریاں اور انتظامات کیے جا رہے ہیں ۔ حافظ نعیم الرحمن نے مزید کہا کہ انسانوں کو زندہ جلانے والے ، تعلیم و تہذیب کوتباہ کرنے والے اہل کراچی کو مزید بے وقوف نہیں بناسکتے۔ ’’کراچی اپنا ہے ‘‘ کادعویٰ کرنے والوں نے ہمیشہ کراچی دشمنی کے فیصلے کیے ۔

پی ٹی آئی اور ایم کیو ایم نے کوٹہ سسٹم کی میعاد میں غیر معینہ مدت تک اضافہ کرکے کراچی کے نوجوانوں کے مستقبل پر شب خون مارا ہے۔ ایم کیو ایم نے دومرتبہ کے الیکٹرک کو فروخت کرکے ایک مافیا کے حوالے کیا۔ وفاقی حکومت نے کے الیکٹرک کی حمایت کرتے ہوئے بجلی کی قیمتوں میںمزید اضافہ کر دیا ہے ۔کراچی پورے ملک کو چلاتا ہے اس کے باوجود اس کے ساتھ ناروا سلوک کیا جاتا ہے۔

جعلی ڈومیسائل کے ذریعے کراچی کے نوجوانوں سے روزگار چھینا جارہا ہے۔ کراچی میں جعلی مردم شماری کی گئی ہے ، ہمارا مطالبہ ہے کہ مردم شماری از سر نو کی جائے۔کراچی میں با اختیار شہری حکومت قائم کی جائے ۔ دریں اثناء حقوق کراچی مارچ کی تیاریاں عروج پر پہنچ گئی ہیں ، شہر بھر میں مردو خواتین کارکنان رابطہ مہم میں مصروف ہیں ، گھر گھر جا کر مارچ میں شرکت کی دعوت دی جارہی ہیں اور ہینڈ بلز تقسیم کیے جا رہے ہیں ۔

جمعہ کی نماز کے بعد مساجد کے باہر بڑی تعداد میں مظاہرے کیے گئے اور اہم پبلک مقامات پر کارنر میٹنگز بھی منعقد کی گئیں جن سے جماعت اسلامی کے مقامی رہنمائوں اور ذمہ داران نے بھی خطاب کیا اور حقوق کراچی تحریک کے اہم مطالبات جن میں با اختیار شہری حکومت ، درست مردم شماری ، کوٹہ سسٹم کا خاتمہ ، کراچی کے نوجوانوں کے لیے تعلیم اور روزگار کے حصول میں رکاوٹیں دور کرنے اور کے الیکٹرک کو قومی تحویل میں لینا شا مل ہیں کا اعادہ کیا گیا۔

علاوہ ازیں شہر بھر میں اہم شاہراہوں ، چورنگیوں اور نمایاں پبلک مقامات پر کیمپ بھی لگادیئے گئے ہیں جو ہفتہ 26ستمبر کو بھی لگے رہیں گے ۔ کیمپوں سے بھی شہریوں کو مارچ میں شرکت کی دعوت دی جا رہی ہے ۔ جبکہ موبائل پبلیسٹی کا سلسلہ بھی تیزی سے جاری ہے۔ سوزوکیوں اور ٹرکوں کے علاوہ SMD-VANSبھی خصوصی طور پر تیار کی گئی ہیں جن کے ذریعے سے بھی عوام کو دعوت دی جا رہی ہے ۔

جے آئی یوتھ کے تحت مختلف اضلاع میں نوجوانوں کی موٹر سائیکل ریلیاں بھی نکالی گئیں ۔ نوجوانوں کے اندر زبردست جوش و خروش دیکھنے میں آیا ، شہر میں ہزاروں کی تعداد میں بینرز اور پوسٹرز پہلے سے ہی لگا دیئے ہیں اور عوام کی طرف سے بھی جماعت اسلامی کی حقوق کراچی تحریک کی پذیرائی کی جا رہی ہے اور شرکت کی یقین دہانی کرائی جا رہی ہے ۔ امید ہے کہ 27ستمبر کو شاہراہ قائدین پر ہونے والا ’’حقوق کراچی مارچ ‘‘کراچی کی سیاست میں ایک ٹرننگ پوائنٹ ثابت ہو گا ۔ مارچ میں خواتین کی بھی بڑی تعداد شریک ہو گی ۔ جماعت اسلامی کراچی کا حلقہ خواتین نے بھی بھر پور طریقے سے سرگرم عمل ہے اور خواتین ذمہ داران اور کارکنان کے اندر بھی زبردست جوش و خروش پایا جاتا ہے ۔