وزیرآباد: باپ اور بھائی نے غیر ت کے نام پر 18سالہ بیٹی کو پیٹرول چھڑک زندہ جلا دیا

مقتولہ کا جسم 90فیصد تک جھلس گیا،باپ نے بیٹی کو ایک نا محرم کے ساتھ ملتے ہوئے دیکھ لیا تھا،چچا اور چچی نے مضروبہ کو عزیز بھٹی شہید ہسپتال گجرات پہنچایا،ابتدائی طبی امداد کے بعد تشویشناک حالت کے پیش نظرجناح ہسپتال لاہور منتقل کیا گیا جہاں وہ دم توڑ گئی،ملزمان روپوش، پولیس کی مدعیت میں مقد مہ درج

جمعہ مئی 20:03

وزیرآباد(اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ جمعہ مئی ء) سوہدرہ تھانہ کے موضع ٹاہلی والا میں باپ اور بھائی نے غیر ت کے نام پر 18سالہ بیٹی کو پیٹرول چھڑک زندہ جلا دیا۔مقتولہ کا جسم 90فیصد تک جھلس گیاتھا۔باپ نے بیٹی کو ایک نا محرم کے ساتھ ملتے ہوئے دیکھ لیا تھا۔چچا اور چچی نے مضروبہ کو عزیز بھٹی شہید ہسپتال گجرات پہنچایا۔

ابتدائی طبی امداد کے بعد تشویشناک حالت کے پیش نظرجناح ہسپتال لاہور منتقل کیا گیا جہاں وہ دم توڑ گئی۔ملزمان روپوش۔ پولیس کی مدعیت میں مقد مہ درج۔ تفصیلات کے مطابق مقتولہ حلیمہ سعدیہ کے تایا کی دوسری شادی ہوئی ۔اس موقعہ پرسال اول کی طالبہ 18سالہ حلیمہ سعدیہ کی شناسائی تایا کے سسرالیوں کے ایک نوجوان سے ہو گئی ۔

(جاری ہے)

دونوں کے درمیان ٹیلیفونک رابطے شروع ہو گئے۔

گذشتہ روز حلیمہ کا مبینہ بوائے فرینڈ اس سے ملنے کے لئے انکے گائوںٹاہلی والا آیا تو اس کے والد نے دونوں کواکٹھادیکھ لیا۔نوجوان تایا کے سسرالیوں میں سے تھا اس لئے سرزنش کے بعد ان کے حوالے کردیا۔حلیمہ کے والد ناصر مشتاق نے بیٹے علی شان سے باہم مشورہ ہو کر حلیمہ سعدیہ پر پیڑول چھڑک کر اسے آگ لگادی ۔حلیمہ مدد کے لئے چیختی چلاتی رہی لیکن کسی نے مددنہ کی۔

حلیمہ بری طرح جھلس گئی اور بے ہوش ہو گئی۔حلیمہ کے چچا نبی احمد اور چچی نے شدید زخمی حلیمہ کو اے بی ایس ہسپتال گجرات پہنچایا جہاں اسے طبی امداد دی گئی۔بعد ازاں اسے تشویشناک حالت کے پیش نظر جناح ہسپتال لاہور منتقل کر دیا گیا۔ڈاکٹروں کے مطابق مضروبہ کا جسم90فیصد تک جھلس گیا تھا۔حلیمہ سعدیہ چند گھنٹے زندگی اور موت کی کشمکش میںرہنے کے بعد دم توڑ گئی۔ سوہدرہ پولیس نے اپنے طور پر وقوعہ کی تفیش کر کے محمد ریاض اے ایس آئی کی مدعیت میں ملزمان ناصر مشتاق اور علیشان کے خلاف مقدمہ نمبر 74/18زیر دفعات 334,311,336-B,302ت پ درج کر لیاہے۔کوئی ملزم تاحال گرفتارنہیںہو سکا ہے ۔

Your Thoughts and Comments