ایک نہیں بہت سی بلڈنگیں گرنے کو ہیں

ہفتہ مارچ

Syed Arif Mustafa

سید عارف مصطفیٰ

کراچی کی بہبود کے لیئے سنجیدہ تعمیری کوششوں کا آغاز ہوتا نظر آرہا ہے۔۔۔ لیکن کسی سیاسی جماعت یا کسی سماجی گروہ کی جانب سے نہیں بلکہ ملک کی سب سے بڑی عدالت یعنی سپریم کورٹ کی طرف سے۔۔۔ 
کوئی بتائے کہ کہاں ہیں کراچی کے وہ روایتی چاچے مامے جو کہ کہ کراچی سے جھولیاں بھر بھر ووٹ لیتے رہے ہیں مگر کراچی کے مسائل کے حل کی کوئی سنجیدہ کوشش نہیں کرتے انکی ہمدردیاں محض بیانات اور فوٹو سیشن تک محدود ہیں اور عمل کے وقت وہ میدان سے غائب ہوجاتے ہیں۔

۔۔ اب بھی وہ یہی کریں گے کہ اگر عدالت کی اس سعی کا کوئی مثبت نتیجہ نکلتا نظر آئے گا تو فٹا فٹ اپنے اپنے جھنڈے اٹھائے لپک کے باہر نکل آئیں گے اور کراچی کے مروڑ میں دردیلے گیت گائیں گے۔۔۔ لیکن سوال یہ ہے کہ گلبہار کی بلڈنگ گرنے سے پہلے ہی بلڈر مافیا کی سرگرمیوں کا نوٹس کیوں نہ لیا گیا اور یہ سیاسی و سماجی گرو گھنٹال کس کھوہ میں چھپے ہوئے تھے -
لیکن بہرحال ہم اپنی سی کوشش کبھی قلم سے کبھی کاوش کے علم سے کرنے میں لگے رہتے ہیں سو خدا خدا کرکے ہماری بھی سنی گئی اور اب بالآخر 6 مارچ بروز جمعہ کو کراچی کے مسائل اور ناجائز تعمیرات کے بارے میں ہونے والی سماعت میں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے منہ پہ ہمارے علاقے ناظم آباد کا نام آ ہی گیا- بہتیرے لوگ جانتے ہیں کہ خاکسار نے کراچی کیاس علاقے میں بلڈرز مافیاء کی بے لگام ناجائز تعمیراتی سرگرمیوں کے خلاف گزشتہ کئی برس سے مہم چلا رکھی ہے اور اس سلسلے میں بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے دفتر کے کئی چکرلگانے کے علاوہ سوشل میڈیا پہ متعدد مضامین بھی لکھے ہیں اور اس سلسلے میں اس عاجز نے جماعت اسلامی والوں کی پبلک ایڈ کمیٹی سے بھی رابطے کیئے ہیں لیکن وہاں سے تو زبردست مایوسی کے سوا کچھ بھی حاصل وصول نہ ہوا اور وہ میری یہ گزارشات لے کر بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے افسران سے ملنے کے لیئے کبھی آمادہ ہی نہیں ہوسکے-صاف بات یہ ہے کہ مجھے تو انکے طرز عمل سے یوں محسوس ہوا کہ جیسے یا تو جماعت خود اس طاقتور مافیاء سے بہت ڈرتی ہے یا پھر اسکے اپنے بھی کچھ لوگ بلڈروں کے ساتھ ملے ہوئے ہیں - درحقیقت آج کراچی میں ہوئی ناجائز تعمیرات کے جنگل اگ جانے میں جماعت کے اس جانتے بوجھتے گریز کا بھی بڑا ہاتھ ہے کہ جسے مجرمانہ اجتناب سے کم ہرگز نہیں سمجھا جاسکتا- 
سامنے کی سچائی یہ ہے کہ ویسے تو بلڈر مافیاء نے سارے شہر ہی میں اپنے پنجے گاڑ رکھے ہیں لیکن ناظم آباد کا علاقہ تو انکا خاص الخاص نشانہ ہے اور یقین جانیئے کہ ایک گلبہار کی یہ بلڈنگ ہی نہیں ایسی سینکڑوں ناجائز تعمیرات کسی وقت بھی زمیں بوس ہونے کے لیئے تیار کھڑی ہیں کیونکہ انکی تعمیر میں متعلقہ اداروں نے پیسے لے کر ہر بے ضابتگی کو جائز کرڈالا تھا اور بھی کسی معیار کی کوئی پرواہ نہیں کی گئی تھی اورگزشتہ 12-13 برس کے اندر اس نے اس علاقے کو ناجائز تعمیرات سے تقریباً بھردیا ہے اور تاحال انکی یہ شرمناک سرگرمیاں زور و شور سے جاری ہیں - اس سلسلے میں انکا خاص طریقہء واردات یہ ہے کہ یہ رہائشی مکانات خرید کے انہیں گرا کے بلڈنگ بائی لاز کی دھجیاں بکھیر کے اسے ایک پلازے میں بدل دیتے ہیں حالانکہ یہاں گراؤنڈ پلس ٹو سے زائد اونچی تعمیر پہ قطعی پابندی عائد ہے لیکن اس علاقے کی ہر گلی میں کئی کئی پلازے تعمیر کرکے اس قانون کا مذاق بنانے کی داستان ہرسمت پھیلی دکھائی دیتی ہیاور یوں پہلے جس پلاٹ یا مکان پہ ایک فیملی رہا کرتی تھی پھر وہاں درجن سے زائد فلیٹس بنائے جانے کے نتیجے میں اٹھارہ بیس گھرانے آباد ہوجاتے ہیں جس سے اس علاقے میں موجود پانی بجلی گیس اور سیوریج کی سہولتوں پہ زبردست دباؤ پڑتا جارہا ہے اور بتدریج یہ سب سہولتیں ناپید ہوکیایک بڑے بحران کی طرف جاتی دکھائی دے رہی ہیں،- اس خرابی کے ذیلی اثرات میں سڑکوں کی زبردست ٹوٹ پھوٹ اور پارکنگ کے لیئیجگہ کا فقدان بھی شامل ہوتا جارہا ہے ۔

(جاری ہے)

اس معاملے سے جڑی ایک تلخ حقیقت یہ بھی ہے کہ یہاں کی تعمیرات کرنے والی بلڈر مافیاء میں زیادہ تر وہ لوگ شامل ہیں کہ جن کے پاس کالا پیسہ ہے جو کہ انہوں نے اس شہر پہ مسلط سیاسی مافیاء یعنی ایم کیو ایم کا حصہ بننے کے بعد لوٹ مار اور بھتہ خوری کے ذریعے حاصل کیا ہے اور ان میں سے شاز ہی کوئی پہلے سے اس شعبے کا حصہ رہا ہو۔۔۔ 
درحقیقت ایسے نووارڈ بلڈروں میں زیادہ تر کنسٹرکشن کی ک سے بھی آشناء نہیں ہیں اور ان میں سے ذاتی طور لوگ ماضی قریب میں دھوبی نائی اور قصائی ٹائپ کے پیشہ وروں میں سے ہیں اور ان میں سے کئی تو تو پرانی متحدہ کے جانے پہچانے بھتہ خور بھی ہیں کہ جنکے پاس موجود لوٹ مار کا پیسہ اب ناجائز تعمیرات میں سرمایہ کاری کے لیئے استعمال کیا جارہا ہے- ذرا متعلقہ ادارے یہ تو معلوم کریں کہ ان بلڈرز کا ماضی کیا ہے اور ابھی چند برس قبل تک انکی مالی حیثیت کیا تھی اور ان میں سے کتنے اہیں کہ جو انکم ٹیکس دیتے رہے ہیں اور اب بھی کتنے ہیں کہ جو اس کے نیٹ میں رجسٹرڈ ہی نہیں ہیں - 
اسی طرح بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے افسران اور اہلکاروں کی مالی حیثیت کی جانچ بھی کرالی جائے تو پتا چلے گا کہ یہاں تو آوے کا آوا ہی بگڑا ہوا ہے اور 90 تا 95 فیصد ملازمین نے اس بہتی گنگا میں ہاتھ دھوئے ہیں اور چند ہزار یا ایک لاکھ دو لاکھ کے لگ بھگ تنخواہ پانے والے یہ لوگ اب کبھی کے کروڑ پتی بن چکے ہیں اور ضرورت اس امر کی ہے کہ انکی اور انکے اہلخانہ کی جائیدادوں، قیمتی ملاک اور گاڑیوں اور غیرملکی سیر ساٹوں کا ریکارڈ بھی حاصل کرکے انہیں کٹہرے میں لاکھڑا کیا جائے۔

ایک اور افسوسناک پہلو یہ بھی ہے کہ ان بلڈروں کی پشت پناہی کرنے والوں میں زیادہ تر وہ ہیں جو یا تو متحدہ اور پی ایس پی کے ساتھ وابستہ ہیں اور کئی ایسے بھی ہیں کہ جو اپنی جماعتی قؤت کو اس مد میں بلیک میلنگ کیلیئے استعمال کرتے ہیں - ایک دلچسپ پہلو یہ بھی ہے ایک طبقہ جعلی شکایت کنندگان کا بھی وجود میں آچکا ہے جو کہ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کو شکایت کی درخواستیں لگاکے ان سے مال اینٹھتے ہیں اور انکے راضی نامے کے بل ہ یہ بلڈر مافیا اور محفوظ ہوجاتے ہیں۔

۔ ایسے پیشہ وروں میں سیاسی کارکنان کے علاوہ پولیس کے کئی اہلکاران بھی شامل ہیں - ضرورت اس امر کی ہے کہ ایسے جعلی درخواست گزاروں کا بھی قلع قمع کیا جائے اور جن سیاسی جماعتوں کا نام اس مقصد میں استعمال ہورہا ہے وہ آگے آئیں اور کھل کے ایسے کرمنل افراد کو قانون کے حوالے کریں جو انکا نام ان مذموم مقاصد میں استعمال کررہے ہیں اور تبھی اس پیارے عروس البلاد کو بلیک میلرز اور بلڈرز مافیا کے گٹھ جوڑ سے محفوظ کیا جا سکے گا۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

کراچی کے مزید کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Aik Nahi Buhat Se Buildgen Girne Ko Hain Column By Syed Arif Mustafa, the column was published on 07 March 2020. Syed Arif Mustafa has written 22 columns on Urdu Point. Read all columns written by Syed Arif Mustafa on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.