نااہلوں کے پلیٹ فارم پی ڈی ایم سے شاید بلاول کو وزیراعلیٰ سید مرادعلی شاہ اور سندھ حکومت کی نااہلی، نکما پن اور بیڈ گورننس نظر نہیں آتے ،فیاض الحسن چوہان

گندم خریداری، ٹیکس کولیکشن اور کوویڈ19 کے خلاف جنگ میں ناکامیوں نے سندھ حکومت کی نااہلی پر مہر ثبت کر دی ہے، بیشتر آزاد سروے اور عدالتوں کے ریمارکس کے مطابق بھی وزیر اعلٰی پنجاب چاروں صوبوں میں فہرست اور نمایاں رہے ہیں،وزیراطلاعات پنجاب

منگل اکتوبر 21:49

نااہلوں کے پلیٹ فارم پی ڈی ایم سے شاید بلاول کو وزیراعلیٰ سید مرادعلی ..
راولپنڈی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 20 اکتوبر2020ء) وزیر اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے بلاول زرداری کی جانب سے وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار پر تنقید کے جواب میں کہا ہے کہ نااہلوں کے پلیٹ فارم پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ سے شاید بلاول کو وزیراعلیٰ سندھ اور سندھ حکومت کی نااہلی، نکما پن اور بیڈ گورننس نظر نہیں آئی انہوں نے کہا کہ گندم خریداری، ٹیکس کولیکشن اور کوویڈ19 کے خلاف جنگ میں ناکامیوں نے سندھ حکومت کی نااہلی پر مہر ثبت کر دی ہے۔

رہی سہی کسر مزار قائد پر کیپٹن صفدر کی ہلڑ بازی کے خلاف درج ایف آئی آر میں مراد علی شاہ کے ناکامی کے اعتراف نے پوری کر دی۔ فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ وزیر اعلٰی سندھ مراد علی شاہ نے تسلیم کر لیا کہ انکا سندھ انتظامیہ اور آئی جی سندھ پر کوئی کنٹرول نہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے مزید کہا کہ دوسری جانب وزیر اعلٰی پنجاب سردار عثمان بزدار انتہائی دیانتداری، خلوص نیت اور مسلسل جدوجہد سے پنجاب کی عوام کی خدمت میں مصروف ہیں۔

گزشتہ سوا دو سال میں وزیر اعلٰی پنجاب سردار عثمان بزدار نے کوویڈ-19 کے خلاف جنگ میں کامیابی، ٹڈی دل کے خاتمے اور گندم کی ریکارڈ پروکیورمنٹ جیسے کارہائے نمایاں سرانجام دیئے ہیں۔ انہوں نے مزید بتایا کہ سالانہ ٹیکس کولیکشن کے اہداف کا حصول اور 50 لاکھ خاندانوں میں صحت انصاف کارڈز کی تقسیم بھی سردار عثمان بزدار کی پرفارمنس کی مثالیں ہیں۔

فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ بیشتر آزاد سروے اور عدالتوں کے ریمارکس کے مطابق بھی وزیر اعلٰی پنجاب چاروں صوبوں میں فہرست اور نمایاں رہے ہیں۔ فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ مراد علی شاہ اور سندھ حکومت کا سب سے بڑا اور واضح کارنامہ ملک میں دانستہ آٹا بحران لانا ہے جبکہ سردار عثمان بزدار اور پنجاب حکومت کا تعارف عوام دوست منصوبے اور گڈ گورننس ہیں۔

راولپنڈی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments