انقلابات ہیں زمانے کے ۔ آخری قسط

جمعہ فروری

Sahibzadah Shams Munir Gondal

صاحبزادہ شمس منیر گوندل

ایک  یہ  جہاں،  ایک  وہ  جہاں
ان  دو  جہاں  کے  درمیان
بس  فاصلہ  ہے  ایک  سانس  کا
جو  چل  رہی  تو  یہ  جہاں
جو  رُک  گئی  تو  وہ  جہاں
قارئین  آج  میں  آپکو  گذشتہ  کالم  کے  آخری  حصہ  کی  طرف  لے  چلتا  ہوں،  ظالم  جب  ظلم  پر  کمر  کستا  ہے    تو  اس  کا  جواز  گھڑنے  کی  کوشش  کرتا  ہے،  تاکہ  لوگوں  کے  سامنے  اپنے  آپ  کو  مثل  آئینہ  پیش  کیا  جاسکے،  مگر  خالق  کائنات  کا  ایک  اپنا  مرتب  کیا  ہواء  نظام  ہے،  جس  سے  مفر  ممکن  نہیں،  کوئی  چیز  جب  اپنی  انتہاء  کو  چھو  لے  یا  حد  سے  بڑھ  جائے  تو  اس  کی  لگام  کھینچ  لی  جاتی  ہے،  رب  العالمین  کا  جزاء  و  سزا  کا  اپنا  نظام  ہے،  کوئی  بہت  سرکشی  اختیار  کرلے  تو  بے  آواز  لاٹھی  حرکت  میں  آتی  ہے،  اور  تب  جا  کر  اس  پر  حقیقت  منکشف  ہوتی  ہے  کہ  وہ  جو  اپنے  آپ  کو  مختار  کل  سمجھا  ہو اء  تھا،  وہ  تو  اس  فضائے  بسیط  اور  کائنات  رنگ  و  بو  میں  ایک  زرے  کی  حثیت  کا  حامل  ہے،  وہ  جس  کی  جنبش  ابرو  سے  کئی  سر وں  کا  بوجھ  کندھوں  سے  ہٹا  دیا  جاتا  تھا،  وہ  تو  خود  اتنا  بے  بس  ہے  کہ  اپنے  جنازے  کی  نماز  اور  مدفن  کے  لئے  بھی  دوسروں  کا  محتاج  ہے،اپنے  عروج  کی  کیف  و  مستی  میں  وہ  یہ  بھی  فراموش  کر  دیتا  ہے  کہ  اس  سے  پہلے  کئی  سکندر  ہو  گزرے  ہیں،  جن  کی  ہیبت  اور  حکومت  سے   ایک  جہاں  تھرآتا  تھا،  مگر  آج  ان  کی  قبر  کا  نشان  بھی  نہیں  ملتا،  وقت  دکھوں  کا  مداوا  تو  کر  دیتا  ہے ،  مگر  ظلم  کی  معافی  دینا  کارکنان  قضاء  و  قدر  کی  فطرت  میں  شامل  نہیں۔

(جاری ہے)

  ہمارا  موضوع    افغانستان  کے  حکمران  سردار  محمد  داؤد  کے  حالات  زندگی  کا  صرف  احاطہ  کرنا  ہی  نہیں  بلکہ  وقت  کے  ہر  یزید  کو  یہ  بتانا  مقصود  ہے  کہ  بقائے  دوام  حسینیت  کو  ہے،  یزدیت  کی  قسمت  میں  لعنت  اُخروی  ہی  مرتسم  ہے۔  ایک  طرف  سردار  داؤد  کے  مظالم  جاری  تھے  جبکہ  دوسری  طرف  وہ  عالمی  میڈیا  کے  سامنے  اپنے  آپ  کو  ایک  روشن  خیال  اور  جمہوریت  پسند  لیڈر  کے  طور  پر  پیش  کررہا  تھا،  استعماری  طاقتیں  نہ  صرف  روس  بلکہ  دیگر  مغربی  مفکرین  بھی  اس  کی  پالیسیوں  کے  نہ  صرف  مداح  تھے ،  بلکہ  اس  کی  دوستی  کا  دم  بھرتے  تھے،  27  فروری  1977ء  کو  اس  نے  ملک  کو  نیا  آئین  دیا،  ملک  میں  صدارتی  طرز  حکومت  قائم  کر  دیا  گیا،  جس  میں  یک  جماعتی  نظام  قائم  کر  دیا،  اس  نے  نئی  کابینہ  تشکیل  دی،  اب  آسمانوں  کو  چھوتے  ہوئے  اعتماد  کا  یہ  عالم  کہ  تمام  کلیدے  عہدے  اپنے  خاندان  اور  قریبی  دوستوں  میں  تقسیم  کر  دئیے،  اس  وقت  تک  وقت  کی  طنابیں  اس  کے  ہاتھ  سے  پھسلنا  شروع  ہو گئی  تھیں،  کئی  سال  کے  جبر  نے  مظلوموں  کو  آہ  و  فغاں  کی  سکت  عطا  کر  دی  تھی،  اس  کے  ظلم  کے  خلاف  لاوہ  پک  چکا  تھا  اور  پھٹ  پڑنے  کو  تیار  تھا۔

  ملک  کی  دو  بڑی  سیاسی  جماعتیں  خلق  اور  پرچم  پارٹی  اس  کے  خلاف  سراپا  احتجاج  ہوگئیں،  وہ  فطرتاٗ  ایک  بھیڑیا  صفت  انسان  تھا،  اس  نے  اپنی  عادت  کے  مطابق  کثت  و  خون  کا  بازار  گرم  کر  دیا،  مخالفین  دھڑا  دھڑ  سانسوں  کی  آمدورفت  سے  محروم  ہونے  لگے،  اس  نے  17  اپریل  1978ء  کو  اپنے  سب  سے  بڑے  مخالف  کیمونسٹ  لیڈر  میر  اکبر  خان  کو  بہیمانہ  انداز  میں  قتل  کروا  دیا،  یہ  قتل  نقطہ  آغاز  ثابت  ہواء  اس  انقلابی  تحریک  کا  جس  نے  جبر  کی  آندھی  کے  آگے  تمام  منتشر  قوتوں  کو  سینہ  سپر  اور  یکجان  کر  دیا ،  میر  اکبر  خان  کے  قتل  کے  ٹھیک  10  دن  بعد  اس  کے  خلاف  فوجی  بغاوت  ہوئی  جس  کو  عوامی  تائید  اور  پشت  پناہی  حاصل  تھی،  فوج  نے  اس  کے  بھائیوں،  بیویوں،  بیٹیوں،  پوتے  اور  پوتیوں  کو  اُس  کے  سمیت  گولی  مار  دی،  تقریبا     اس  کے  خاندان  کے  30  لوگ  لقمہ  اجل  بنے،  داؤد  کی  نعش  کو  جیپ  کے  ہڈ  کے  ساتھ  باندھا  گیا  اور  پورے  کابل  میں  گھسیٹ  کر  اپنی  نفرت  کا  اظہار  کیا  گیا،  اس  کی  نعش  جس  جگہ  سے  گزرتی  تھی،  لوگ  اس  کو  ٹھڈے  مارتے  تھے،  اُس  پر  تھوکتے  تھے،  شام  کو  جب  لاش  کا  سفر  تمام  ہواء  تو  اس  کو  خاندان  کے  جملہ  افراد  کے  ساتھ  گھسیٹے  ہوئے  اجتماعی  قبروں  میں  بے  کفن  اور  بغیر  جنازہ  کے  دفن  کر  دیا  گیا،  یوں  اپنے  وقت  کا  ایک  ایسا  شخص  جس  کی  گردن  سریے  کی  وجہ  سے  اکڑی  ہوئی  تھی،  قصہ  پارینہء  بنا۔

  30  برس  بیت  گئے ،  مگر  رُکیں  کہانی  ابھی  ختم  نہیں  ہوئی۔  26  جون  2008ء  کو  ایک  کھدائی  جاری  تھی  اچانک  کدالیں  کسی  چیز  سے  ٹکرائیں۔  ارے  یہ  کیا  اتنے  زیادہ  انسانی  جسم  بغیر  کفن  کے  اور  وہ  بھی  دو  بڑی  بڑی  قبریں ،   جب  باریک  بینی  سے  جانچا  گیا  تو  تقریبا  دونوں  قبروں  میں  سولہ  سولہ  لاشیں  دریافت  ہوئیں،  ایک  نعش  کے  پاؤں  میں  مگر  مچھ  کی  کھال  سے  مڑھا  جوتا  تھا،  جوں  ہی  جوتے  کی  گرد  جھاڑی  گئی،  تو  اس  کی  پالش  چمکنے   لگی،  اور  یوں  جوتے  کی  اعلی ٰ  کوالٹی  نے  بتا  دیا  کہ  سفر  زیست  تمام  کرنے  والا  کوئی  اور  نہیں  بلکہ  سردار  داؤد  اور  اس  کا  جملہ  خاندان  تھا،  اللہ تبارک  و  تعالی ٰ  جب  کسی  ظالم  کو  نشان  عبرت  بناتے  ہیں  تو  اس  کو  قبر  میں  بھی  چین  نہیں  ملتا،  اللہ تبارک  و  تعالیٰ  سے  رحم  طلب  کرنا  چاہیے،  نہ  ہماری  بساط  میں  ہے  کہ  اللہ کی  زمین  کی  حدوں  سے  نکل  سکیں  اور  نہ  ہم  سرکشی  اختیار  کر  کے  اللہ کے  آسمان  کے  کناروں  سے  باہر  جا  سکتے  ہیں،  اللہ پاک جب کسی کا کاسہء غرور چُور کرتے ہیں  تو ایک جوتے کو اس کی  پہچان اور قبر کا نشان بنا دیتے ہیں، وہ مرنے کے بعد بھی اس بات کی عملی تفسیر بن جاتا ہے،  
(دیکھے مجھے کوئی دیدہء عبرت نگاہ سے)
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Inqelabat Hain Zamane K - Last Qist Column By Sahibzadah Shams Munir Gondal, the column was published on 14 February 2020. Sahibzadah Shams Munir Gondal has written 7 columns on Urdu Point. Read all columns written by Sahibzadah Shams Munir Gondal on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.