بند کریں
صحت صحت کی خبریںپاکستان کسان اتحاد کے زیر اہتمام مطالبات کی منظوری کیلئے بہاولپور اور لودہراں کے کسانوں ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 11/04/2013 - 19:24:51 وقت اشاعت: 11/04/2013 - 16:22:52 وقت اشاعت: 11/04/2013 - 16:21:35 وقت اشاعت: 11/04/2013 - 14:27:40 وقت اشاعت: 11/04/2013 - 13:49:54 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 23:45:24 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 23:44:23 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 19:33:08 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 19:31:51 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 19:29:48 وقت اشاعت: 10/04/2013 - 17:06:07

پاکستان کسان اتحاد کے زیر اہتمام مطالبات کی منظوری کیلئے بہاولپور اور لودہراں کے کسانوں کا کفن پوش احتجاج ، دریائے ستلج پل پر دھرنا ، قومی شاہراہ بند اور ٹریفک کا نظام معطل ،گاڑیوں کی کئی میل لمبی لائنیں لگ گئیں، مظاہرین کی مطالبات کے حق میں نعرے بازی ، حکومت نے کسانوں کا استحصال کیا ، زراعت کا شعبہ تباہی کے دہانے پر پہنچ چکا ہے ، بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے کسان طبقہ مشکلات کا شکار ،فصلیں تباہ ہورہی ہیں ، حکومت اس جانب کوئی توجہ نہیں دے رہی ، ٹیوب ویل کے نئے ٹیرف پرفوری عملدرآمد یقینی نہ بنایا گیا تو اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کرینگے ، کسانوں کی دھمکی

بہاولپور (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔آئی این پی۔10اپریل۔2013ء)پاکستان کسان اتحاد کے زیر اہتمام مطالبات کی منظوری کیلئے بہاولپور اور لودہراں کے کسانوں نے کفن پوش احتجاج کیا اور دریائے ستلج پل پر دھرنا دیا۔ بدھ کودھرنے کی وجہ سے قومی شاہراہ بند اور ٹریفک کا نظام معطل ہو گیا اور گاڑیوں کی کئی میل لمبی لائنیں لگ گئیں۔کسانوں نے اپنے مطالبات کے حق میں شدید نعرے بازی کی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کسان اتحاد پاکستان بہاولپور کے ضلعی صدر حافظ حفیظ احمد ، تحصیل صدر جام فدا حسین لاڑ ،ملک عباس کلیار ،ملک زبیر سیال اور دیگر نے کہا کہ ہر حکومت نے کسانوں کا استحصال کیا جس کے نتیجہ میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھنے والا زراعت کا شعبہ آج تباہی کے دہانے پر پہنچ چکا ہے۔مقررین نے کہا کہ دیہی علاقوں میں بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے کسان طبقہ مشکلات کا شکار ہے اور فصلیں تباہ ہورہی ہیں لیکن حکومت اس جانب کوئی توجہ نہیں دے رہی ۔

مقررین کہا کہنا تھا کہ پچھلی حکومت نے کسانوں کے ساتھ دھوکہ کیا ہے اور ہمارے ساتھ کیے جانیوالے وعدوں کو پورا نہیں کیا گیا۔ اس وعدے میں بجلی کے بلوں میں 8روپے فی یونٹ 8فکس کیا تھا جسکا ایک معاہدہ بھی تحریر ہوا جس میں کسانوں کو بجلی کے بل12ماہ کی اقساط میں ادا کرنے تھے لیکن آج تک اس پر عمل درآمد نہیں ہوا اور کسانوں کو کہا جارہا ہے کہ بلوں کو فوری ادا کیا جائے بصورت دیگرکسانوں کے کیسز نیب کو ریفر کر دیئے جائینگے ۔

مقررین نے کہا کہ واپڈا حکام نے کسانوں کو آئے روز دھمکیاں دینا شروع کر رکھی ہیں جبکہ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 20گھنٹے سے بھی تجاوز کر گیا ہے جسکی وجہ سے کسان معاشی بد حالی کا شکار ہیں ۔ مقررین نے کہا کہ اگر نگران حکومت نے ہمارے مطالبات نہ مانے تو ہم اس سے بھی زائد راست اقدام اٹھانے پر مجبور ہونگے ۔ احتجاجی کسانوں نے مطالبہ کیا کہ ٹیوب ویل کے نئے ٹیرف پر عملدرآمد فی الفور یقینی بنایا جایا بصورت دیگر لانگ مارچ کرتے ہوئے اسلام آباد روانہ ہونگے۔اس موقع پر ملک عاشق ،حاجی اکبر ،ملک قاسم وگھہ مل،میاں محمد اسلم اور دیگر موجود تھے۔ادھر ٹریفک کی طویل لائنوں سے خواتین،بچے اور مردوں کے علاوہ طلباء طلالبات سمیت مسافر کئی میل تک پیدل چلنے پر مجبور رہے۔
10/04/2013 - 23:45:24 :وقت اشاعت