محمدﷺ پرسب کچھ قربان

منگل اکتوبر

Umer Khan Jozvi

عمر خان جوزوی

امن کے نام نہادعلمبرداروں کی جانب سے ایک مرتبہ پھررحمت اللعالمینﷺ کی شان اقدس میں گستاخانہ خاکوں کے ذریعے بدترین گستاخی سے جہاں ایک طرف کروڑوں اوراربوں مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے وہیں عالم کفرکے اس اقدام ،شیطانیت،کفر،دجل اورفریب سے امن کے گن گانے والے ان سیاہ کاروں کااصلی چہرہ بھی کھل کردنیاکے سامنے آگیاہے۔۔

دنیابھرمیں انتہاء پسندی اوردہشتگردی کی فیکٹریاں چلانے والے یہ سیاہ کارایک عرصے سے نہ صرف اسلامی شعائراوردین اسلام کی مقدس شخصیات کی توہین کرکے دنیامیں انتہاء پسندی کوفروغ دے رہے ہیں بلکہ مذہبی منافرت اورفرقہ واریت پھیلانے کے ذریعے دنیاکاامن تباہ کرنے کاکوئی موقع بھی ہاتھ سے جانے نہیں دے رہے ہیں مگراس کے باوجوددنیاکے کسی بھی کونے میں انتہاء پسندی اوردہشتگردی کی جب کوئی بات آتی ہے توپھرامن کے ان دشمنوں کی جانب سے انگلیاں دنیابھرکے مظلوموں مسلمانوں کی طرف ہی اٹھتی ہیں۔

(جاری ہے)

۔اس دنیامیں رہنے والوں کابھی الگ رواج ۔۔نرالاقانون اورعجیب دستورہے۔۔جرم دل کے یہ کالے کرتے ہیں اورمجرم پھرمسلمان ٹھہرتے ہیں۔۔امن کے خشک بھاشن دینے والے ان گوروں کاوہ کونساملک ہے جہاں شعائراسلام اوردین اسلام کی مقدس شخصیات کی توہین نہ کی گئی ہو۔۔؟اسلام اورمسلمانوں کے ان دشمنوں نے تورحمت اللعالمین ﷺکی شان اقدس میں گستاخیوں اورتوہین کواپناایک معمول بنایاہواہے۔

۔اللہ کے جس آخری پیغمبراورخاتم الرسل حضرت محمدمصطفی ﷺ جس کی عزت۔۔ عظمت اورحرمت پرفلسطین سے پاکستان۔۔ہندوستان سے ازبکستان۔۔سعودی عرب سے امریکہ۔۔برطانیہ سے عرب امارات۔۔عراق سے لیبیااورشام سے تھائی لینڈتک ہرکلمہ گومسلمان دھن،من اورتن قربان کرنااپنے لئے بہت بڑی سعادت سمجھتاہے۔۔عالم کفرکے یہ چیلے اورابلیس شیطان کے یہ لے پالک کتے کائنات کے اس عظیم انسان اورتمام انبیاء کے سرداروامام حضرت محمدﷺ کی شان میں گستاخی کرنے کے لئے اپنے اپنے ممالک میں گستاخانہ خاکوں کے مقابلے منعقدکرتے ہیں۔

۔فرانس میں گستاخانوں خاکوں کے حالیہ واقعات اس کی تازہ اورزندہ مثال ہیں۔۔اب تک ڈنمارک سمیت نہ جانے اور کتنے ممالک میں اس شیطانی عمل کاارتکاب کیاجاچکاہے لیکن اس کے باوجوددنیاکی نظروں میں پھربھی سب سے بڑے دہشتگرداورانتہاء پسندبے چارے،،مسلمان ،،ہی ہیں۔۔مسلمان سب کچھ برداشت کرسکتے ہیں لیکن اپنے نبی کی شان میں ایک لفظ کیا۔۔؟کوئی ایک غلط نقطہ بھی برداشت نہیں کرسکتے۔

۔اوراس حقیقت سے پوری دنیابخوبی واقف اوراچھی طرح آشناء بھی ہے۔۔لیکن اس کے باوجوددنیامیں امن کاچورن بیچنے والوں کی جانب سے شان رسالت ﷺمیں جان بوجھ کر گستاخیوں پرگستاخیاں کرکے مسلمانوں کے دل چھلنی کئے جارہے ہیں۔۔دنیاکوفرانس اورڈنمارک سمیت چاہے کچھ بھی عزیزہولیکن ہم مسلمانوں کے لئے اللہ کے آخری نبی حضرت محمدمصطفی ﷺکی ذات وصفات۔

۔عزت۔۔عظمت اورحرمت سے زیادہ عزیزاور آگے کچھ نہیں۔۔دنیامیں امن کے نام نہادعلمبرداروں اورہمارے مسلم حکمرانوں کی شائددنیاکے اس انوکھے دستور۔۔آئین۔۔قانون اوررواج کے سامنے اپنی کچھ مجبوریاں ہوں۔۔کمزوریاں ہوں۔۔لیکن دنیاوالے ایک بات یادرکھیں۔۔نبی آخرالزمان حضرت محمدﷺکی عزت۔۔عظمت اورحرمت پرتن۔۔من اوردھن کی قربانی دینایہ ہم سب مسلمانوں کی مجبوری بہت بڑی مجبوری ہے۔

۔واللہ۔۔آپ ہمیں ہزارنہیں لاکھ باربرابھلاکہیں ۔۔ہمیں ماریں ۔۔ہمیں پیٹیں۔۔ہمیں ماؤں اوربہنوں کی گالیاں دیں ۔۔ ہم تمہارے امن کی خاطرپھربھی اف تک نہیں کہیں گے۔۔ لیکن تم اگرہمارے اس پیغمبرجونہ صرف مسلمانوں بلکہ تمہارے اوراس ساری کائنات کے لئے رحمت بن کرآئے۔۔اس عظیم پیغمبرکے بارے میں ایک لفظ بھی غلط بولوگے توپھریادرکھنا۔۔واللہ۔

۔دنیامیں بسنے والاکوئی بھی مسلمان پھرتمہیں اس دنیامیں نہ جینے دے گااورنہ زندہ چھوڑے گا۔۔ہم پہلے بھی ایک نہیں ہزاراورلاکھ بارکہہ چکے ہیں اورآج ایک بارپھرڈنکے کی چوٹ پرکہتے ہیں کہ ہماری شرافت۔۔ہماری خاموشی ۔۔ہماراصبراورہماراپرامن رہناصرف حضورﷺکی عزت۔۔عظمت اورحرمت تک ہے۔۔جب بھی کہیں سے ہمارے آقاﷺکی شان میں کہیں سے کوئی گستاخی ہوگی۔

۔آقاﷺکی عزت۔۔عظمت اورحرمت پرکہیں سے کوئی آنچ آئے گا پھرنہ صرف پاکستان بلکہ ہندوستان۔۔سعودی عرب۔۔ترکی۔۔فلسطین۔۔کشمیر۔۔عراق۔۔افغانستان اورشام ولیبیاتک کسی ایک مسلم ملک میں بھی کوئی مسلمان نہ پھر شرافت سے رہے گااورنہ ہی خاموش رہے گا۔۔حضرت محمدﷺکی عزت۔۔عظمت اورمحبت یہ ہمارے لئے ریڈلائن اورانتہاء ہے۔۔اس ریڈلائن کوجوکراس کرے گا۔

۔اس کیلئے پھرکوئی غازی علم الدین شہید۔۔عامرچیمہ شہیداورممتازقادری شہیدکی صورت میں ضرور سامنے آئے گا۔۔امریکہ اوربرطانیہ سمیت دنیامیں امن کاچورن بیچنے والے امن کے نام نہادعلمبرداروں کواگرواقعی دنیامیں امن چاہئیے یاانہیں سچ میں امن سے پیارہے توان کوپھرشیطان کے ان چیلوں کوہرحال میں پٹہ ڈالناہوگا۔۔دنیاکیلئے شائدکہ ذات ومفاد کی خاطراس سے آگے کچھ ہولیکن ہمارے لئے محمدﷺسے آگے کچھ نہیں۔

۔ذات ومفادکیا۔۔؟ہمارے بچے۔۔ہمارامال۔۔ہمارے آباؤاجداداورہماری ایک نہیں ہزاروں۔۔لاکھوں ۔۔کروڑوں۔۔اربوں وکھربوں جانیں محمدﷺ پرقربان ہو۔۔ہم ایسے امن۔۔پیار۔۔محبت۔۔اخوت اوربھائی چارے پرایک نہیں ہزاربارلعنت بھیجتے ہیں جس امن۔۔محبت۔۔اخوت اوربھائی چارے میں ہمارے نبی اورپیغمبرعلیہ السلام کی عزت اورعظمت محفوظ نہ ہو۔۔اس طرح کے گستاخانہ خاکوں پرامریکہ وبرطانیہ جیسے ممالک اوراقوام متحدہ جیسے اداروں کے بڑوں کی خاموشی افسوسناک ہی نہیں بلکہ شرمناک بھی ہے۔

۔مسلمانوں کوانتہاء پسنداوردہشتگردثابت کرنے کے لئے اچھلنے۔۔کودنے اورناچنے والے کرایہ کے وہ ٹٹوجواٹھتے بیٹھتے مسلمانوں کودہشتگردوانتہاء پسند کہتے ہوئے نہیں تھکتے۔۔کرایہ کے وہ ٹٹوآج کہاں ہیں ۔۔؟امن کے ان نام نہادٹھیکیداروں کوآج دنیاکی یہ سب سے بڑی دہشتگردی اورانتہاء پسندی کیوں نظرنہیں آرہی ۔۔؟واللہ ۔۔حضرت محمدﷺ کی شان میں ذرہ سی بھی کوئی گستاخی ہویامعمولی سی کوئی بے ادبی ۔

۔واللہ۔۔واللہ۔۔ہم مسلمانوں کے لئے اس سے بڑی دہشتگردی اورانتہاء پسندی اورکوئی نہیں ۔۔؟ہم ننگے بھوکے رہ کرجی سکتے ہیں لیکن محمدﷺکی شان میں ذرہ کوئی بے ادبی یاگستاخی ہوہمیں پھرچین وسکون نہیں آتا۔۔آقاعلیہ السلام سے محبت اورعشق یہ ہماری اصل زندگی ہے اوراسی محبت وعشق کوہم گناہ گاردونوں جہانوں کی کامیابی سمجھتے ہیں۔۔ہمارے پاس ایک محمدﷺ کی محبت ہی توہے۔

۔یہ اگرنہ ہوتوواللہ۔۔پھرہمارے پاس کچھ بھی نہیں بچتا۔۔یہ دنیاتوآبادہی محمدﷺ کے نام سے ہے۔۔اس لئے اہل دنیاکے ساتھ ہمارے یہ بھولے بھالے حکمران بھی یہ بات یادرکھیں کہ ہم مہنگائی ۔۔غربت۔۔بیروزگاری ۔۔بھوک وافلاس سمیت سب کچھ برداشت کرسکتے ہیں لیکن آقاعلیہ السلام کی شان میں کوئی گستاخی اوربے ادبی ہرگزبرداشت نہیں کرسکتے۔۔فرانس میں آقاعلیہ السلام کی شان میں گستاخی نچلے نہیں ہائی لیول پرہوئی ہے۔

۔جس ملک کاصدرگستاخ رسول ہو۔۔ایسے ملک سے دوستی۔۔تعلقات اورکاروبارپرہم سوبارلعنت بھیجتے ہیں۔۔ہمارے حکمرانوں کوفرانس کے ساتھ ہرقسم کے تعلقات فوری طورپرختم کرنے چاہیئں۔۔محض زبانی جمع خرچ اورمذمتیں کافی نہیں ۔۔عشق رسول ﷺ یہ مذمتوں نہیں گستاخوں کی مرمتوں کامتقاضی معاملہ ہے۔۔ویسے بھی عشق میں انجام کونہیں دیکھاجاتا۔۔پھراگر۔۔

عشق ۔۔عشق۔۔مصطفی سے ہو۔۔مجتبیٰ سے ہو۔۔حضرت آمنہ کے لعل سے ہو۔۔انبیاء کے سردارسے ہو۔۔تو۔۔عاشق۔۔ غازی علم الدین شہید۔۔عامرچیمہ شہیداورممتازقادری شہیدکی طرح اس طرح تاریخ رقم کرتاہے کہ اپنے کیا۔۔؟بیگانے بھی پھردل وجان سے سلام کئے بغیرنہیں رہ سکتے۔۔
وہ عرش کاچراغ ہے میں اس کے قدموں کی دھول ہوں
اے زندگی گواہ رہنامیں عاشق رسول ﷺ ہوں
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Mohammad SAW Per Sab Kuch Qurban Column By Umer Khan Jozvi, the column was published on 27 October 2020. Umer Khan Jozvi has written 412 columns on Urdu Point. Read all columns written by Umer Khan Jozvi on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.