امت مسلمہ قیادت کیلئے پاکستان اور سعودی عرب کی طرف دیکھتی ہے، ڈاکٹر عارف علوی

دونوں ممالک کی قیادت پوری دنیا کی قیادت کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، سعودی عرب سے پاکستانیوں کی محبت ہمیشہ رہے گی،صدر مملکت پاکستان نے جس طرح کورونا وباکا مقابلہ کیا دنیا کیلئے مثال ہے، دنیا افغانستان سے انخلامیں پاکستان کی شکرگزار ہے اسکے باوجود پاکستان کیخلاف فیک نیوز کی بنیاد پر مہم چلائی جا رہی ہے،پاک۔سعودی تعلقات اور ماضی، حال اور مستقبل کے موضوع پر سیمینار سے خطاب

جمعرات 23 ستمبر 2021 23:28

امت مسلمہ قیادت کیلئے پاکستان اور سعودی عرب کی طرف دیکھتی ہے، ڈاکٹر ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 23 ستمبر2021ء) صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ امت مسلمہ قیادت کیلئے پاکستان اور سعودی عرب کی طرف دیکھتی ہے، دونوں ممالک کی قیادت پوری دنیا کی قیادت کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، دونوں ممالک نے مشکل کی گھڑی میں ایک دوسرے کا ساتھ دیا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بطور مہمان خصوصی جمعرات کو پاک۔

سعودی تعلقات اور ماضی، حال اور مستقبل کے موضوع پر سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ سیمینار کی صدارت چیئرمین حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کی، انہوں نے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان دوستی کا پہلا معاہدہ 1951میں ہوا، سعودی عرب کے ساتھ پاکستان کی دوستی کی طویل تاریخ ہے، پاکستانی سعودی عرب سے دلی محبت کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ جب ہمسایہ ملک کے ایٹمی دھماکوں کے جواب میں پاکستان نے ایٹمی دھماکے کئے تو اس پر پاکستان کو پابندیوں کا سامنا کرنا پڑا، اس موقع پر دوست ممالک نے پاکستان کا بھرپور ساتھ دیا۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب سے پاکستانیوں کی محبت ہمیشہ رہے گی، پاکستانی مزدور سعودی عرب کی تعمیر و ترقی میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں اور وہ بھاری ترسیلات زر پاکستان بھی بھیجتے ہیں، پاکستانی مزدور اور پروفیشنلز سعودی عرب میں کام کرنے کی دلی خواہش رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سعودی عرب نے افغان مہاجرین کے معاملہ پر ہماری مدد کی، عالمی سطح پر دونوں ممالک کا تعاون مثالی ہے، مسلم امہ سعودی عرب اور پاکستان کی طرف دیکھتی ہے اور دونوں ممالک کی قیادت دنیا کی قیادت کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

صدر مملکت نے کہا کہ ہم نے سعودی عرب کی سرزمین سے سیاست، ماحولیات اور انسانی تعلقات سیکھے، سعودی عرب کی تاریخ کے تناظر میں ہمیں خطہ، نظریات اور عوام سے محبت ہے، جب تک یہ کائنات قائم ہے یہ محبت قائم رہے گی۔ انہوں نے کہا کہ حضور اکرمؐ اور خلفائے راشدین نے دنیا سے تعلقات کیلئے جو اصول وضع کئے وہ اب نظر نہیں آتے، دنیا کو ایسی قیادت کی ضرورت ہے جو اخلاقیات، ہمدردی اور اصولوں کی بنیاد پر ہو نہ کہ تعلقات کو تجارت اور مفادات سے جوڑا جائے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ماحولیات سمیت دیگر شعبوں کے بارے میں بہترین ویژن رکھتے ہیں، سعودی عرب ویژن 2030تاریخی تبدیلی ہے، سعودی عرب میں نئے شہر قائم کئے جائیں گے، یہ بڑا منفرد کاروباری مرکز بنے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے جس طرح کورونا وباکا مقابلہ کیا دنیا کیلئے مثال ہے، دنیا افغانستان سے انخلامیں پاکستان کی شکرگزار ہے لیکن اس کے باوجود پاکستان کے خلاف فیک نیوز کی بنیاد پر مہم چلائی جا رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پوری پاکستانی قوم حرمین شریفین کے تحفظ کیلئے تیار ہے، پاکستانیوں کو جتنی پاکستان سے محبت ہے اتنی ہی سعودی عرب سے ہے۔ صدر مملکت نے اس موقع پر سعودی عرب کے قومی دن کی مبارکباد پیش کی۔ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کا آپس میں دل کا رشتہ ہے، دونوں ممالک مذہب، تاریخ اور اخوت کے لازوال رشتے میں بندھے ہوئے ہیں، سعودی عرب کے ساتھ ہمارے تعلقات پاکستان کی آزادی سے پہلے کے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان اور شہزادہ محمد بن سلمان کے ذریعے دونوں ملکوں کے تعلقات کا ایک نیا سفر شروع ہوا، پاکستانی عوام کے دل مکہ اور مدینہ کے ساتھ دھڑکتے ہیں۔ وفاقی وزیر برائے مذہبی امور پیر نورالحق قادری نے کہا کہ سعودی عرب کے قومی دن کے موقع پر یہ ان کیلئے اظہار محبت ہے، پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات سدا بہار، ہمہ وقت اور لازوال ہیں۔

وزیر اعظم کے نمائندہ خصوصی برائے مذہبی ہم آہنگی و مشرق وسطی کیلئے خصوصی نمائندہ حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ ہماری دینی اور سیاسی قیادت حرمین شریفین سے دلی لگائو رکھتی ہے، پاکستان اور سعودی عرب اچھے اور مشکل وقت کے دوست ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلامی تعاون تنظیم عالم اسلام کی بھرپور نمائندگی کر رہی ہے، مسلم امہ کی بقااس کے اتحاد میں ہے، فلسطین، کشمیر اور افغانستان کی صورتحال پر دونوں ممالک کا موقف یکساں ہے، موجودہ حکومت ملکی خود مختاری، استحکام اور سلامتی کیلئے تمام وسائل بروئے کار لا رہی ہے۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے پاکستان میں سعودی عرب کے سفیر نواف بن سعید المالکی نے کہا کہ پاکستان اہم اسلامی ملک ہے، دونوں ممالک کے درمیان شاندار، دوستانہ، برادرانہ، سیاسی، فوجی، عوامی سطح اور بھارئی چارہ پر مبنی تعلقات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سعودی پاکستان سپریم کونسل کا قیام خوش آئند ہے، یہ کونسل دونوں ممالک کے درمیان گہرے دوستانہ تعلقات کی عکاس ہے۔سیمینار میںملک بھر سے علما و مشائخ ، مفکرین ، دانشوروں ، وفاقی وزرا ، مشیر صاحبان ، عرب اسلامی ممالک کے سفرا اور برٹش ہائی کمشنر نے شرکت کی۔