وفاقی وزیرمنصوبہ بندی اسد عمرنے سندھ حکومت کے بلدیاتی نظام کوعوام سے دھوکہ قراردیتے ہوئے مسترد کردیا

سندھ کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے اس کیخلاف تحریک چلائیں گے ،روایات کے برعکس آئندہ مردم شماری پانچ سال کے وقفہ سے کرانے کا فیصلہ کیا ہے،نئی مردم شماری ڈیجیٹل نظام کے ذریعے ہوگی،سندھ کے نئے بلدیاتی نظام میں رہے سہے اختیارات بھی چھین لیے گئے،کراچی کو اسکا حق دلائیں گے،وزیراعظم عمران خان دسمبرمیں کراچی کے پہلے جدید بس منصوبے گرین لائن کا افتتاح کریں گے، ورکرز کنونشن سے خطاب

اتوار 28 نومبر 2021 21:30

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 28 نومبر2021ء) وفاقی وزیرمنصوبہ بندی اسد عمرنے سندھ حکومت کے بلدیاتی نظام کوعوام سے دھوکہ قراردیتے ہوئے مسترد کردیا ہے اور کہاہے کہ سندھ کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے اس کیخلاف تحریک چلائیں گے۔ روایات کے برعکس آئندہ مردم شماری پانچ سال کے وقفہ سے کرانے کا فیصلہ کیا ہے،نئی مردم شماری ڈیجیٹل نظام کے ذریعے ہوگی، سندھ کے نئے بلدیاتی نظام میں رہے سہے اختیارات بھی چھین لیے گئے،کراچی کو اسکا حق دلائیں گے،وزیراعظم عمران خان دسمبرمیں کراچی کے پہلے جدید بس منصوبے گرین لائن کا افتتاح کریں گے۔

ان خیالات کا اظہارانہوں نیتحریک انصاف ضلع وسطی کے تحت حیدری میں ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پرتحریک انصاف کے چیف آرگنائزر سینیٹر سیف اللہ خان نیازی،مرکزی بانی رہنما رکن قومی اسمبلی نجیب ہارون،تحریک انصاف کراچی کے صدرخرم شیرزمان،جنرل سیکریٹری سعید آفریدی،سندھ اسمبلی میں پارلیمانی لیڈرپارلیمانی لیڈر بلال غفار،ایم این اے فہیم خان دیگرسینئررہنماں نے بھی خطاب کیا۔

(جاری ہے)

ورکرزکنونشن میں پارٹی قائدین کی آمد پرکارکنان نے پرجوش نعروں سے ان کا استقبال کیا اوروزیراعظم عمران خان کے حق میں نعرے بازی کی۔کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیراسدعمرنیڈسٹرکٹ سینٹرل کی ٹیم کو ورکرزکنونشن کے بھرپور انعقاد ہر مبارکباد پیش کی اورکہاکہ ڈسٹرکٹ سینٹرل کے کارکن کراچی میں تبدیلی کے سفر کا ہر اول دستہ ہوں گے،عمران خان نے کراچی سے صدر پاکستان اور گورنر سندھ بنایا،کراچی کو دو بڑی وزارتیں اور 14 ایم این اے دیے،کراچی کے کارکن نوکری نہ مانگیں یہ تو نوکری دینے والے ہیں،عمران خان کی جدوجہد طبقاتی نظام کے خلاف ہے،کراچی کی نوکریاں کراچی میں دلوانے کی ذ۔

مہ داری مقامی قیادت پر ہے۔ انہوں نے کہاکہ سندھ میں جعلی مقامی حکومت کے لیے بلدیاتی نظام کا اعلان کیا گیا،گرین لائن بس منصوبے پردس بارہ روزکا باقی کام ہے اگلے دو ہفتوں بعد دسمبر میں عمران خان کراچی میں جدید اور پہلے ٹرانسپورٹ منصوبے کا افتتاح کریں گے ۔ انہوں نے کہاکہ مردم شماری کراچی کا دیرینہ مطالبہ رہاہے،کراچی کی ابادی مردم شماری میں دکھائی نہیں دیتی،پچھلی حکومتوں نے 19 سال اور 17 سال کے وقفہ سے مردم شماری کرائی تھی،ہم نے روایات کو توڑتے ہوئے آئندہ مردم شماری پانچ سال کے وقفہ سے کرانے کا فیصلہ کیا ہے،ڈیجیٹل نظام کے ذریعے کراچی میں مردم شماری ہوگی جس کے بعد کراچی کا دیرینہ گلہ اورکراچی سے ناانصافی ختم ہوگی،تحریک انصاف اور اتحادیوں نے مردم شماری کی منظوری دلوائی ہے۔

انہوں نے کہاکہ کراچی کے لیے مقامی حکومت کا نظام عوام کوبااختیار نہیں کرتا ،تحریک انصاف نے پٹیشن داخل کی اس نظام کے لیے،وزیر اعظم نے اور میں نے دستخط کرکے یہ پٹیشن سپریم کورٹ میں داخل کی ہے،سپریم کورٹ آئین کے آرٹیکل 140 اے پر عمل درآمد یقینی بنانے کے لیے پٹیشن پر جلد از جلد سماعت مکمل کرے۔سندھ حکومت کے نئے بلدیاتی نظام میں سندھ میں رہے سہے اختیارات بھی چھین لیے گئے،کراچی کے عوام کو رہے سہے اختیارات سے بھی محروم کردیا گیا ہے۔

انہوں نے کہاکہ سندھ میں جو نظام چل رہا ہے وہ بہتر نہیں ہے،سندھ کے عوام کو قانون کے تحت بااختیاربنانا ہوگا،سیاسی اور قانونی طور پر قانون کے مطابق اختیارات ملنا چاہئیں،اسلام آباد میں صحت اور تعلیم اور ترقیاتی کام مئیر چلائے گا اور دیگر شعبے بھی مئیر کے ماتحت ہوں گے،کراچی میں ایسا نظام نہیں ہے تعلیم ،صحت اور دیگر کچھ نظام نہیں ہے اس کو مسترد کرتے ہیں، مقامی نظام حکومت کے اوپر دھوکہ ہونے جارہاہے اس کے خلاف تحریک چلانا ہے،کراچی کے عوام اپنا حق مانگ رہے ہیں،نظام کے نام پریہ مذاق اب سندھ کے عوام کے ساتھ نہیں ہوگا ،ظلم نہیں ہونے دیں گے اور کراچی کو اپنا حق دلا کر رہیں گے،اسلام آباد کے نئے بلدیاتی نظام میں مئیر کو بااختیار کیا گیا،سندھ میں اس کے برعکس کام کیا جارہا ہے،ٹرانسپورٹ،پانی، سڑکیں، مئیر کے ماتحت ہونی چاہئیں،میں اپنے کراچی کے منتخب نمائندوں سے کہتا ہوں سندھ کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے اس کیخلاف تحریک چلائیں،کراچی کے لوگ بھیک نہیں اپنا حق مانگ رہے ہیں،یہ ناانصافی،ظلم کراچی کے ساتھ برداشت نہیں کیا جائیگا۔

،پاکستان میں ہماریبزرگوں نے محنت کی اور پاکستان نے ترقی کی،آج عمران خان بھی محنت کررہے ہیں۔چیف آرگنائزر،سینیٹر سیف اللہ خان نیازی نے کامیاب ورکرز کنونشن پرخرم شیر زمان، سعید آفریدی اور پارٹی میمبران کو مبارکباد پیش کی اورکہاکہ پورے ملک میں مایوسی پھیلائی جارہی ہے،پوری دنیا میں مشکلات ہیں جس کی وجہ کووڈ ہے،کووڈ کی وجہ سے پوری دنیا میں مہنگائی ہے،اس کے ساتھ ساتھ ہماری اکنامی بڑھ رہی ہے،ہماری ایگریکلچر میں کسان کو فائدہ ہورہا ہے،اس کے برعکس سندھ حکومت کسان کا حق ماررہی ہے،ہماری ٹیکسٹائل انڈسٹری ترقی کررہی ہے،ہمارے ملک میں لیبر شارٹ ہورہی ہے۔

انہوں نے کہاکہ ہمارا ٹیکسٹائل کا شعبہ ترقی کررہا ہے،پاکستان کے ہر صوبے میں صحت کارڈ دیا گیاسندھ حکومت اپنا حصہ نہیں ڈال رہی ہے،سندھ کی عوام صحت کارڈ سے محروم ہے،اگلی حکومت سندھ میں تحریک انصاف کی ہوگی،عمران خان صرف اپنی عوام کا سوچ رہے ہیں ،اگلی دفعہ ہم سادہ اکثریت سے حکومت بنائیں گے،حیدرآباد یونیورسٹی کا بل عمران خان نے پاس کروایا،سپریم کورٹ نے نسلہ ٹاور کے خلاف ایکشن لیا ہے،سپریم کورٹ سے اپیل کروں گا جس نے انہیں این او سی دی ان کے خلاف کارروائی کی جائے،ان سے پیسے لیکر متاثرین کو رقم دی جائے،شہدادکوٹ میں رانا سخاوت راجپوت کو قتل کیا گیا،سندھ حکومت ان کے قاتلوں کو فوری گرفتار کرے۔

انہوں نے کہاکہ لوکل گورنمنٹ کے الیکشن میں پارلیمانی بورڈز حقیقی ورکرز کو ٹکٹ دیں،پارٹی کے لیے قربانی دینے والوں کو آگے لایا جائے گا ۔ تحریک انصاف کراچی کے صدرخرم شیرزمان رکن قومی اسمبلی نجیب ہارون،فہیم خان، بلال غفار نے کہاکہ کارکنان کو کراچی میں اب الیکشن کی بھرپور تیاری کرنی ہے،ضلع وسطی کا ہر ورکر متحرک ہے،تنظیم تیار ہوجائے، آئندہ انتخابات میں بہترین کردار ادا کرنا ہے،ورکر کی محنت سے بلدیات میں کامیابی ممکن ہے،پی ٹی آئی عام آدمی کی جماعت ہے ہمارا مقصد عام آدمی کو ریلیف دینا ہے،کراچی تحریک انصاف کا ہے،بلدیاتی انتخابات میں پی ٹی آئی میدان مارے گی۔

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments