مودی حکومت کی انتہا پسندانہ پالیسیاں خطے کے امن و سلامتی کیلئے سنگین خطرہ ہیں،سردار مسعود

پیر اکتوبر 02:00

مودی حکومت کی انتہا پسندانہ پالیسیاں خطے کے امن و سلامتی کیلئے سنگین ..
راولپنڈی۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 26 اکتوبر2020ء) : صدر آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ مودی حکومت کی انتہا پسندانہ پالیسیاں خطے کے امن و سلامتی کیلئے سنگین خطرہ ہیں، کشمیر کیلئے ہم پر جنگ مسلط کر دی گئی، بھارت نے آزاد کشمیر کی طرف میلی آنکھ سے دیکھا تو آزادکشمیر کو بھارتی فوج کا قبرستان بنا دیںگے، پنجاب آرٹس کونسل میں آزاد کشمیر کے یوم تاسیس پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کے عوام تکمیل پاکستان کی جنگ لڑ رہے ہیں کیونکہ وہ سمجھتے ہیں کہ کشمیر کے بغیر جہاں پاکستان نامکمل ہے وہاں پاکستان کے بغیر ان کی بھی کوئی شناخت نہیں، انہوں نے کہا کہ مودی حکومت کی انتہا پسندانہ پالیسیاں خطے کے امن و سلامتی کیلئے سنگین خطرہ ہیں، بھارت نے کشمیریوں کی خواہشات کے برعکس طاقت کے بل بوتے پر فوج داخل کرکے کشمیر پر غاصبانہ قبضہ کیا، انہوں نے کہا کہ بھارت پر جنگی جنون سوار ہے جبکہ پاکستان ایک ذمہ دار ایٹمی قوت ہے، صدر آزاد جموں کشمیر نے واضح کیا کہ کشمیریوں کے بنا کوئی بھی مذاکرات کامیاب نہیں ہوسکتے، انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں روز کشمیری نوجوان شہید ہو رہے ہیں، خواتین اور بچے بھی بھارتی بربریت سے محفوظ نہیں، بھارتی فوج نی14 ہزار سے زائد کشمیری نوجوانوں کو کیمپوں میں قید کر رکھا ہے، صدر آزاد کشمیر نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی پامالیوں کا نوٹس لے، مقبوضہ کشمیر کی متنازعہ حیثیت دوبارہ بحال کی جائے اور مقبوضہ وادی میں قید کشمیری رہنماوں کو فوری رہا کیا جائے، انہوں نے کہا کہ مقبوضہ وادی میں اخبارات اور صحافیوں پر پابندی ہے، سچ بولنے والے صحافیوںکو غائب کر دیا جاتا ہے، وادی کی صورتحا ل کو دنیا سے چھپانے کے لیے انٹرنیٹ سروس بھی مکمل بندہے، سردار مسعود خان نے حکومت پاکستان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پچاس سال بعد پاکستان نے مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل میں دوبارہ زندہ کیا ہے، مسئلہ کشمیر کو دنیا تک پہنچانے کے لئے سیاست دانو ں سمیت عوام کو مل کر عالمی مہم چلانی چاہئے، سردار مسعود خان نے آزاد کشمیر کا یوم تاسیس منانے پر پاکستانیوں شکریہ ادا کیا، چیئرمین کشمیر کمیٹی شہریار آفریدی نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان دنیا میں امن کیلئے 30 لاکھ افغان پناہ گزینوں کی میزبانی کر رہا ہے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستانیوں نے بے مثال قربانیاں دیں، انہوں نے کہا کہ سکھ، کرسچن اور ہندو برادری ہمارے لئے قابل احترام ہے، تمام مذاہت کی بنیاد انسانیت ہے، انہوں نے کہا کہ بھارت نے غیرقانونی طور جموں کشمیر پر قبضہ کیا اور کشمیریوں پر ظلم و بربریت کر رہا ہے جس پر دنیا خاموش ہے مگر پاکستان مسلہ کشمیر پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرے گا اور وہ دن اب دور نہیں جب کشمیر کی آزادی کا سورج طلوع ہوگا، انہوں نے کہا کہ فاشسٹ مودی دنیا کیلئے ایک سوالیہ نشان ہے، بھارت دنیا میں گوشت کا دوسرا بڑا برآمدکنندہ ہے مگر بھارت میں کوئی مسلمان گائے ذبح کرے تو اسے مار دیا جاتا ہے، اگر مودی سرکار نے مقبوضہ کشمیر اور بھارت کی دوسری ریاستوں میں مسلمانوں کو دبانے اور ان کے قتل عام کا سلسلہ جاری رکھا تو وہ دن دور نہیں جب مودی کے ہاتھوں موجودہ بھارت بھی سوویت یونین کی طرح ٹکڑوں میں تقسیم ہو جائے گا، تقریب سے حریت رہنما الطاف حسین وانی اور یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک نے بھی خطاب کیا۔