سر سید کی بصیرت اور سر سید ایکسپریس

پیر جولائی

Murad Ali Shahid

مراد علی شاہد

گذشتہ روز وزیرِاعظم عمران خان نے راولپنڈی ریلوے اسٹیشن پر نان سٹاپ سر سید ایکسپریس کا افتتاح کیا تو وزیرریلوے شیخ رشیداحمد نے افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اپنے روائتی اندازِخطابت میں بیان کیا کہ میں وزیرِ اعظم عمران خان کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جنہوں نے پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے لئے نیا پاکستان کا وژن دیا اور ان کی ٹیم کا حصہ بنتے ہوئے میں خوشی محسوس کرتا ہوں۔

اور اس سے بھی زیادہ خوشی مجھے اس وقت محسوس ہوتی ہے جب میں اپنے عوام کی خدمت کے لئے کوئی نیا اور فلاحی کام سرانجام دیتا ہوں،آج سر سید ایکسپریس کا افتتاح دراصل اس سلسلہ کی ایک کڑی ہے جس کاعوام سے میں نے وعدہ کیا تھا کہ ریلوے کے نظام کو بہتر بنانے میں شب و روز ایک کردونگا۔

(جاری ہے)

سر سید ایکسپریس نان سٹاپ ریل ہوگی جو راولپنڈی سے کراچی تک کا سفر صرف دس گھنٹوں میں طے کرے گی۔

اس سے دونوں شہروں کے درمیان فاصلے کم ہو جائیں گے،روڈ پر ٹریفک کا رش کم ہو جائے گا،ٹکٹ سستی ہونے کی بنا پر ہر شخص بآسانی سفر کی سہولت سے مستفید ہو سکے گا،جس سے محکمہ ریل اور معیشت مستحکم ہو جائے گی۔علاوہ ازیں ریلوے اسٹیشنز پر یک صد کھو کھے(کیبن)وزیرِاعظم کے پروگرام”احساس“کو اس نیت سے دینے کا بھی اعلان کرتا ہوں کہ اس سے بیواؤں،یتیموں اور بے روزگار نوجوانوں کو باعزت روزگار مہیا ہو سکے گا۔

حیران کن بات یہ تھی کہ بقول شیخ رشید انہوں نے ریلوے کا خصارہ چھتیس ارب سے کم کر کے بتیس ارب کردیا ہے باوجودیکہ مارکیٹ میں تیل کی قیمت میں بھی اضافہ ہو چکا ہے۔بہت ہی خوش آئند بات ہے،خصارہ میں کمی کے لئے وزیر ِاعظم عمران خان نے شیخ رشید کا شکریہ بھی ادا کیا ۔ان تمام اقدامات سے ایک بات تو طے ہو جاتی ہے کہ اگر اسی طرز پر پاکستان کے تمام ادارے خواہ حکومتی یانجی ہوں،اگر شبانہ روز اپنا اپنا کردار ایمانداری اور خلوص نیت سے ادا کرنا شروع کر دیں تو بنا کسی مبالغہ آرائی کے چند سالوں میں یہ ملک ان ترقی یافتہ ممالک کی صف میں جا کھڑا ہوگاجنہوں نے دن دگنی رات چوگنی ترقی کر کے دنیا کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا ہے۔

اگر بات کی جائے یورپ اور امریکہ کی تو تاریخ کے اوراق شاہد ہیں کہ آج سے دو سوسال قبل ان کی دنیا میں پہچان ماسوا راہزنی،جنگ وجدل اور جہالت کے کچھ بھی نہیں تھی۔لیکن انہوں نے بدلتے دھارے کے ساتھ اپنے آپ کو بدلا اور آج وہ قومیں اپنے علم اور حلم کے ساتھ پوری دنیا پر بالواسطہ یا بلا واسطہ حکمرانی کر رہی ہیں۔
اگر ہم تاریخ برصغیر کا مطالعہ کریں تو ہم دیکھتے ہیں کہ آج سے ایک سو ساٹھ سال قبل سر سید احمد خان ایسے مرد آہن تھے جنہوں نے اپنوں اور بے گانوں کی مخالفت کو برداشت کرتے ہوئے اس بات کا علم اپنے ہاتھ میں تھاما کہ مسلمان اس وقت تک ترقی نہیں کر سکتے جب تک کہ وہ جدید تعلیم سے بہرہ ور نہیں ہوتے،گویا وقت کے دھارے کے ساتھ مسلمانوں کو بہہ جانا چاہئے تاکہ دنیا میں اپنا آپ منواسکیں،مگر افسوس صد افسوس کہ اس وقت کے چند نام نہاد علما نے انہیں اور ان کی تعلیمات کو اسلام کیلئے خطرہ قرار دے کر ان کی ذات پر سترہ کے قریب الزامات لگائے کہ گویا سرسید احمد مسلمان نہیں بلکہ خدا کا ہی انکاری ہو کر ملحدی کی صف میں جا کھڑا ہو ا ہے۔

ان تمام مخالفت کے باوجود سر سید احمد اپنے مشاہدہ اور بصیرت سے اس بات کا ادراک کر چکے تھے کہ اگر مسلمانوں کو اپنا کھویا ہوا مقام اور وقار حاصل کرنا ہے تو اس کا ایک ہی حل ہے کہ مسلمان فی الوقت سیاست سے دور رہیں،علم اور تعلیم پر بھر پور توجہ دیں،یونہی مناسب وقت آئیگا سیاست میں بھی طبع آزمائی ضرور کر لیجئے گا۔سرسید اصل میں جانتے تھے کہ مسلمانوں کی زبوں حالی معاشی بھی ہے اور تعلیمی بھی لہذا اگر انہیں معاشی طور پر مضبوط اور مستحکم ہونا ہے تو پھر اس علم کے حصول کو ممکن بنانا ہے جس سے دور حاضر مستفید ہو رہا ہے،کہ تعلیمی ترقی دراصل معاشی ترقی کا ہی دوسرا نام ہے۔

خدا کرے کہ سر سید ایکسپریس بھی سر سید کے نام کی طرح ان کے وژن کی عکاس ہو،کہ وہ تبدیلی،ترقی و خوش حالی اور معاشی استحکام جس کا خواب سر سید نے دیکھا تھا اس کا عشر عشیر یہ ایکسپریس ثابت ہو جائے یا معاشی استحکام میں یہ ایکسپریس پہلا قطرہ بن کر بنجر معاشی زمین کو نم کر دے اور پھر خوش حالی کی بارش کا نہ تھمنے والا سلسلہ شروع ہو جائے جو اس وقت تھمے جب میرے ملک پاکستان میں ہر سُو ترقی،استحکام اور مضبوط معیشت کی فصلیں لہلہانے لگ جائیں(آمین)
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Sarsayyad Ki Basirat Column By Murad Ali Shahid, the column was published on 08 July 2019. Murad Ali Shahid has written 29 columns on Urdu Point. Read all columns written by Murad Ali Shahid on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.