احتساب کا جاری تسلسل

عوام آہستہ آہستہ جاری احتساب پر اعتماد کھو رہی ہے اور حکومت کو اپنے سیاسی حریفوں کے خلاف مقدمات بنانے اور انہیں دیوار کی طرف دھکیلنے کا ذریعہ قرار دے رہے ہیں

رعنا کنول بدھ اگست

Ehtesaab Ka Jari Tasalsul
احتساب کا جاری تسلسل سیاسی انتقام کی بدترین شکل کو بے نقاب کررہا ہے جبکہ حزب اختلاف کی جماعتوں کی طرف سے گرفتاری اختیار کرنے والے سیاسی مخالفین کی اکثریت گرفتاریوں کے حالیہ وقوع کو مزید مشکوک بنا رہی ہے۔اس مذموم مہم کا مقصد پہلے جیل میں ڈالنا اور بعد میں تفتیش کرنا ہے جس سے عوام کو ملک کی عدلیہ کی طرف انگلی اٹھانا پڑی ہے۔


عوام آہستہ آہستہ جاری احتساب پر اعتماد کھو رہی ہے اور حکومت کو اپنے سیاسی حریفوں کے خلاف مقدمات بنانے اور انہیں دیوار کی طرف دھکیلنے کا ذریعہ قرار دے رہے ہیں۔ڈرامائی گرفتاریوں ، میڈیا ٹرائل ، طویل اوتار اور دانستہ طور پر فرد جرم نے قومی احتساب بیورو (نیب) کی جزوی کارروائی پر سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔
سیاسی مخالفین کو ٹھوس شواہد کے بغیر بھٹکنے کے لئے سلاخوں کے پیچھے کھڑا کیا جا رہا ہے جو بظاہر سیاسی طور پر زیادتی کے مترادف ہے۔

(جاری ہے)

تحقیقات کرنے والے افراد کو اس عمل کی منصفانہ صلاحیت کی تمام خصوصیات کو برداشت کرنے کے لئے جائز شواہد کے تحت تحقیقات کا آغاز کرنا چاہئے۔
قومی اسمبلی میں ہنگامہ آرائی ، خاص طور پر پچھلے سال میں نام نہاد احتساب مہم اور سیاسی جادوگرنی کی وجہ سے معمول بن گیا ہے جس نےقومی اسمبلی کو ایک سیاسی میدان میں بدل دیا ہے۔ملک کے سب سے معزز قانون ساز ادارے کی کارروائی روکنے کے لئے ہنگامہ برپا کرنا تمام قانون سازوں کے لئے زوردار طمانچہ ہے۔

اسمبلی سیشن میں خلل ڈالنے والوں  کا تماشا بہت حیران کن اور شرمناک ہے۔
کیچڑ اچھالنے والے گڑھے میں پارلیمنٹ کے تقدس کو پامال کیا جاتا ہے۔اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر گستاخانہ الفاظ کو حذف اور سیشن کو آسانی سے ریگولیٹ کرنے میں بے بس نظر آتے ہیں۔اپوزیشن اور حکومت ، دونوں ہی قومی اسمبلی میں پیش آنے والی صورتحال کے ذمہ دار ہیں۔
ہمارے اراکین پارلیمنٹ ملک کے مختلف دیرینہ چیلنجوں سے متعلق کوئی سنجیدہ بحث کرنے اور ان سے نمٹنے کے لئے مناسب راہیں ہموار کرنے کی بجائے ایک دوسرے کو پامال کرنے اور ان سے ٹکرانے میں زیادہ دلچسپی رکھتے ہیں۔

اب وقت آگیا ہے کہ حریف معاشی پریشانیوں کو اجتماعی طور پر حل کرنے کے لئے دونوں مخالفین مستحکم اور متحد رہیں کیونکہ معاشی اور سیاسی استحکام اصلاحی ہے۔
اس حقیقت میں کوئی پلک جھپکتی نہیں ہے کہ پاکستان کو خراب معاشی خبروں کی زد میں لایا گیا ہے: روپے کے مقابلے میں ڈالر کی تیزی ۔ کم ٹیکس وصولی؛ جمود برآمد؛ محصولات میں کمی اور مہنگائی کا سیلاب۔

ملک غیر منطقی طور پر عدم استحکام کا شکار ہے اور اسے اس صورتحال سے دور کرنےکی راہ میں حائل رکاوٹیں ملتی ہیں۔
انتہائی افسوس کے ساتھ ، اپوزیشن کی دونوں جماعتیں اور حکومت اس آزمائشی وقت میں دونوں ایک دوسرے سے تعاون بڑھانے کے بجائے ڈوبتی ہوئی معیشت کو بحال کرنے کے راستے میں رکاوٹیں کھڑی کردی ہیں۔
ادھر یہ کہنا ضروری ہے کہ حزب اختلاف کی جانب سے بڑے پیمانے پر رابطے کی مہم چلانے کا خطرہ معاشی سرگرمیوں کو مزید سست کردے گا اور یہ پاکستان کی ابدی ترقی اور ترقی کی راہ میں رکاوٹ ڈالنا ایک بدنیتی پر مبنی منصوبہ ہے۔


اب وقت آگیا ہے کہ حکومت اور اپوزیشن جماعتیں اپنے آئینی کردار ادا کریں اور لوگوں کی شکایات کے ازالے کے لئے تدابیر اختیار کریں۔ دونوں سیاسی حریفوں کے مابین باہمی مفاہمت کی اشد ضرورت ہے تاکہ اپنے اختلافات کو دور کیا جاسکے اور ’ترقی پسند اور خوشحال پاکستان‘ کے مقصد کے لئے مشترکہ طور پر کام کریں۔

Your Thoughts and Comments

Ehtesaab Ka Jari Tasalsul is a Special Articles article, and listed in the articles section of the site. It was published on 21 August 2019 and is famous in Special Articles category. Stay up to date with latest issues and happenings around the world with UrduPoint articles.