ہاتھی کے دانت

ہفتہ اپریل

M Sarwar Siddiqui

ایم سرورصدیقی

ضروری نہیں کتابیں لکھ لکھ کر انبار لگادئیے جائیں یا اتنے منصوبے شروع کہ لوگوں کا جینا عذاب بن جائے تاریخ میں زندہ رہنے کیلئے ایک حوالہ ہی کافی ہوتاہے لیکن یہ بات آج تک کسی کی سمجھ میں نہیں آئی ہر صاحب ِ اختیار یہ سمجھتاہے کہ دنیا میں اس سے زیادہ عقل مند ابھی تک کسی ماں نے جنا ہی نہیں حکمرانوں کی بات جھوڑیں ان کی تو دنیا ہی الگ ہے ۔
یہ بات ان کی سمجھ میں نہیں آ سکتی انہیں سمجھ کیونکر آئے گی کہ حکمران سمجھنا ہی نہیں چاہتے۔

جس طرح باتیں کرنا کچھ لوگوں کی عادت ہوتی ہے سفر یا ہو دفتر باتیں ختم ہونے کا نام ہی نہیں لیتیں حتیٰ کہ کسی جنازے میں شرکت کرنی ہو پھربھی زبان قینچی کی طرح چلتی ہے کسی طوررکتی ہی نہیں اس عادت سے پاس بیٹھنے والے خواہ کتنے ہی بیزار کیوں نہ ہوں،کوئی بیمار ہو،کسی کے سر میں دردہو یا ان کی نان سٹاپ باتیں سن سن کر سر میں درد ہونے لگے لگتاہے انہیں ذرا سا بھی احساس نہیں ہوتا کچھ لوگ دوسروں کی توجہ حاصل کرنے کے واسطے ایسا کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

آخرکوئی شرم ہوتی ہے کچھ حیا ہوتی ہے ۔
 باتیں توحکمران بھی کمال کی کرتے ہیں دنیا میں شاید سب سے زیادہ جھوٹے سیاست میں پائے جاتے ہیں ۔۔ بات ہورہی تھی تاریخ میں زندہ رہنے کیلئے ایک حوالہ ہی کافی ہوتاہے ہم نے بیشترحکمران اس خبط میں مبتلا دیکھے ہیں کہ ان کے ناموں کی تختیاں پورے ملک کے گلی گلی محلے محلہ لگی ہوں یہ الگ بات ان کی اس معصوم سی خواہش کے نتیجہ میں بے شک ملکی معیشت کا دھڑن تختہ ہوجائے کوئی مضائقہ نہیں کتنے ہی شعر ایسے ہیں جو ضرب المثل بن گئے اکثر باخبر لوگ بھی شاعرکا نام نہیں جانتے 
دل کے پھپھولے جل اٹھے سینے کے داغ سے
اس گھرکو آگ لگ گئی گھرکے چراغ سے
یہ شعر بہت سوں نے سنا یا پڑھا ہوگا بلکہ عاشورہ ٴ محرم میں کیا مولانا کیا ذاکرحضرات اکثر پڑھتے ہیں آپ بھی سنئے
قتل ِ حسین اصل میں مرگ یزیدہے 
اسلام زندہ ہوتاہے ہر کربلا کے بعد 
یہ شعر تحریک ِ پاکستان کی ایک معروف شخصیت کاہے بہت کم لوگ ان کو بطور ِ شاعر جانتے ہیں۔

وہ ہیں مولانا محمدعلی جوہر۔یہ شعراتنا مشہورہے کہ کسی بھاری بھرکم دیوان سے بھی بھاری ہے اس میں کوئی شک نہیں بحیثیت شاعرمولانا محمدعلی جوہر کو یہ شعرتاقیامت زندہ رکھے گا۔ اسی طرح بر ِصغیرکو دہلی سے پشاور تک ملانے والی اکلوتی شاہراہ جنرنیلی سڑک کا تحفہ دینے والے” شیرشاہ سوری“کانام اس جی ٹی روڈنے ہمیشہ ہمیشہ کے لئے زندہ جاوید بنادیا آج بھی جب کوئی حکمران سڑکیں تعمیرکرواتاہے یار لوگ خوشامدکے لئے اسے شیرشاہ سوری ثانی کا خطاب دے کر بینر لگوادیتے ہیں اور چمچے کڑچھے قسم کے ورکر اسی پر اتراتے پھرتے ہیں سابقہ حکومتوں تو ایک طرف دور ِ حاضر میں بھی ایسے نمائشی منصوبے تیارکئے جارہے ہیں جن کا مقصد ستائش کے سوا کچھ نہیں غربت کے خاتمہ کیلئے الگ وزارت بنانے کی بجائے اگر غربت کے خاتمہ کے حقیقی اسباب کی جانب توجہ دی جاتی تو اس سے بہتوں کافائدہ ہو سکتا تھا اس وقت موجودہ حکومت کیلئے بہتر تھا وہ دو کاموں کیلئے اپنی تمام تر توانائیاں صرف کردیتی ۔

ایک معیشت کی بحالی کیلئے پاکستانی کرنسی کی دن بہ دن گرتی ہوئی قدر، ڈالرکی اڑان اور اشیائے ضرورت کی مسلسل بڑھتی ہوئی قیمتیں کو کنٹرول کرنے کیلئے ٹھوس اقدامات دوسری نئے آبی ذخائرکا قیام، بجلی اور سوئی گیس کی لوڈشیڈنگ،اووربلنگ کے خاتمہ کیلئے حکمت ِ عملی تیارکی جاتی اب تک تو تحریک ٍ انصاف کی حکومت کا سارا زور قرضوں کے حصول کیلئے منت ترلوں پر صرف ہورہاہے۔

 میاں نوازشریف دور میں پاکستان سٹیل ملز،پی آئی اے سمیت درجنوں ادارے اس لئے فروخت کئے جارہے تھے کہ وہ قومی خزانے پر بوجھ ہیں جبکہ میٹرو بس،اورنج لائن ٹرین منصوبوں کو قومی خزانے سے ہر سال اربوں روپے کی سبسٹڈی دی جارہی ہے بلاشبہ انہوں نے یہ پاکستان پر بہت بڑا ظلم کیاہے ہم ان منصوبوں کے مخالف نہیں ہیں ملک کو عصر ِ حاضر کے تقاضوں کے مطابق ہم آہنگ کرنے کے لئے ایسے منصوبوں کی اشد ضرورت ہوتی ہے لیکن ملک و قوم کے لئے ترجیحات کا تعین کرنا حکومت کی اولین ضرورت ہے کون نہیں جانتاملک کا سب سے بڑا مسئلہ بجلی کا بحران ہے ۔

لوڈشیڈنگ نے معیشت کو تباہ کرکے رکھ دیاہے کسی حکمران نے اس طرف توجہ نہیں دی موجودہ حکومت بھی اپنے پیش رو کے نقش ِ قدم پرچلنا فخر سمجھتی ہے اس لئے محض واہ واہ کیلئے نمائشی کام کئے جارہے ہیں۔
 سابقہ پنجاب حکومت نے دانش سکول پراجیکٹ شروع کیاجس پر اربوں روپے خرچ کئے گئے بچوں کی بہتر تعلیم کیلئے ایسے سکول قائم کئے جانا ضروری ہیں اڈیٹر جنرل کی ایک رپورٹ میں کہا گیاہے اس میں بھی اربوں کی کرپشن کی گئی ہے ۔

ایک طرف دانش سکول تو دوسری طرف سرکاری سکولوں کی حالت ِ زار سب پر عیاں ہے لاہورکے مضافاتی علاقوں میں بااثر لوگوں نے سرکاری سکولوں پر قبضہ کررکھاہے جہاں بیشتر گورنمنٹ تعلیمی ادارے جانوروں کے اصطبل بنے ہوئے ہیں ۔بچوں کو بنیادی سہولیات بھی میسر نہیں ہیں اگر لاہورکے مضافاتی علاقوں کا یہ عالم ہے تو دور دراز کے شہروں میں کیا ”قیامت“ ہوگی اس کا اندازہ بھی نہیں لگایا جا سکتا پرائیویٹ سیکٹر ایجوکیشن کے شعبہ میں سرمایہ کاری نہ کرتا تو آج 5 کروڑ بچے گلیوں میں آوارہ پھررہے ہوتے یا دکانوں ورکشاپوں میں چھوٹے موٹے کام کررہے ہوتے آج بھی اڑھائی کروڑ بچے سکول نہیں جاتے شنیدہے ۔

ماضی کے خادم ِ اعلیٰ اپنا ہیلی کاپٹرکسی بھٹہ خشت کے نزدیک کھیتوں میں لینڈ کرتے مٹی سے اٹے کسی بچے کو گود میں اٹھا کر یہ سمجھنے لگ جاتے کہ اب ہر بچہ سکول جانے لگاہے پھر ان کی تصویریں میڈیا پر بڑی دلکش انداز میں پیش کی جاتیں جناب قوم کو ان نمائشی کاموں کی ضرورت نہیں تھی ۔عمران خان کی حکومت کو بھی جان لینا چاہیے کہ بچے صرف بھٹہ خشت پرہی مزدوری نہیں کرتے پنجاب کے دارالحکومت لاہورمیں اس وقت بھی لاکھوں بچے مزدوری کررہے ہیں صوبے کے مضافاتی اور دور دراز کے علاقوں میں تو بچوں کی حالت مزید ابتر ہے حکومت کو ان کا خیال کیوں نہیں آتا۔

ان کی ایجوکیشن کے لئے ہنگامی بنیادوں پر کام کیوں نہیں ہورہا۔
 حال ہی میں حکومت نے ایک صحت کارڈ جاری کیاہے جس پر غریبوں کا علاج مفت ہونے کی نوید سنائی گئی ہے ۔کوئی ہے جو حکمرانوں سے پوچھنے کی جرأت کرے ۔ جناب صرف صحت کارڈ کے حامل لوگ ہی بیمار ہوتے ہیں کیا؟ملک کے دوسرے کروڑوں افرادکا کیا قصورہے کیا انہیں علاج معالجہ کی ضرورت نہیں ہے ۔

محترم وزیر ِ اعظم جان کی امان پائیں تو عرض کرتاہے یہ نمائشی کام چھوڑئیے وہ اقدامات کریں جس کا فائدہ پوری قوم ہو کیا آپ کو معلوم نہیں سرکاری ہسپتالوں میں ایک ایک بیڈپر چار چار مریض زیر ِ علاج ہیں کہیں ڈاکٹر نہیں کہیں ادویات ناپید۔سہولیات نہ ہونے کی وجہ سے روزانہ درجنوں مریض دم توڑ جاتے ہیں صرف چلڈرن ہسپتال میں ویٹی لیٹرنہ ہونے کے سبب نہ جانے کتنے بچے جاں بحق ہوچکے ہیں متعدد شہروں میں ایسے کئی واقعات ہو چکے ہیں یہ سہولیات کی فراہمی کیا حکومت کی ذمہ داری نہیں؟ جتنی رقم حکمرانوں نے میڈیا میں تشہیرکیلئے اشتہارات پر خرچ کی ہے اس سے ہزاروں مریضوں کا علاج ہو سکتا تھا ۔

شایدحکمران نہیں جاننا چاہتے تاریخ میں زندہ رہنے کیلئے ایک حوالہ ہی کافی ہوتاہے صحت کارڈ،بے نظیرانکم سپورٹ پروگرام،سستی روٹی سکیم،پیلی ٹیکسی، مالٹاٹرین،میٹروبس جیسے منصوبوں کا ایک پہلویہ بھی ہے کہ قطاردر قطاریں لوگوں کو دیکھ کر شاید حکمرانوں کی انا کو تسکین ہوتی ہو۔بھوک سی بلکتی عوام۔غربت کے ہاتھوں مجبورہوکر اپنی اولادکوقتل کرنے والے۔

بازاروں میں اپنے لخت ِ جگربیچنے والے۔ مسائل کے حل کی خاطرسرکاری دفاترمیں ذلیل ہونے والے پاپھر انصاف کیلئے تھانوں، کچہریوں اور عدالتوں میں خوارہونے والے، روٹی کے لقمے لقمے کو ترستے ،مہنگائی کے مارے اور بیروزگار بھی پاکستان کے شہری ہیں ان کیلئے کچھ کیجئے یہ لوگ اصل پاکستان ہیں اصلی پاکستانی ہیں تمام وسائل عام آدمی کی حالت بہتر بنانے کیلئے وقف کردئیے جائیں تو پھر ملک ترقی کرے گا جہاں پینے کا صاف پانی میسرنہ ہو۔

5 کروڑ بچے سکول نہ جاتے ہوں۔جس ملک میں انصاف بھی نہ ملتاہو وہاں میٹرو بس،اورنج لائن ٹرین جیسے منصوبے ایسے ہی ہیں جیسے بچے فاقے کررہے ہوں اور گھرکا سربراہ قسطوں پر کارلے آئے۔
بلند وبانگ دعوے چھوڑئیے عوام کی حالت اور ملکی حالات بہتربنانے کیلئے کچھ کرگذرئیے گا،گے ،گی نہیں عملی اقدامات کیجئے لمبی چوڑی باتیں نہ کریں عوام کو سبزباغ نہ دکھائیں ۔

اللہ کا نام لے کر مرحلہ وارہی سہی کچھ تو کریں ترجیحات کا تعین کیجئے ایک کے بعد ایک محکمہ ۔ ایک کے بعد ایک ادارہ ماڈل بناکر مثال قائم کردیں ورنہ سب اقدامات ہاتھی کے دانت جیسے ہیں جس کے متعلق ہے دکھائے کیلئے اور اور کھانے کیلئے اور ہوتے ہیں یادرکھیں تاریخ میں زندہ رہنے کیلئے ایک حوالہ ہی کافی ہوتاہے لیکن یہ بات آج تک کسی کی سمجھ میں نہیں آئی ہر اختیاروالا یہ سمجھتاہے کہ دنیا میں اس سے زیادہ عقل مند ابھی تک کسی ماں نے جنا ہی نہیں حکمرانوں کی بات جھوڑیں ان کی تو دنیا ہی الگ ہے۔

یہ بات ان کی سمجھ میں نہیں آ سکتی انہیں سمجھ کیونکر آئے گی کہ حکمران سمجھنا ہی نہیں چاہتے قوم کو عمران خان سے بہت امیدیں وابستہ ہیں کیا وہ امیدیں پوری ہوں گی ہر پاکستانی یہی سوچ رہاہے خداکرے عمران خان کچھ کرکے دکھائیں امیدوں کے چراغ پھر سے روشن ہورہے ہیں ہر محب ِوطن کی دلی دعاہے پاکستان کا مستقبل درخشندہ و تاباں ہو جائے ایساہوگیا تو تحریک ِپاکستان کے شہیدوں کی روحوں کو قرار آجائے گا۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Hathi Ke Daant Column By M Sarwar Siddiqui, the column was published on 06 April 2019. M Sarwar Siddiqui has written 8 columns on Urdu Point. Read all columns written by M Sarwar Siddiqui on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.