’جہانگیر ترین گروپ کے لوگوں نے سینیٹ الیکشن میں مجھے ووٹ دیے‘ یوسف رضا گیلانی کا انکشاف

جہانگیر ترین کے اپنی پارٹی کے ساتھ معاملات ٹھیک ہو جائیں گے، پی ڈی ایم اب بھی متحد ہوسکتی ہے، مولانا فضل الرحمان پی ڈی ایم کے سربراہ ہیں، انہیں تمام پارٹیوں کو ساتھ لے کر چلنا چاہیے۔ رہنماء پیپلزپارٹی کی ٹی وی پروگرام میں گفتگو

Sajid Ali ساجد علی اتوار مئی 11:05

’جہانگیر ترین گروپ کے لوگوں نے سینیٹ الیکشن میں مجھے ووٹ دیے‘ یوسف ..
اسلام آباد ( اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار ۔ 9 مئی 2021ء ) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی نے انکشاف کیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے ہم خیال گروپ کے لوگوں نے سینیٹ الیکشن میں مجھے ووٹ دیے۔ تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جہانگیر ترین کے اپنی پارٹی کے ساتھ معاملات ٹھیک ہو جائیں گے۔

ایک سوال کے جواب میں یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ پی ڈی ایم اب بھی متحد ہوسکتی ہے، مولانا فضل الرحمان پی ڈی ایم کے سربراہ ہیں، انہیں تمام پارٹیوں کو ساتھ لے کر چلنا چاہیے ، بطور اپوزیشن ہماری کارکردگی بہت بہتر رہی ہے، اپوزیشن کو مل کر حکومت کے خلاف حکمت عملی بنانی چاہیئے کیوں کہ عوام اس وقت مشکل میں ہیں، جو کہ مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں اور آج اسی مہنگائی کی وجہ سے لوگ خود کشیاں کررہے ہیں۔

(جاری ہے)

پیپلپزارٹی کے رہنماء نے مزید کہا کہ مجھے چیئرمین سینیٹ بننے کی جلدی نہیں ہے، میرا سینیٹر بننا ہی پی ڈی ایم کی جیت ہے ، جب کہ گزشتہ سینیٹ الیکشن میں صادق سنجرانی کو الیکشن میں سپورٹ کرنے کا فیصلہ پارٹی کا تھا ، وہ میرے ساتھ بھی کام کرتے رہے ہیں۔ دوسری طرف سینئر تجزیہ کار ہارون رشید نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان سے جہانگیر ترین کی خفیہ ملاقات ہوئی ہے ، معاملات اسی ملاقات میں حل ہوئے ہیں ، میں نے کہا تھا کہ صلح ہوجائے گی اور بجٹ منظور ہوگا ، جہانگیر ترین کو گروپ کی وجہ سے کامیابی حاصل ہوئی ، ن لیگ، پیپلز پارٹی اور اسٹیبلشمنٹ نہیں چاہیں گے کہ ترین گروپ انٹیکٹ رہے تاکہ عمران خان کو پریشرائز کیا جا سکے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ شوکت ترین کے پاس معاشی ترقی کا نسخہ کیا ہے۔پاکستان میں وزیر خزانہ کی مہلت ہی ڈیڑھ سال ہوتی ہے ، بجٹ سے پہلے کچھ نہیں ہوگا بجٹ کے بعد کھیل شروع ہوگا ، کورونا میں الیکشن جلدی کیسے ہو سکتا ، انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کا خطاب سفیروں سے نہیں اوورسیز پاکستانیوں سے تھا، بھارت کے معاملے پر عمران خان کہتے ہیں کہ دفعہ 370 واپس لیں لیکن اسٹیبلشمنٹ کہتی ہے کہ 35 واپس لیں۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments