جمہوریت اور موروثی سیاسی نظام؟

جمعہ اگست

Rao Ghulam Mustafa

راؤ غلام مصطفی

ملکی سیاست ابھی تک عام آدمی کو انسانی بنیادی حقوق فراہم کرنے میں ناکام ہے ملک میں سیاسی و آمریتی ادوار کا جائزہ لے لیں اکہتر برس کی مسافت طے کرنیوالے پاکستان کے عوام کی حیثیت حکمرانوں کی نظر میں صرف ایک ووٹرز سے زیادہ نہیں رہی اسی لئے عوام ملک میں بننے والی ہر حکومت کے کچھ عرصہ بعد ہی انکی طرز حکمرانی سے بیزار ہو جاتی ہے۔یہ بڑی دلدوز حقیقت ہے کہ موروثی و روایتی سیاست نے اس ملک کی عوام کو ایسے مہلک مسائل کے سپرد کردیا جو ان کی پشت پر مسلسل کوڑے کی صورت برس رہے ہیں۔


اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ ملک میں چند ایسے خاندان موجود ہیں جن کی قومی سیاست اور ملکی وسائل پر اجارہ داری قائم ہے ملک میں جاگیردارانہ‘ سرمایہ درارانہ نظام نے اپنی جڑیں اس حد تک مضبوط کر لی ہیں جن کو کریدنے کے لئے طویل عرصہ درکارہے کیونکہ اس نظام نے جس موروثی سیاست کی بنیاد رکھ دی ہے اس کی اجارہ داری ممبران قومی و صوبائی اسمبلی تک محدود نہیں بلکہ مقامی حکومتیں بھی اس نظام کے زیر اثر ہیں۔

(جاری ہے)

پاکستان میں موروثی سیاست کا اندازہ آپ اس رپورٹ سے لگا سکتے ہیں جس کے مطابق 1996ء امریکی کانگریس میں موروثی سیاست کا حصہ تقریبا چھ فیصد تھا جبکہ بھارت کی لوک سبھا میں 2010ء تک اٹھائیس فیصد رہا اور پاکستان کے قومی و صوبائی اسمبلیوں میں موروثی سیاست کا حصہ 53فیصد سے بھی زائد ہے کسی بھی جمہوری معاشرے میں موروثی سیاست کی یہ شرح ناقابل قبول ہے۔

جنرل ضیاء کے غیر جماعتی انتخابات کو سامنے رکھ لیں ان انتخابات میں جو چہرے منتخب ہو کر آئے انہوں نے ہی سیاست پر اپنی اجارہ داریاں قائم کر لیں جس کے باعث موروثی سیاست نے سیاسی نظام کو مفلوج کر کے رکھ دیااور اس نظام کی بنیاد جاگیر دار خاندانوں نے رکھی اور اس کو مزید سرمایہ دار سوچ کی کوکھ سے جنم لینے والے سیاستدانوں نے جلا بخشی جب سیاست میں دولت کا عنصر غالب آیا تو جاگیردار اور سرمایہ دار کے لئے پاکستان کی سیاست نے کاروبار کا روپ دھار لیا۔

روزا بروکس اپنی کتاب A Dynasty is not Democraceyمیں لکھتی ہیں موروثی سیاست یا قیادت کو بدلنے کے لئے ضروری ہے کہ ایک غیر جانبدار عدالتی نظام حکومتوں کی کارکردگی کی نگرانی کرے جب کہ ایک طاقتور الیکشن کمیشن انتخابی نظام کی سخت نگرانی کرے ۔اس کے علاؤہ اگر حکومت معاشرے میں دولت اور وسائل کی منصفانہ تقسیم کو عملی شکل دے تو تب بھی یہ موروثی نظام کمزور پڑ سکتا ہے۔

پاکستان کی سیاسی تاریخ اس بات کی غماز ہے کہ خاندانوں کی سیاست اس حد تک اپنی جڑیں مضبوط کر چکی ہے کہ وہی آزمودہ چہرے وفاداریاں بدل کر ہر نئی بننے والی حکومتوں کا حصہ ہوتے ہیں اور حکومتوں میں رہ کر اپنے مفادات اور اقتدار کے تحفظ کو یقینی بناتے ہیں۔
پاکستان کے سیاسی نظام کا اگر جائزہ لیا جائے تو موجودہ سیاسی نظام نظریاتی اساس پر قائم نہیں جس کی وجہ عوام کبھی متحد نہ ہو سکی سیاستدانوں نے نظریہ ضرورت کے تحت مختلف بیانیوں میں عوام کو تقسیم کر کے ہمیشہ اپنے اقتدار اور سیاسی و ذاتی مفادات کا تحفظ کیاجس کے باعث اس سیاسی نظام پر عوام کا عدم اعتماد بڑھتا جا رہا ہے۔

المیہ یہ ہے کہ سات دہائیاں گذر جانے کے باوجود اسلامی جمہوریہ پاکستان کی سیاسی قیادت عوام کو جمہوری ثمرات سے فیض یاب نہیں کر سکی اقوام متحدہ کے چارٹر آئین پاکستان میں یہ آرٹیکل موجود ہے کہ روٹی‘کپڑا‘مکان‘تعلیم اور صحت کی سہولیات عام فرد کو بہم پہنچانا ریاست کی ذمہ داری میں شامل ہے لیکن بنیادی انسانی حقوق کا یہ آرٹیکل آج تک معطل ہے ہمیشہ سیاستدانوں نے نعروں‘وعدوں اور اعلانات کے بل بوتے پر اس عوام کے بنیادی حقوق پر شب خون مارا پاکستان کی سیاسی تاریخ اس بات کی غماز ہے انسانی بنیادی حقوق‘وسائل اور اختیارات نے ہمیشہ ملک میں موجود سیاسی اشرافیہ کے در کا ہی طواف کیا اور عام فرد مسائل کی عمیق دلدل میں دھنستا چلا گیا۔

ملکی سیاست نسل نو کو سیاسی شعور سے آگاہی دینے کی بجائے غلامانہ سوچ کو پروان چڑھا کر آمرانہ جمہوریت کو فروغ دے رہی ہے کسی بھی سیاسی جماعت کے تنظیمی نظام پر نظر دوڑا لیں کسی سیاسی جماعت کے اندر ایسا ادارہ موجود نہیں جو کارکنان کی سیاسی شعور کی پختگی کے لئے کام کرتا ہو صرف ملک میں ایک سیاسی جماعت ‘جماعت اسلامی ہے جو اپنے اندر ایک جمہوری نظام رکھتی ہے۔

موجودہ سیاسی نظام عوام کو فیصلہ سازی سے یکسر محروم رکھے ہوئے ہے جس کے باعث عوام تقسیم ہو کر رہ گئی ہے اور یہی وجہ ہے کہ عوامی خواہشات کے مطابق کبھی اس ملک میں فیصلے نہیں کئے جاتے اور حکومتی ایوانوں میں بیٹھے اقتداری طبقات نے ہمیشہ مفاد عامہ کے بر عکس فیصلے کر کے عام آدمی کو مزیدمسائل کے گرداب میں دھکیل دیا۔پاکستان کا سیاسی نظام موروثیت کی گرہ سے بندھا ہوا ہے چند جاگیر دار اور سرمایہ دار خاندان ملکی سیاست پر قابض چلے آرہے ہیں جو انسانی بنیادی حقوق سے محروم رکھ کر عوام کا استحصال کررہے ہیں۔

اس ملک میں ایسے سیاسی نظام کی ضرورت ہے جس کی نظریاتی اساس عوام کو طاقت کا سر چشمہ تسلیم کرتے ہوئے انسانی بنیادی حقوق بہم پہنچائے اگر موجودہ نظام میں عوام کی امنگوں کے مطابق اصلاحات نہ لائی گئیں تو یہ نظام ہماری آنیوالی نسل نو کو غلامانہ سوچ کی زنجیر میں تو جکڑ سکتا ہے لیکن اسے جمہوری ثمرات سے محروم رکھتے ہوئے مہذب معاشرے کا فرد نہیں بنا سکتا۔

سیاسی نظام سیاسی موروثیت کے باعث عمل اور کردار کی کسوٹی پر پورا نہیں اترتاصرف مفاداتی سیاست ملکی سیاستدانوں کا وطیرہ رہی ہے جس کے باعث ملک میں جمہوری اقدار و روایات زوال پذیر ہیں ۔ملک پاکستان میں سیاسی اشرافیہ نے مغرب سے جمہوریت کا لفظ لے کر اس کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کا نام تو دے دیا لیکن بد قسمتی سے مغربی جمہوریت کو تقلید کا عملی جامہ نہ پہنا سکے دولت اور وسائل کی غیر منصفانہ تقسیم کے باعث ملک کا امیر‘امیر تر اور غریب‘غریب تر ہوتا چلا گیا۔

یقیننا اس موجودہ سیاسی جمہوری نظام کے ہوتے ہوئے ہماری نئی نسل پر خوشگوار اثرات مرتب نہیں ہو نگے مند اقتدار پر براجمان ہونے کے لئے سیاستدانوں میں حرص و لالچ کی جنگ اگر اسی طرح جاری رہی تو ملک میں جمہوری اقدار و روایات کے زوال کو کوئی نہیں روک سکتا ۔ملکی طرز سیاست کے باعث معاشرے میں افراتفری اور بے یقینی کی فضا قائم ہو چکی ہے اور ایسی صورتحال کسی بھی ملک و معاشرے کی ترقی و خوشحالی کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہوتی ہے ۔

ملک کا سیاسی نظام بہت بڑے آپریشن کا متقاضی ہے نظریہ ضرورت کے تحت ٹیسٹ ٹیوب سیاست نے سیاسی اشرافیہ کے مفادات کا تو تحفظ کیا لیکن عوام کے حصہ میں کچھ نہیں آیایہ ایک ایسا سیاسی نظام ہے جس میں عوام کے لئے کچھ نہیں اس لئے نظام کے از سر نو جائزہ لینے کی اشد ضرورت ہے جمہوریت کے صحیح معنوں میں ثمرات عام آدمی کی دہلیز اسی صورت پار کر سکتے ہیں جب سیاسی و جموری نظام کو مفاد عامہ کے تحت ترتیب دیکر عملانافذ کیا جائے گا ۔اگر موجودہ سیاسی و جمہوری نظام کو عوامی امنگوں کا ترجمان نہ بنایا گیا تو عوام کی خواہشات سرمایہ دارانہ اور جاگیردارانہ موروثی سیاست پر قربان ہوتی رہیں گی اور یہ ملک و ملت نام نہاد جمہوریت کا خراج تاوان سمیت ادا کرتی رہے گی۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Jamhuriat Aur Moorosi Siyasi Nizaam? Column By Rao Ghulam Mustafa, the column was published on 23 August 2019. Rao Ghulam Mustafa has written 35 columns on Urdu Point. Read all columns written by Rao Ghulam Mustafa on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.