ونیزویلا میں افراط زر کی شرح بڑھ کر ریکارڈ 130,000 فیصد پر

کراکس (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 25 جون2019ء) ونیزویلا میں گزشتہ سال کے آخر تک افراط زر کی شرح بڑھ کر ریکارڈ 130,000 فیصد پر آگئی جبکہ اس کی بحران کا شکار معشیت نصف تک سکڑ گئی ہے۔ونیزویلا کے سنٹرل نؤبینک سے جاری ایک رپورٹ کے مطابق ملک میں گزشتہ سال کے آخر تک افراط زر کی شرح 8 گنا تک بڑھ کر ریکارڈ 130,000 فیصد پر آگئی جس کی وجہ سے ایک عام فرد کے لئے زندہ رہنے کے لئے بنیادی ضرورتوں کی خریداری ناممکن ہو چکی ہے۔

(جاری ہے)

عالمی ادارہ مالیات(آئی ایم ایف)کے مطابق رواں سال 2019کے آخر تک ویزویلا میں افراط زر کی شرح میں 10ملین فیصد اضافہ ہو سکتا ہے۔ویزویلین سنٹرل بینک نے کہا ہے کہ ملک میں سیاسی اور اقتصادی بحران کے باعث تیل کی برآمدات جس پر ملک کی کل آمدنی کا 96 فیصد کا انحصار ہے، کم ہو کر 2018میں 29.8 بلین ڈالر پر آگئی ہے،2014 میں یہ آمدنی 71.7 بلین ڈالر پر تھی۔انھوں نے بتایا کہ گزشتہ ماہ اپریل میں ونیزویلا میں تیل کی پیداوار 1.03 ملین بیرل یومیہ شمار کی گئی جو کہ ایک دہائی قبل تک 3.2ملین بیرل یومیہ پر تھی۔

Your Thoughts and Comments