صدر ، وزیراعظم آرمی چیف سمیت سیاسی و عسکری رہنمائوں کی احسن اقبال پر فائرنگ کی مذمت

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے آئی جی پنجاب سے رپورٹ طلب کر لی

اتوار مئی 21:40

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 06 مئی2018ء) صدر ممنون حسین اور وزیراعظم شاہد خاقان عباسی،، آرمی چیف جنر قمر جاوید باجوہ سمیت سیاسی وعسکری رہنمائوں نے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کی ہے۔۔صدر مملکت ممنون حسین نے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ عدم برداشت معاشرے کے لیے زہر قاتل اور استحکام کی راہ میں بڑی رکاوٹ ہے۔

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے وزیر داخلہ پر فائرنگ کے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے آئی جی پنجاب سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ((آئی ایس پی آر))کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر فائرنگ کی مذمت کی ہے ۔آر می چیف نے وزیرداخلہ کیلئے نیک خواہشات کا اظہار کیا اور جلد صحت یابی کے لئے دعا کی۔

(جاری ہے)

پاک بحریہ کے سربراہ ایڈ مرل ظفر محمود عباسی نے وزیرداخلہ احسن اقبال پر قاتلانہ حملے کی مذمت کرتے ہوئے کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ تعالیٰ احسن اقبال کو جلد صحت یابی عطاء فرمائے ۔ترجمان پاک بحریہ کے مطابق ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے کہا کہ وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملہ قابل مذمت ہے اور ہم ان کی جلد صحت یابی کیلئے دعا گو ہیں ۔اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی نے بھی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی سخت مذمت کی۔

وزیراعلی پنجاب شہباز شریف نے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے ٹیلی فون پر رابطہ کر کے ان کی خیریت دریافت کی۔انہوں نے کہا کہ میں ذاتی طور پر تحقیقات کا جائزہ لے رہا ہوں، ذمہ داران قانون کے تحت سزا سے نہیں بچ پائیں گے۔سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز نے بھی احسن اقبال کی جلد صحتیابی کے لیے دعا کی۔۔مریم نواز نے سوشل میڈیا پر جاری اپنے بیان میں کہا کہ یہ ملک ہمارا ہے اور اس میں بگاڑ پیدا کرنے والی قوتوں کا محاسبہ کرنا ہو گا۔

سابق صدر آصف زرداری نے احسن اقبال پر فائرنگ کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر داخلہ پر حملہ تشویش ناک ہے، ایسے واقعات کو روکنا ہو گا۔قائد حزب اختلاف خورشید شاہ نے داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر داخلہ پر حملہ ملکی سیکیورٹی پر بڑا سوالیہ نشان ہے، اس کی تحقیقات ہونی چاہئیں۔۔خورشید شاہ نے کہا کہ الیکشن سے قبل سیکیورٹی کے لیے جامع حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہے۔

سینیٹ میں قائد حزب اختلاف سینیٹر شیری رحمان نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی پوری قیادت احسن اقبال پر حملے کی مذمت کرتی ہے۔امیر جماعت سراج الحق نے وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے اسے انتہائی بزدلانہ کارروائی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ حملہ کے پس پردہ عزائم بے نقاب ہونے چاہئیں۔چیئرمین تحریک انصاف عمران خان،، جہانگیر خان ترین،، اسد عمر اور چوہدری سرور نے بھی احسن اقبال پر حملے کی شدید مذمت کی۔

ترجمان تحریک انصاف فواد چوہدری نے بھی احسن اقبال پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر داخلہ کی سلامتی و مکمل صحتیابی کے لیے دعاگو ہیں۔فواد چوہدری نے کہا کہ واقعے کی تحقیقات کی جائیں اور ذمہ داروں کو کٹہرے میں لایا جائے۔رہنما تحریک انصاف عثمان ڈار نے احسن اقبال کے ساتھ پیش آنے والے واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ معاشرے میں عدم برداشت کا ایسا رجحان خطرناک ہے۔

وزیر اعلی گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمان اور وزیر داخلہ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے بھی وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کی۔وزیر اعلی گلگت بلتستان نے وزیر داخلہ کی جلد صحت یابی کے لیے دعا کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی ترقی اور استحکام کیخلاف سازشیں کامیاب نہیں ہوں گی۔سربراہ ایم ایم اے مولانا فضل الرحمان، سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی لیاقت بلوچ،، وزیر اطلاعات سندھ ناصر حسین شاہ، پاک سر زمین پارٹی کے جنرل سیکریٹری رضا ہارون نے بھی وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملے کی مذمت کی۔