اینٹی منی لانڈرنگ بل،اپوزیشن کی بلبلاہٹ اور حکومت کی چالاکی

ہفتہ ستمبر

Murad Ali Shahid

مراد علی شاہد

گذشتہ روز حکومت پاکستان نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں انٹی منی لانڈرنگ بل اکثریت کے ساتھ منظور کروا لیا۔اس بل کی پارلیمنٹ سے منظوری دراصل حکومت کی مجبوری تھی کہ اقوام متحدہ کے ادارے FATF نے پاکستان کو اپنی گرے لسٹ میں ڈال رکھا تھا۔جس سے نکلنا پاکستان کو ہر حال میں ممکن اس لئے بنانا تھا کہ اگر پی ٹی آئی کی حکومت ایسا فعل نہ دکھاتی تو ہوسکتا ہے کہ ایف اے ٹی ایف اپنے آئندہ ہونے والے اجلاس میں پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال کر بلیک لسٹ میں شامل کر دیتا۔

جس کا سب سے بڑا نقصان تو یہ ہوتا کہ پاکستان کا منفی تاثر بین الاقوامی سطح پر پیش ہوتا اور دوسرا یہ کہ مختلف اداروں سے ملنے والی امداد بھی تعطل کا شکارہو سکتی تھی۔ایک لحاظ سے مجموعی طور پر بلیک لسٹ میں شامل کئے جانے سے پاکستان کو کافی عرصہ تک نقصان اٹھانا پڑتا۔

(جاری ہے)

اجلاس میں ہونے والے فیصلہ سے باخبر کرنے سے قبل میں چاہتا ہوں کہ اپنے قارئین کو ایف اے ٹی ایف کے بارے میں مختصر سا تعارف پیش کردوں تاکہ انہیں یہ جاننے میں آسانی ہو سکے کہ اگر ہم یہ تاثر دنیا کے سامنے پیش نہ کرتے تو ہمیں کیا نقصانات ہو سکتے تھے۔


ایف اے ٹی ایف کا قیام 1989 میں عمل میں آیا۔2019 تک اس تنظیم کے اراکین کی تعداد انتالیس تھی۔اس تنظیم کا مقصد دنیا میں مختلف ممالک کے درمیان ہونے والی معاشی برائی منی لانڈرنگ کی روک تھام ہے اور اسی بنا پر یہ تنظیم تعاون نہ کرنے والے ممالک کو بلیک لسٹ میں شامل کر دیتے ہیں اور جن ممالک کو زیر مشاہدہ رکھا ہوا ہوتا ہے انہیں گرے لسٹ میں رکھا جاتا ہے اور جس پر مکمل اعتماد ہو اسے وائٹ لسٹ میں شامل کردیا جاتا ہے تاکہ دنیا کے کم ا ز کم وہ ممالک جنہوں نے اس قانون پر دستخط کر رکھے ہیں اس ملک کے ساتھ مکمل تعاون کریں۔

اصل مسئلہ یہ ہے کہ اس تنظیم کو تعاون نہ کرنے والے ممالک کو بلیک لسٹ میں کیوں شامل کرنا پڑتا ہے۔اس کے لئے ہمیں دو دہائی پیچھے تاریخ کا مطالعہ کرنا ہوگا۔ہوا یوں کہ جب نائن الیون کا واقعہ پیش ہوا تو اقوام متحدہ کے ادارے سیکیورٹی کونسل نے دو قراردادیں منظور کیں ایک قرارداد1373جبکہ دوسری قرارداد1267 پاکستان نے ان دونوں قراردادوں پر دستخط کر رکھے ہیں،جس کا مطلب یہ ہے کہ اس تنظیم کے تمام قواعدوضوابط کاپابند رہنا پاکستان کا اخلاقی وقانونی فرض ہے۔

9/11 نے دراصل پوری دنیا کی فضا کو تبدیل کر دیا تھا خاص کر اس کا اثر پاکستان اور افغانستان پر بہت ہوا۔کیونکہ یہ وہ دور تھا جب پاکستان اور افغانستان پر بھی دہشت گردی کے سائے منڈلا رہے تھے تو ایسے میں پاکستان کا ان قراردادوں پر دستخط کرنا بنتا بھی تھا۔1267قرارداد میں دو شقیں تھیں جن پر ہر اس ملک نے عمل کرنا تھا جس نے ان اس قرارداد پہ دستخط کر رکھے تھے۔

ایک دہشت گردی کو فنڈز کی فراہمی اور دوسرا انٹی منی لانڈرنگ۔چونکہ ممبر ممالک پر ان کی پابندی لازم تھی تو پاکستان کو بھی ان دونوں برائیوں کی روک تھام میں ایف اے ٹی ایف کے ساتھ تعاون کرنا لازم تھا۔اور پاکستان نے ان دونوں پر عمل پیرائی کی بھی لیکن کیا ہوا کہ مختلف مسائل کی بنا پر منی لانڈرنگ کے قانون پر پابندی کا کام تھوڑاسست پڑ گیا،جس کی وجہ سے ایف اے ٹی ایف پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل کر رکھا تھا۔


مذکور دونوں باتوں پر عمل پیرائی کی بہت سی وجوہات تھیں جن میں سے چیدہ چیدہ کا تذکرہ کرنا ضروری ہے۔بیوروکریسی کا تعاون نہ کرنا۔سیاستدانوں کی من مانیاں،فیوڈلز اور وڈیروں کا پیسہ بیرون ملک غیر قانونی طریقے سے منتقل کرنا،منی لانڈرنگ کے لئے ایسے ہتھکنڈے استعمال کرنا کہ جس سے ملک کا وقار مجروح ہویعنی شوبز کی خواتین تک کو اس سلسلہ میں استعمال کیا گیا۔

لیکن قانون کی گرفت میں تو ہمیشہ کمزور ہی آیا کرتے ہیں جیسا کہ افلاطون نے کہا تھا کہ
”قانون کی نظر میں سب برابر ہیں یہ دنیا کا سب سے بڑا جھوٹ ہے۔قانون مکڑی کا وہ جالا ہے جس میں صرف کیڑے مکوڑے پھنستے ہیں لیکن بڑے جانور اس کو پھاڑ کر نکل جاتے ہیں“۔
چونکہ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی جانب سے گرے لسٹ میں شامل کیا ہو اتھا اور آئندہ اجلاس میں عین ممکن تھا کہ تعاون نہ کرنے والے ممالک کی لسٹ میں شامل کر کے پاکستان کو بلیک لسٹ میں ڈال دیا جاتا جس کا خدشہ بھی تھا۔

حکومت پاکستان نے اس سلسلہ میں حزب اختلاف سے استدعا کی کہ وہ ملکی وقار اور سالمیت کی خاطر ان کا ساتھ دے اور اسمبلی میں مذکور دونوں باتوں کیخلاف ایک بل پیش پاس کروا کے ایف اے ٹی ایف کو دکھایا جائے کہ ہمارا ملک اس سلسلہ میں قانون سازی کر رہا ہے اس لئے ہمیں گرے لسٹ سے نکال کر وائٹ لسٹ میں شامل کیا جائے لیکن حزب اختلاف نے ایسی شرائط رکھ دیں کہ جس سے صاف دکھائی دے رہا تھا کہ یہ بل حکومت پاکستان کبھی بھی پاس نہیں کرو ا پائے گی اور نتیجہ میں پاکستان کو بلیک لسٹ کر دیا جائے۔

ان شرائط کو اگر آپ بھی پڑھ لیں تو کانوں کو ہاتھ لگائیں گے کہ یہ کون سے محب وطن ہیں جو اپنی کرپشن کو لیگل کرنے کے جواز تلاش کر رہے ہیں جیسا کہ ایک ارب روپے سے کم کی کرپشن کے بارے میں کسی قسم کی کوئی جانچ پڑتال نی کی جائے یعنی کہ اسے جائز قرار دے دیا جائے،دوسری بات یہ کہ 99سے قبل کے تمام کیسز کو ختم کر دیا جائے اور تیسری اہم بات کہ کسی بھی سیاستدان کو پکڑا نہ جائے۔

اگر حکومت نہیں مانتی تو ان کے ساتھ تعاون نہ کیا جائے کہ ا یسا کرنے سے نہ صرف یہ کہ عمران حکومت کا خاتمہ ہو جائے گا بلکہ پاکستان کی معاشی مسائل بھی بڑھ جائیں گے۔عمران خان حکومت کو گرانے کے لئے ہی اس بل کو ایوان بالا میں دو بار مسترد بھی کیا گیا۔اور اپوزیشن کا خیال یہ تھا کہ اب اس بل کو منظور کروانا ناممکن ہوگا لیکن عمران خان نے ہوم ورک مکمل کیا ہوا تھا،اس نے پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلا یا اور اس میں اس بل کو منظوری کے لئے پیش کردیا جسے کہ اپوزیشن کی برتری کے باوجود منظور کر لیا گیا۔

اب جبکہ بل منظور ہو چکا ہے تو حزب اختلاف سیخ پا اور چیخیں مار رہی ہے کہ یہ بل دراصل اپوزیشن کے خلاف نہیں ہے بلکہ ملکی مفادات کے خلاف ہے۔ حزب اختلاف نہ صرف اس پر خوف زدہ ہے بلکہ بلبلا رہی ہے۔کیونکہ پی ٹی آئی تو پہلی مرتبہ حکومت میں آئی ہے جبکہ دونوں بڑی جماعتیں پیپلز پارٹی اور ن لیگ تو ایک سے زائد بار حکومت کر چکی ہیں اس لئے انٹی منی لانڈرنگ میں ان کے لوگوں کا نام خاص کر ان کے راہنماؤں کا نام زیادہ آنے کی توقعات ہیں۔یہی وجہ ہے کہ کل سے محلہ سے محلات تک اور دوکانوں سے ایوانوں تک اس بل کے بارے میں اپوزیشن کی بلبلاہٹ صاف سنائی دی جارہی ہے۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Anti Money Laundering Bill Column By Murad Ali Shahid, the column was published on 19 September 2020. Murad Ali Shahid has written 143 columns on Urdu Point. Read all columns written by Murad Ali Shahid on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.