ملالہ کی کتاب اور کہانی۔ قسط نمبر2

منگل 15 جون 2021

Mir Afsar Aman

میر افسر امان

 کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ ڈائری میں کچھ بھی تو انوکھا پہلو نہیں۔ پھر بھی پہلے اس ڈائری کے ذریعے ملالہ کو شہرت دلوائی گئی۔ پھر بچوں کی تعلیم کے حقوق پر بولنے کے نام پر ملالہ کو منظر عام پر لایا گیا۔ پھر اس کی سوچ کو طالبان کے مخالف کر دیا گیا۔ شورش زدہ علاقے میں لوگوں کو جان کی پڑی ہوتی ہے اور ملالہ آرام سے ڈائری لکھتی رہی۔

اصل میں یہ طے شدہ کھیل تھا جو کھیلا گیا۔ ملالہ یوسف زئی مہرے کے طور پر استعمال ہوئی۔ ایک کالم نگار جو شورش کے وقت سوات سے ایک ٹی وی چینل کو رپورٹس ارسال کرتا تھا۔ اس نے ملالہ کے متعلق اس طرح کہا ”میں نے سوات کوبہت قریب سے دیکھا ہے۔ میں ملالہ کے والد سے اس وقت سے ذاتی رابطے میں ہوا کرتا تھا جب پاکستان کے موجودہ یا بعض لبرل اسلام آباد کے کونوں میں دبکے ہوئے تھے۔

(جاری ہے)

ضیا الدین یوسف زئی کے تین کمروں کے اسکول اور خالی محلوں میں تفصیلی بات چیت کرتے ہوئے، یادھماکوں سے اڑتی ہوئی درسگاہوں کے ارد گردگھومتے ہوئے، سوات کے حالت کا تجزیہ کرتے ہو ئے جو اس وقت تک قائم رہا جب ملالہ حملے کا شکار نہیں ہوئی تھی مگر اس وقت میں نے ملالہ کو کہیں بھی نہ دیکھا“ یہ ایک صحافی طلاعت حسین کے ریماکس ہیں جو بہادر ملالہ کے لیے کہے گئے ہیں ۔

لگتا ہے کہ یہ دورانیا شورش کے دوران کچھ وقت کیلئے تھا۔ پھر یوسف زئی ملالہ کے ساتھ ایبٹ آباد چلا گیا تھا۔ ایک دوسرے سوات کے مقامی صحافی رپورٹ کرتے ہیں۔ سوات میں دہشت کے دور میں ملالہ اپنے والد کے ساتھ ایبٹ آباد میں مقیم تھی۔ سوات میں امن کے بعد واپس آئی تھی۔ جہاں تک ڈائریوں کا سوال ہے تو سوشل میڈیا پر سوال اٹھایا گیا ۲۰۰۹ء میں ملالہ صرف ۱۱/ سال کی تھی جب سوات آپریشن ہوا کیا۔

۱۱/ سال کی بچی ایسی ڈائری لکھ سکتی ہے؟ دراصل یہ بی بی سی اور جیونیوز کی تیار کردہ ڈائری جو پاکستان کو بدنام کرنے کے لیے تیار کی گئی تھی۔ ایک دوسرے صحافی نے اپنے کالم میں کہا کہ ملالہ تعلیم حاصل کرنا چاہتی تھی نا!اور طالبان اسے روکنا چاہتے تھے یا وہ طالبان کے خلاف تھی اور طالبان اسے مارنا چایتے تھے۔ مگر سوال اٰٹھتا ہے کہ سوات میں تو ہزاروں بچیاں تعلیم حاصل کررہی تھیں۔

طالبان نے انہیں کیوں نہ روکا؟ انہیں کیوں نہ مار ا؟ طالبان کے غلبے کے دور میں سوات میں کوئی پرائیویٹ اسکول نشانہ نہیں بنایا گیا۔نہ ہی کسی نجی اسکول کو بند کیا گیااور ملالہ تو اُس وقت اپنے باپ کے نجی اسکول میں پڑھتی تھی۔ اس سمیت ہزاروں بچیاں صبح نکلتیں اور دوپہر کو بعافیت گھر پہنچتی تھیں۔ پھر طالبان نے اس پر حملہ کیوں کیا؟ تجزیہ نگار نتیجہ اخذکرتے ہیں کہ ملالہ کوپہلے ڈائریوں کی وجہ سے مشہور کیا گیا۔

پھر حملے کا ڈرامہ رچایا گیا ۔ پھر ڈالر یافتہ پاکستانی میڈیا اور عالمی میڈیا نے اس ڈرامے میں رنگ بھرا ۔تجزیہ نگار کہتے ہیں طالبان نے صرف سرکاری اسکولوں کو اُڑایا تھا۔ وجہ یہ تھی فوج نے سرکاری اسکوں میں اپنے کیمپ قائم کرتی تھی۔ اس لیے طالبان ان کو اُڑاتے تھے۔ کیونکہ فوج ان کے خلاف آپریشن کر رہی تھی۔ تاکہ اسے سوات میں ٹکانے نہ ملیں۔

جبکہ پاکستانی میڈیا اور مغربی میڈیا پروپگنڈہ کرتا رہا کہ طالبان بچیوں کے اسکولوں کو اُڑاتے ہیں ۔ اس ڈرامے کو رچانے کے لیے تمام شعبہ ہائے زندگی سے میر جعفر اور میر صادق خریدے گئے۔ پہلے مرحلے میں نام نہاد حملے کا ڈرامہ کیا گیا۔ دوسرے مرحلے میں ہمارے ملک کے دجالی میڈیا نے اس ڈرامے کی خوب مارکیٹنگ کی۔ اس میں پیش پیش ایک بڑے ٹی وی کے اینکر پرسن حامد میر اور عالم آن لائن(جاعل آن لائن) کے پروگرامر نے پشاور میں ملٹری ہسپتال کے باہر بچیوں کو جمع کر کے ملالہ کے لیے دعائیہ پروگرام کیا تھا۔

عوام کو یاد ہے کہ اخبارات میں خبر لگی تھی کہ ملالہ کو ایک گولی سر میں لگی۔ ایک گولی گردن میں لگی۔ اس مصنوعی حملے اور گولیوں کا ڈراپ سین اس وقت سامنے آیا۔ جب پشاور کی ملٹری ہسپتال میں علاج کیا گیا ۔پھر کہا گیا پاکستان میں علاج ممکن نہیں۔پھر اسپیشل ایئر ایمبولنس سے ملالہ کو برطانیہ اس ڈرامے کے بڑے کرداروں کے پاس پہنچا دیا گیا۔ تاکہ راز فاش نہ ہو سکے انگلستان کی ہسپتال میں ملالہ کی سر سے گولی بھی نہیں نکالی گئی۔

نہ اس کے سر سے بال کاٹے گئے نہ کہیں ماتھے پرزخم کے نشان نظر آئے۔اور ملالہ ٹھیک صحت مند ہو گئی۔ اس دوران سوشل میڈیا نے اس ڈرامے کا بھانڈا پھوڑ دیا۔ اور ملالہ کی صاف ستھرے چہرے والی تصویرں جاری کر دیں۔ اور پورے ملک میں سازش بے نقاب ہو گئی۔اس ڈرامے کا نقشہ ایک کالم نگار نے اس طرح کھنچا” کہاں کل تک برطانوی ڈاکڑوں کی یہ خبر کہ ماتھے پر گولی لگی ہے کھوپڑی کی ہڈیاں ٹوٹ گئی ہیں دماغ نیم مردہ ہے اور برطانوی ڈاکڑوں نے تو یہ بھی کہا کہ علاج سے پہلے کچھ دن کا آرام مطلوب ہے اور کہاں یہ صورتحال کہ ملالہ کا علاج شروع بھی نہیں ہوا اور ماتھے سے گولی کا زخم اور نشان غائب ہو گیا۔

ہسپتال ہے یہ کوئی جادو کا گھر ہے؟“ اسی دوران تیسرے مرحلے میں ملک بھر سے میر جعفروں اور میر صادقوں نے اکٹھے ہو کر اس ڈرامے کی تکمیل کی مہم شروع کر دی۔ اُدھر امریکا بہادر نے ڈرون حملے تیز کر دیے گئے۔ بے گناہ لوگوں، معصوم بچیوں اور عورتوں کو شہید کیا گیا ۔ اخبارات نے خبر لگائی کہ ملالہ کے سر پر گولی لگی اور پار ہو گئی اور ایک گولی گردن پر بھی لگی۔

طالبان کا مشہور جملہ جو پاکستان میں ہر واقعے پر کہا جاتا ہے دورایا گیا۔کہ طالبان نے حملے ذمہ داری قبول کر لی ۔ پھر طالبان کے خلاف امریکی فنڈڈ الیکٹرنک اور پرنٹ میڈیا نے پروپگنڈہ شروع کر دیا۔ جب طالبان کو حوش آیا تو تحریک طالبان پاکستان کی طرف سے اس واقعہ کی شدید مذمت کی۔ اور کہا کہ یہ طالبان کو بدنام اور امریکا کو خوش کرنے کی نئی چال ہے ۔

لو جی، اسی دوران بلی تھیلے سے باہر آہی گئی۔ اور اس موقعہ پر ملک رحمان صاحب نے بیان دیا کہ شمالی وزیرستان آپریشن پر غور کر رہے ہیں۔ آپریشن کا فیصلہ عسکری اور سیاسی قیادت کرے گی۔ اس کے مقابلے میں سوشل میڈیا پر مہم شروع ہوئی کہ سازش بے نقاب ہو گئی۔ پہلے ایک کوڑوں والی جعلی ویڈیو، جسے ویڈیو بنانے والے نے ۵/ لاکھ روپے لیکر بنائی تھی اور جسے ملک کے عدالت نے جعلی قرار دے دیا تھا کا بہانہ بنا کر سوات میں آپریشن شروع کیا تھا۔

اب جعلی حملے کا بہانہ بنا کر امریکا کی ہدایت پر شمالی وزیرستان پر حملے کی تیاری شروع کر دی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ حملے کا جو ڈرامہ رچایا گیا اس میں شازیہ اور کائنات توزخمی ہوئیں مگر ملالہ کو کوئی گولی نہیں لگی اور وہ کوئی زخمی نہیں ہوئی اس کا ثبوت سوشل میڈیا سے جاری کئے گئے وہ فوٹو ہیں جو مینگورہ سے ہیلی کاپٹر میں سوار ہوتے وقت اور پشاور ہسپتال میں علاج کے دوران کے ہیں مینگورہ میں پہلے والے فوٹو میں ملالہ سرخ کپڑے پہنے اپنے باپ کے ساتھ ہیلی کاپٹرمیں دوڑ کرسوار ہونے کے لیے جارہی اور ساتھ ہی ساتھ خالی اسٹریچر ایک شخص لے جا رہا ہے۔

پشاور ہسپتال والے جو فوٹو ہے اس میں ملالہ انہی سرخ کپڑوں میں ہسپتال کے بیڈ پر لیٹی ہوئی ہے جس سے اس سازش کی کڑیاں ملتی ہیں۔ سچی بات یہ ہے کہ یوسف زئی صاحب ایک قوم پرست روشن خیال شخص ہے قوم پرست پختون اسٹوڈنٹ تنظیم کاممبر اور صدر بھی رہا۔ اس کی دوستی ایسے ہی ایک پشاور میں بی بی سی کے ایک مقامی پختون قوم پرست نمایندے سے تھی ۔بی بی سی کے مقامی نمایندے نے فرضی نام گل مکئی کے نام سے سوات کے حالت پر ایک ڈائری لکھی۔

اور ایک سازش کے تحت بی بی سی اردوسے گل مکئی کے نام سے قسطوں میں نشر نشر ہوتی رہی ۔حوالہ( ڈاکڑ ضیالدین خان کالم)ویسے بھی اُس وقت خیبرپختونخواہ میں قوم پرست نیشنل عوامی پارٹی کی حکومت تھی۔ جو اس کام میں یوسف زئی کی مدد گار تھی۔ ملالہ اور اس کے خاندان کے متعلق سواتی عوام کے دلوں میں توجھانک کر دیکھیں جو مظاہرہ اس وقت سامنے آیا۔ جب صوبائی حکومت نے سیدو گرلز کالج کا نام ملالہ کے نام سے منسوب کیا گیا۔

تو کالج کی بچیوں نے اودھم مچا دیا۔سوات کی تاریخ میں پہلی بار اسکول کی بچیوں نے احتجاج کیا۔ بلکہ خواتین نے بھی اس کا بھر پورساتھ دیا۔ جس کے بعد مجبوراً کالج کو پرانے نام سے ہی منسوب رہنے دیا۔
جیسے کہ ہم نے پچھلے کالم قسط دوم میں ثابت کیا گیا تھا کہ ملالہ کو خود سوات کی بچیاں اور خواتین پسند نہیں کرتیں ۔اگر کوئی ملالہ کی کہانی کی مزید حقیقت تک پہنچنا چاہتاہے تو اُسے سوات کے ایک محقق جناب ڈاکٹر سلطان روم کے مضمون”المیہ سوات اور ایوارڈز“ قسط اول/دوم جو اخبار آزادی سوات میں ۲۷/۲۸/ اگست ۱۰۱۲ء شائع ہوئے تھے پڑھ سکتا ہے۔

ان مضمونوں پر مختلف لکھاریوں کے تجزیے اخبارات میں شائع ہوئے تھے جن پرڈاکٹر سلطان روم صاحب نے تبصرہ کیا تھا جو بنام”سپاہ ملالہ اورمبالغے مغالطتے“ جوآزادی اخبار میں ہی گیارہ قسطوں میں شائع ہوئے تھے میں مزید روشنی پڑتی ہے۔ اس ناپسندیدگی کی ایک فطری وجہ عالمی شاطروں کی ملالہ پر انعامات کی بارش بھی ہے۔ کیونکہ لوگ جانتے ہیں عالمی شاطر انعامات کی بارش اسی پر کرتے ہیں جو اسلام کے خلاف بولتا ہے۔

جیسے ملالہ کی اسلام کے خلاف ڈائریاں اورسلمان رُشدی قماقش کے لوگوں کی اسلام کے خلاف کتابیں۔ ویسے بھی سوات کے سارے لوگ جانتے ہیں کہ ملالہ نے بچیوں کی تعلیم کی لیے کچھ بھی تو نہیں کیا؟ بلکہ جب طالبان سوات پر غالب تھے اور بچیوں کے سرکاری اسکول بارود سے اُڑا جا رہے تھے تو پہلے تو ملالہ سوات کے دوسرے پرائیویٹ اسکولوں کی طرح اپنے باپ کے پرائیویٹ اسکول میںآ رام سے پڑھ رہی تھی۔

صبح اسکول جاتی تھی دوپہر کو واپس آ جاتی تھی ۔جب ذرہ خوف زدہ ہوئی تو اپنے باپ کے ساتھ محفوظ جگہ ایبٹ آباد چلی گئی۔ سوات میں امن کے بعد واپس آئی تھی۔ اس کے بعد اس پر نام نہاد حملہ کا ڈرامہ رچایا گیا۔ اخبارات نے سرخیاں لگائیں کہ ملالہ یوسفزئی قاتلانہ حملے میں ۲ ساتھی طالبات سمیت شدید زخمی ہوئی۔ ایک گولی ملالہ کے سر اور دوسری گردن میں لگی حوالہ” روزنامہ خیبر پشاو راشاعت ۹/ اکتوبر ۲۰۱۲ء “ پہلے سیدو شریف ہسپتال پھر ہیلی کاپٹر کے ذریعے سی ایم ایچ پشاور میں منتقل کیا گیا۔

ملالہ کے بیرون ملک علاج ہی سے جان بچائی جا سکتی ہے۔ میڈیکل بورڈ رزنامہ” کا اعلان۔حوالہ چانداشاعت ۱۰/ اکتوبر ۲۰۱۲ء“اور بعد میں اسپیشل ایئرایمبولنس کے ذریعے لندن منتقل کیا گیا۔ سر اور گردن میں گولی لگنے والی ملالہ لندن کے ہسپتال سے بغیر علاج صرف جادو کے زور سے ایک دم صحت یاب ہو گئی۔ پھر گیم کے عالمی کرداروں نے اس پر انعامات کی پربارش شروع کر دی۔

یہ انعامات بی بی سی آردوکے بلاگ پر پوسٹ کی گئی ڈائریوں، جن میں فوج،طالبان اوراسلام کے خلاف زہرپھیلایا گیا تھا دیے گئے اب اس خلائی مخلوق(ملالہ) پر دل تھام کر انعامات کی بارش کو سنیے۔ پاکستان میں سب سے پہلے یوسف رضا گیلانی نے ۲۰۱۱ء پاکستان کا ”قومی ایوارڈبرائے امن ایوارڈ” دیا۔پھر نیشنل عوامی پارٹی کی صوبائی حکومت نے بھی نقدانعام دیا۔

بی بی سی بلاگ پر پوسٹ کی گئی ڈائریوں کے بعد نیویارک ٹائمز کے رپورٹر نے ملالہ پر ایک خصوصی فلم بنائی۔ جس کی خوب تشہیر کی گئی ۔پاکستان کے اُردو/ پشتو چینلوں نے ملالہ کے انٹرویوز کیے ۔برطانیہ میں ملالہ(خلائی مخلوق) کی حفاظت کی ذمہ داری مختلف عیسائی اداروں نے سنبھال لی۔ جنہیں(malalainc) کانام دیا گیا۔ تشہیر کی ذمہ داری” ایڈلمان“ نے سنبھال لی۔

۲۰۱۲ء میں پاکستان کا ایک اورایوارڈ”ستارہ شجاعت“ دیا گیا۔۲۰۱۲ء کو اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری بان کی مون نے ”ملالہ ڈے“ منانے کا اعلان کیا۔ جسے ہر سال منانے کا بھی اعلان کیا گیا۔۲۰۱۲ء میں ہی امریکی عالمی جریدے ”فارن پالیسی میگزین“نے ملالہ کو ۱۰۰ گلوبل تھنکر میں شامل کیا۔ اسی سال سماجی انصاف کے” مدر ٹریسا ایوارڈ“ دیا گیا۔

اسی سال ٹائم میگزین میں ملالہ کو ”پرسن آف دی ایئر“ قرار دیا۔ اسی سال عالمی ادارے یونسکو نے لڑکیوں کی تعلیم کے لیے”ملالہ فنڈ“ قائم کیا۔ اس فنڈ میں مشہور امریکی اداکارہ انجلینا جولی نے ۲/ لاکھ ڈالر کی رقم جمع کرائی۔ ۲۰۱۳ء میں اٹلی نے ملالہ کو اعزازی شہریت سے نوازا۔ اسی سال فرانس نے ملالہ کو ”سائمن ایوارڈ“ سے نوازا۔ برطانوی اساتذہ کی یونین نے” فریڈاور اپنے ایوراڈ“ سے نوازا ۔

اسی سال ملالہ کو نوبیل انعام کے لیے نامزد کیا گیا ۔ملالہ کا نام ۱۵۰/ سے زائد نامزدگان میں سرے فہرست تھامگر کامیابی نہ ہوئی۔ ۲۰۱۳ء میں اوپیک نے ملالہ کو ایوارڈ دیا۔ مئی ۲۰۱۳ء میں امریکا میں ”امید عکس“ ایوراڈ سے نوازا گیا۔۲۰۱۳ء میں برطانیہ میں ملالہ کے پوٹریٹ کی نمائش کی گئی۔ ۲۰۱۳ء میں یونیورسٹی آف ایڈن برگ نے ایم اے کی اعزازی ڈگری دی۔

۱۲/ جولائی کو ملالہ کو اقوام متحدہ کی یوتھ اسمبلی میں خطاب کا منفرد اعزاز حاصل ہوا۔ گورڈن براؤن اور بان کی مون نے اپنا ہیرو اور چمیپئن قرار دیا۔ جولائی ۲۰۱۳ء میں ملالہ کو برطانوی اخبار کی جانب سے”پرائیڈ آف بریٹین“ ایوارڈ ملا ۔ملالہ نے ایک استقبالیہ جس کی میزبانی ملکہ برطانیہ کوئین الزبتھ اور اس کے شوہر شہزادہ فلپ نے کی شرکت کی اپریل ۲۰۱۳ء میں ٹائم میگزین نے سرورق پر ملالہ کی تصویرشائع کی جس میں دنیا کی۱۰۰/ با اثر افراد میں شامل کیا۔

۲۰۱۳ء میں ہالینڈ کی تنظیم گڈز رائٹس فاؤنڈیشن کی جانب سے ملالہ کو ”انٹرنیشل چالڈرنز پیس پرائز“ دیا گیا۔ ۲۰۱۳ء میں ایمنسٹی انٹر نیشنل نے ملالہ کو ”ضمیر کی سفیر“ برائے ۲۰۱۳ء کاایوراڈ دیا۔کلنٹن فاؤنڈیشن کے تحت مالہ کو ” کلنٹن گلوبل سٹیزن ایوراڈ“ دیا گیا۔۲۰۱۳ء میں ہاورڈ یونیورسٹی نے ” پیٹر گومز ہیومیٹرین ایوارڈ“ دیا گیا۔ ۲۰۱۳ء میں ملالہ سے یورپ کی سب سے بڑی لائبریری” لائبریری آف برمنگھم“کا افتتاح کروایا گیا۔

۲۰۱۳ء میں اوباما نے اپنی بیوی اور بیٹی کے ساتھ ملالہ سے ملاقات کی۔ ۲۰۱۳ء میں کنیڈا نے ملالہ کو اعزازی شریت دی۔ ۲۰۱۳ء میں امریکی جریدے گلیمر میگزین نے ملالہ کو ”گلیمر خاتون“ کے ایوراڈ سے نوازا۔۲۰۱۳ء میں یورپ کے سب سے بڑے ایوارڈ”آندرے سخاروف“ سے نوازا گیا اور یورپی پارلیمنٹ سے بھی خطاب کیا۔ ان ایوارڈ کی بارش کو دیکھ کر میں حیران ہو گیا۔ بلکہ میرا یقین پکا ہو گیا جو اللہ کی کتاب نے پہلے ہی فرمادیا ہے کہ” مسلمانوں یہود و نصارا ہر گز تمہارے دوست نہیں ہو سکتے جب تک تم ان جیسے نہ ہو جاؤ“ یا اللہ کیاملالہ اور اس کا لالچی باپ ضیا الدین یوسف زئی ان جیسے ہو گئے ہیں ؟یا یہ مسلمانوں کے خلاف گہری سازش ہے ؟۔

ادارہ اردوپوائنٹ کا کالم نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔ © www.UrduPoint.com

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Malala Ki Kitab Aur Kahani - Qist 2 Column By Mir Afsar Aman, the column was published on 15 June 2021. Mir Afsar Aman has written 472 columns on Urdu Point. Read all columns written by Mir Afsar Aman on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.