بند کریں
شاعری ظفرترمذی

پھر نہ ہو گا کوئی محبوسِ بلا میرے بعد

-

phir na ho ga koi mehbos bala mere baad


(454) ووٹ وصول ہوئے