بند کریں
شاعری ظہیر کاشمیری

مرنا عذاب تھا کبھی جینا عذاب تھا

-

marna azaab tha


(356) ووٹ وصول ہوئے