بند کریں
شاعری فاخرہ بتولچاند نے بادل اوڑھ لیاخوئے مرگ

(185) ووٹ وصول ہوئے