بند کریں
شاعری اقبال نوید

جب بھی کسی شجر سے ثمر ٹوٹ کر گرا

-

jab bhi kissi shajar se samar toot kar girra


(182) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان