بند کریں
شاعری میر تقی میرقیامت تھا سماں اس خشمگیں پر

(146) ووٹ وصول ہوئے