بند کریں
شاعری مظفروارثیآدمی چونک چکا ہے مگر اُٹھّا تو نہیں

(119) ووٹ وصول ہوئے