بند کریں
شاعری نوید ہاشمیغلط چلتا ہوں تو رستہ بدلنے بھی نہیں دیتا

(237) ووٹ وصول ہوئے