بند کریں
شاعری شاہین عباس

ڈوب کر ابھرے ہیں کس زخم کی گہرائی میں ہم

-

doob kar ubhre hain kiss zakhaam ki gehrai main hum


(60) ووٹ وصول ہوئے