پاکستان کے اقتصادی مساٸل اور ان کا سدِ باب

منگل 21 ستمبر 2021

Dr Hamza Siddiqui

ڈاکٹر حمزہ صدیقی

‏پاکستان کو گذشتہ ستر سالوں کے دوران اپنی سماجی اقتصادی صورتحال میں بڑے چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔تاہم تمام مسائل پر قابو نہیں پایا جا سکی ہے۔ آج کے اہم مسائل میں شامل ہیں: پانی کی قلت؛ پائیدار ترقیاتی منصوبوں کا فقدان؛ نوجوانوں کی بڑھتی ہوئی بے روزگار آبادی؛ انسانی ترقیاتی منصوبوں پر توجہ نہ دینے کا فقدان؛ زرمبادلہ کے ذخائر میں مسلسل کمی؛ غیر ترقیاتی اخراجات میں اضافہ؛ عوامی قرضوں میں اضافہ؛ دولت کی غیر مساوی تقسیم؛ بلوچستان، اندرون سندھ اور جنوبی پنجاب میں بڑھتی ہوئی محرومی؛ خطے میں خاص طور پر مشرقی اور مغربی ہمسایوں کے ساتھ ناخوشگوار تعلقات؛ چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں (ایس ایم ایز) کی خراب حالت؛ اور بلدیاتی نظام کو موثر طریقے سے نافذ کرنے میں ناکامی، جسے جمہوریت کی بنیاد سمجھا جاتا ہے
ملک کو جن اہم مسائل کا سامنا ہے ان میں سے ایک پانی کی قلت ہے۔

(جاری ہے)

امریکن یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق پاکستان دنیا کے ان دس سرفہرست ممالک میں شامل ہے جو پانی کے بحران کا شکار ہیں۔پانی کے اس بحران سے نمٹنا آسان نہیں ہوگا۔ یہ ضروری ہے کہ کالاباغ اور دیامر باشا ڈیموں پر کام جلد از جلد مکمل کیا جائے۔ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق ڈیموں کی کمی کی وجہ سے 40 ملین ایکڑ فٹ (ایم اے ایف) پانی سمندر میں بہہ رہا ہے۔

کالا باغ ڈیم میں 6.4 ایم اے ایف پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش ہے، دیامر باشا ڈیم 5.8 ایم اے ایف ذخیرہ کر سکتا ہے اور داسو ڈیم 6 ایم اے ایف پانی ذخیرہ کر سکتا ہے۔اگر یہ تینوں ڈیم مکمل ہو جاتے ہیں تو بہت سا پانی ضائع ہونے سے بچ جائے گا جس سے پانی کی قلت کو کم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔اگر یہ ڈیم تعمیر نہ ہوئے تو پاکستان کو پینے کے پانی کے بحران کا سامنا کرنا پڑے گا اور اس کا زراعت کا شعبہ تباہ ہو جائے گا۔


پاکستان میں زراعت کا دیگر صنعتوں مثلا ٹیکسٹائل اور کیڑے مار ادویات کی صنعتوں سے گہرا تعلق ہے۔پانی کی کمی کی وجہ سے زراعت اور زراعت سے متعلق صنعتیں مکمل تباہی کے دہانے پر ہیں۔زرعی شعبہ پانی کی کمی کے ساتھ ساتھ حکومت کی غفلت سے بھی متاثر ہے: جیسے کھادوں اور بیجوں پر مناسب امدادی قیمتیں یا سبسڈی فراہم نہ کرنا۔
فضائی آلودگی ایک اور بڑا مسئلہ ہے۔

ملک کی آب و ہوا دن بدن خراب ہوتی جا رہی ہے جس کے لیے درخت لگانے چاہئیں۔سیلاب کی بڑھتی ہوئی شدت اور ڈیموں کی گاد کی وجہ سے جنگلات کی کٹائی کے نتیجے میں ان کی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت میں کمی واقع ہو رہی ہے۔
مستقبل میں پانی کا بحران لوڈ شیڈنگ کے بحران سے زیادہ سنگین ہوگا۔جبکہ لوڈ شیڈنگ کے بحران پر کسی حد تک قابو پا لیا گیا ہے، ہماری ٹرانسمیشن لائنیں بوسیدہ ہو چکی ہیں جس کی وجہ سے بجلی کا پورا نظام ٹرپنگ کرتا رہتا ہے۔

اس مسئلے سے نمٹنے کے لئے بروقت کارروائی کی ضرورت ہے تاکہ بڑھتی ہوئی آبادی کے تقاضے پورے کیے جا سکیں۔آج کوئی کمی نہ ہونے کے باوجود لوڈ شیڈنگ جاری ہے۔اس طرح اگر ہم زیادہ بجلی پیدا کرنے میں کامیاب بھی ہو جاتے تو ٹرانسمیشن سسٹم میں صلاحیت نہ ہونے کی وجہ سے لوڈ شیڈنگ میں کمی نہیں آتی
۔پاکستان میں پائیدار ترقیاتی منصوبوں کا فقدان ہے۔

ہمارے ملک میں نوجوانوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ بے روزگاری میں بھی تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔یہی وجہ ہے کہ تکنیکی تعلیم فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔ بی ٹیک تعلیم اور دیگر تکنیکی تعلیم ہر ایک کو فراہم کی جانی چاہئے۔ممکنہ نوجوانوں کی زیادہ سے زیادہ تعداد کو ان مہارتوں سے لیس کیا جانا چاہئے جن کی انہیں بیرون ملک پیسہ کمانے کے لئے ضرورت ہے تاکہ وہ مجموعی قومی پیداوار (جی این پی) میں حصہ ڈال سکیں۔


ملک کی موجودہ آبادی 220 ملین سے زیادہ ہے۔ بڑھتی ہوئی آبادی کا ملکی ذخائر پر منفی اثر پڑتا ہے اور وسائل ختم ہوجاتے ہیں۔بے لگام آبادی میں اضافہ پاکستان کی ترقی کے لئے انتہائی نقصان دہ ثابت ہوسکتا ہے۔اس کے لئے خاندانی منصوبہ بندی کی ہنگامی صورتحال کا آغاز کیا جانا چاہئے اور اس کا نفاذ ضروری ہے۔
ملک کو دولت کی غیر مساوی تقسیم کا سامنا ہے۔

مشرف دور میں یہ رجحان تیزی سے بڑھتا گیا کیونکہ اس وقت کے بیشتر معاشی ماہرین کا تعلق بینکنگ سیکٹر سے تھا۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ زرعی شعبے کو نظر انداز کیا گیا اور چھوٹے اور درمیانے درجے کا کاروباری شعبہ بھی متاثر ہوا۔امیر امیر تر ہوتا گیا اور غریب غریب تر ہوتا گیا۔
اندرون سندھ ، بلوچستان، جنوبی پنجاب  اور دیگر شہروں  کے ساتھ ظلم اور ناروا سلوک بند ہونا چاہیے یہ سب علاقے محرمیوں اور مایوسیوں اور عدم ترقی کا شکار ہے،ترقی یافتہ دور میں کراچی ، جنوبی پنجاب پنجاب اور بلوچستان  ترقی میں رکاوٹ اوربوسیدہ صورتحال پر گہری تشویش ہے
ملک کے ٹیکس نیٹ کو وسعت دینے کی ضرورت ہے کیونکہ آبادی کا صرف ایک چھوٹا سا طبقہ ٹیکس ادا کرتا ہے۔

زمیندار، سول اور ملٹری بیوروکریسی، بڑی کمپنیاں، بینک مالکان اور ہاؤسنگ سوسائٹی مالکان پاکستان کی اشرافیہ میں شامل ہیں اور انہیں بعض ٹیکسوں سے بچنے کے لئے ٹیکس وں میں کٹوتی کی شکل میں خصوصی مراعات دی جاتی ہیں۔ہمارے تجارتی بینکوں کو ایس ایم ای سیکٹر میں سرمایہ کاری کرنی چاہئے۔
بے نظیر انکم سپورٹ فنڈ اور احسان پروگرام جیسے منصوبوں سے غربت کا خاتمہ نہیں ہوگا بلکہ غریب لوگوں کی ایک بڑی آبادی پیدا ہوسکتی ہے جو سماجی بہبود پر منحصر ہے۔

غیر ترقیاتی فنڈز کو کم کیا جانا چاہئے۔غذائی تحفظ، تعلیم اور صحت جیسے معاملات پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ اگر جمہوری حکومت خارجہ پالیسی میں زیادہ فعال اور مستحکم کردار ادا کرتی ہے تو امکان ہے کہ افغانستان اور بھارت اور دیگر ممالک کے ساتھ تعلقات بہتر ہوں گے۔
ہمارے تجارتی بینکوں کو ایس ایم ای سیکٹر میں سرمایہ کاری کرنی چاہئے ملک میں ترقی اور خوشحالی کے مستقبل کے امکانات کا انحصار ملک میں صدارتی نظام  کے تسلسل پر ہے۔اگر مذکورہ مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کی کو شش کی جائے تو پاکستان کا مستقبل تابناک ہو سکتا ہے ۔ ان شاء اللہ

ادارہ اردوپوائنٹ کا کالم نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

تازہ ترین کالمز :

Your Thoughts and Comments

Urdu Column Pakistan Ke Iqtesaadi Masail Aur Un Ke Sadbab Column By Dr Hamza Siddiqui, the column was published on 21 September 2021. Dr Hamza Siddiqui has written 29 columns on Urdu Point. Read all columns written by Dr Hamza Siddiqui on the site, related to politics, social issues and international affairs with in depth analysis and research.