Koi Bhi Shai Kahan Nayab Hai Hamaray Liye

کوئی بھی شے کہاں نایاب ہے ہمارے لئے

کوئی بھی شے کہاں نایاب ہے ہمارے لئے

کھلا ہوا تو در خواب ہے ہمارے لئے

ہمیں ہی روشنی اس کی نظر نہیں آتی

چراغ تو پس محراب ہے ہمارے لئے

پلک جھپکتے ہی سب کچھ نیا سا لگتا ہے

یہ زندگی بھی کوئی خواب ہے ہمارے لئے

اترتے جاتے ہیں پہنائیوں میں دریا کی

کہ جلتی شمع تہہ آب ہے ہمارے لئے

ہمیں نے بند کئے ہیں تمام دروازے

یہ شہر آج بھی بیتاب ہے ہمارے لئے

بس ایک موج نے یہ حال کر دیا اپنا

ہر ایک موج ہی گرداب ہے ہمارے لئے

ہر ایک شخص کے دعوے الگ الگ عالمؔ

اگرچہ بام پہ مہتاب ہے ہمارے لئے

عالم خورشید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(428) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Alam Khurshid, Koi Bhi Shai Kahan Nayab Hai Hamaray Liye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 71 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Alam Khurshid.