بند کریں
شاعری اسحاق ظفر

نصیب ایسے بھی ہوتے ہیں

-

naseeb aise bhi hote hain


(229) ووٹ وصول ہوئے