Ab Ishq Ko Nahi Gawra Main Janti Ho

اب عشق تم کو نہیں گوارا ۔ میں جانتی ہوں

اب عشق تم کو نہیں گوارا ۔ میں جانتی ہوں

بتائے گا کیا یہ استخارہ ۔ میں جانتی ہوں

میں بزم سے اٹھ کے اب بغیچے میں آ گئی ہوں

تمہاری نظرو ں کا ہر اشارہ میں جانتی ہوں

اس اونچی دستار سے جہا ں کو فریب دینا

بلند کتنا ہے قد تمہارا ۔ میں جانتی ہوں

تمہی بھی دعوی ۔ ۔ کہ ۔ تو ڑ لاؤ گے تم ستارے

نہ کھاؤ کوئی قسم خدارا ۔ ۔ میں جانتی ہوں

وہ ایک ساعت کہ جس میں ہم نے بتایئں صدیاں

اسے ہی جیون کا استعارہ میں جانتی ہوں

یہ سرد جذبے الاؤ بن کر دہک اٹھیں گے

دبا کہا ں پر ہے ا ک شرارہ میں ۔ جانتی ہوں

روش کہا ں پر بدل گئی تھیں تری نگاہیں

کب عشق تم کو ہوا دوبارہ ۔ میں جانتی ہوں

کیوں زندگی د ے کے مجھ پہ احساں جتا رہا ہے

کیا ہے جس طرح سے گزارہ ۔ میں جانتی ہوں

جو راز _ دل خود سے بھی چھپا کر رکھا تھا میں نے

وہ ہو چکا تجھ پہ آشکارا ۔ میں جانتی ہوں

ہیں دشت میں کون اپنی تشنہ لبی پہ نازاں ۔ ۔

گھٹا کو کس کس نے ہے پکارا ۔ میں جانتی ہوں

اندھیری راہو ں میں منز لوں کا امیں ۔ ۔ تبسم

مرے لیئے بھی ہے اک ستارہ ۔ میں جانتی ہوں

تبسم انوار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1121) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Tabassum Anwaar, Ab Ishq Ko Nahi Gawra Main Janti Ho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken Urdu Poetry. Also there are 33 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Tabassum Anwaar.