بند کریں
شاعری علی یاسر

چہرہ نہیں ہوتا کبھی شیشہ نہیں ہوتا

-

chehra nahi hota kabhi


(236) ووٹ وصول ہوئے