بند کریں
شاعری اعظم کمالمنزل قطار میں ہے شب انتظار کی

(272) ووٹ وصول ہوئے