بند کریں
شاعری اعظم کمال

منزل قطار میں ہے شب انتظار کی

-

manzil qitaar main hai shab e intezar ki


(272) ووٹ وصول ہوئے