بند کریں
شاعری اقبال کیفی

کیفِ حیات تیرے سوا کچھ نہیں رہا

-

kaif e hayat tere siwa kuch nahi raha


(206) ووٹ وصول ہوئے